fbpx

درد دل کے واسطے پیدا کیا انسان کو . تحریر : عمر عطاء

چند سال پہلے میرے بابا کا روڈ ایکسیڈنٹ ہوا واقعہ پرموجود کچھ بے شرم لوگوں نے مدد کرنے کی بجاۓ جیب سے نقدی خالی کرلی بھلا ہو وہاں پرموجود ان لوگوں کا جوبابا کو اچھی طرح جانتے تھے انہوں نے وہ نقدی ان بے شرموں سے واپس لے کر بعد میں ہمارے حوالے کی۔
کیا ہمارے اندررتی برابربھی انسانیت کا احساس نہیں ہے۔

ایسے بہت سارے واقعات منظرعام پر آۓ ہیں کہ روڈ ایکسیڈنٹس متاثرین سے زیورات، نقدی اورموبائل فونز ہتھیا لیے جاتے ہیں۔ علی پور روڈ جو کہ قاتل روڈ کے نام سے مشہور ہے۔ آۓ روز یہاں پر حادثات رونما ہوتے رہتے ہیں اورسینکڑوں جانیں ضائع ہوئ ہیں لیکن یہاں کے سیاستدانوں کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگتی ہے۔ میرے ایک رشتہ دار جو کہ پٹرولنگ پولیس میں ہوتے ہیں بتا رہے تھے کہ کچھ سال قبل روہیلانوالی میں ایک بس کو حادثہ پیش آیا تھا اور اس میں تمام لوگ جان کی بازی ہار گئے تھے جن میں اکثریت خواتین کی تھی۔ اس سنگل روڈ پر حادثات تو روز کا معمول ہیں لیکن دل دہلا دینے والی بات یہ کہ وہ بولتے ہیں جب ہم لوگ ان تک پہنچنے تو خواتین کے کانوں سے بالیاں تک اتار لی گئیں تھیں۔ میں سوچ رہا تھا اللّٰہ تعالیٰ نے اس وجہ سے ہی قیامت کا دن رکھا ہے تاکہ مظلوموں کی شنوائی ہو سکے۔

وہاں پرصرف مظلوم کی حمایت کی جائے گی اور مجرموں کو سخت سے سخت سزا ملے گی۔ انسان کو اشرف المخلوقات بھی صرف اس وجہ سے بنایا گیا ہے کہ وہ انسانیت سے محبت سے پیش آۓ۔

بقول شاعر
درد دل کے واسطے پیدا کیا انسان کو
ورنہ طاعت کے لیے کچھ کم نہ تھے کرو بیاں!

انسان جب نیکی پر اترتا ہے تو وہ فرشتوں کو بھی پیچھے چھوڑ جاتا ہے لیکن یہی انسان جب گرنے پر آتا ہے تو شیطان سے بھی بد تر ہو جاتاہے۔ بات صرف احساسات کی ہے.

Momi_70