ورلڈ ہیڈر ایڈ

بنو قریظہ کا خندق کی جنگ میں کردار اور موجودہ حالات جواد سعید

خندق کی جنگ بنو قریظہ کے بغیر کبھی بھی وجود میں نہ أتی

یہ پوسٹ أج نظر سے گزری ۔
جو کہ أجکل کے حالات میں کفار سے دوستی یا خود مختاری پر غیروں کی امداد۔ وحدہ لا شریک کی مدد سے بے اعتنای برتتی محسوس ہو رہی تھی۔اور شاید کہ مسلم ملک کے زیر اہتمام مودی کو ایوارڈ دینے پر کی جانیوالی تناقید کا جواب تھا۔

اس نظریے کے رو سے دو تین پہلو نکالے جا سکتے اور تقریبا علاوہ ایک سب غلط ہیں۔
1⃣پہلا پہلو کہ بنو قریظہ ک بغیر جنگ جیتنا ناممکن تھی
تو اسکا جواب ہے بدر احد خیبر سبھی بغیر کفار کی مدد سے جیتے۔
کیا اسوقت بنو قریظہ کا نام وجود قبیلہ نہیں تھا۔؟

2⃣دوسرا پہلو کہ اس عمل کی رو کفار سے دوستی مصالحانہ معاہدہ کیا جا سکتا ہے۔
ضرور کیا جا سکتا مگر صرف معاہدہ ۔اس میں بھی ایک حد ہے۔نبی صل اللہ علیہ وسلم نے دوستی نہیں ہمیشہ معاہدانہ رویہ رکھا۔جیسے ہی کسی معاہد نے مخالفت کی۔بجایے طرز دوستی اور بمطابق أج کے مسلمان
کہ دوستی لگا کر انکی غلط پیش قدمیوں پر بھی انکے احسانات یاد کر کر کے نظر انداز کرنا۔
ان پر چڑھای کر دی۔ بنو قریظہ کا تو مدینے سے نام ختم کر دیا۔نا کہ انھیں معاف کیا۔اور بعد والوں کیلیٕ تاکید فرمای کہ عرب سے یہود کا انخلا لازمی کرنا۔
ٕ
3⃣تیسرا پہلو کہ خندق کی جنگ بنو قریظہ کی مرہون منت ہے۔تو یاد رکھیے جنگ خندق معاملہ تدابیر بہت پہلے سے شروع تھیں
بنو قریظہ سے معاہدہ تو ایک مصلحت بھرا معاہدہ تھا جسے دنیا تدبیر کے نام سے جانتی ہے۔ اور یہ جنگی تیاری کے أخری مراحل میں وقوع پذیر ہوا۔ مزید کہ اسکے ساتھ کٕی اور قبایل بھی تھے جن سے معاہدہ کیا گیا۔
کیا انکا کوی نام مدد نہیں حالانکہ سب برابر شامل تھے؟

4⃣أخر میں ایک پہلو کو ٹھیک کہا جاسکتا۔
کہ بنو قریظہ ودیگر قبایل سے معاہدہ جنگ خندق کے مزید مشکل نہ ہونے کا سبب بنا

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.