ریاست مخا لف تقریر، گلالئی کے خلاف مقدمہ درج

0
10

ریاست مخالف تقریر اور پختون قوم میں پاکستان کے خلاف نفرت پھیلانے کے جرم میں گلالئی اسماعیل پر مقدمہ درج کرلیا گیا ہے.

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق گلالئی اسماعیل کے خلاف درج مقدمہ میں کہا گیا ہے کہ اس نے کمسن فرشتہ کو بنیاد بنا کر پاک فوج، حکومت کے خلاف ہرزہ سرائی کی اور پشتون قوم میں نفرت پھیلانے کی کوشش کی. گلالئی کے خلاف مقدمہ تھانہ شہزاد ٹاون میں درج کیا گیا ہے جس میں انسداد دہشت گردی کی دفعات بھی شامل ہیں.

وزیر سائنس و ٹیکنالوجی فواد چودھری کا کہنا ہے کہ پی ٹی ایم جس طرح ایک معصوم بچی کے بیہمانہ قتل کو اپنی دو ٹکے کی سیاست کے لئے استعمال کر رہی ہے اس سے لگتا ہے کہ اُن کی سیاست کے سینے میں دل نہیں ہے۔

واضح رہے کہ گلالئ اسماعیل کا تعلق پی ٹی ایم سے ہے جو وطن عزیز پاکستان کے خلاف منفی سرگرمیوں‌ میں ملوث ہے ، ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے ایک پریس کانفرنس میں کہا تھا کہ اب بہت ہو گیا مزید برداشت نہیں کریںگے، پی ٹی ایم کے خلاف قانونی کاروائی ہوگی

واضح رہے کہ اسلام آباد کے علاقے چک شہزاد سے 15 مئی کو کمسن فرشتہ لاپتہ ہوئی تھی جسے قتل کر کے جنگل میں پھینک دیا گیا، پولیس کا کہنا ہے کہ نعش کو جنگل سے برآمد کر کے پوسٹ مارٹم کروایا گیا ہے جس میں کمسن فرشتہ کے ساتھ زیادتی کی بھی تصدیق ہوئی ہے. پولیس نے ملزمان کو گرفتار کر نے کے لئے ٹیمیں تشکیل دے دی ہیں.فرشتہ کا تعلق خیبر پختونخواہ کے قبائلی علاقے ضلع مہمند سے تعلق تھا.مقتولہ بچی مقامی سکول میں دوسری جماعت کی طالبہ تھی۔ علی پورفراش کے علاقے میں رہائش پذیر مقتولہ (ف) کے والد نے مقامی پولیس تھانے شہزاد ٹاون میں پانچ روز قبل بچی کی گمشدگی کی شکایت درج کروائی تھی۔ فرشتہ کے والد نے کمسن بیٹی کی لاش کو دھوپ میں رکھ کر احتجاج کیا ، وفاقی دارالحکومت ہونے کے باوجود کیس بھی حکومتی نمائندے نے ان سے رابطہ نہیں کیا.

واضح رہے کہ گذشتہ دو ماہ کے دوران وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں یہ دوسرا واقعہ ہے جس میں ایک کمسن بچی کو زیادتی کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ اس سے پہلے بارہ کہو کے علاقے میں ایک دو سالہ بچی کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

کمسن فرشتہ کی زیادتی کے بعد سماجی رابطےکی ویب سائٹ ٹویٹر پر #JusticeForFarishta ٹاپ ٹرینڈ رہا. شہریوں نے فرشتہ کے قاتلوں کو سزا دینے کا مطالبہ کیا ہے.

Leave a reply