حکومتی ملکیتی اداروں کی اونرشپ اینڈ مینجمنٹ پالیسی 2023 کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا گیا

0
93

حکومتی ملکیتی اداروں سےمتعلق پالیسی 5 سال بعد اپ ڈیٹ کر کےجاری کی جائےگی۔ حکومت اسٹریٹجک نوعیت کے حساس اداروں کاکنٹرول اپنےپاس رکھےگی مالی یا آپریشنل طور پر ناکام اداروں کو بیمار کمپنی ڈکلیئر کیا جائے گا۔مجوزہ یونٹ سرکاری اداروں کے بزنس پلان کا تجزیہ کر کےسفارشات دے گا۔ سینٹرل مانیٹرنگ یونٹ میں قابل،تجربہ کار اسٹاف بھرتی کیا جائے گا ان اداروں کے آزادانہ بورڈآف ڈائریکٹرز کا ڈیٹا بیس تیار کیا جائےگا نقصان میں چلنے والے اداروں کی بحالی، تعمیرنو اور تنظیم نو کاپلان تیار کیا جائےگا۔ مستقبل میں حکومتی اداروں میں نئی بھرتیاں بھی کنٹریکٹ بنیادپرکرنےکافیصلہ کیاگیا۔
وزارت خزانہ کی دستاویز کے مطابق بعض اداروں کی تنظیم نو کرکے ان کے مستقبل کا جلد فیصلہ کیا جائے گا،مالی یا آپریشنل طور پر ناکام اداروں کو بیمار کمپنی ڈکلیئر کیا جائے گا،اورایسے اداروں کی بحالی، تعمیرنو اور تنظیم نو کا پلان تیار کیا جائے گا۔
دستاویز کے مطابق مستقبل میں سرکاری اداروں میں نئی بھرتیاں کنٹریکٹ بنیاد پر کرنیکا فیصلہ کیا گیا ہے ، چیف فنانشل آفیسرز، سی ای اوز، سیکرٹریز و سینئر مینجمنٹ کیلئے سخت معیارمقررہوگا،نوکری پر برقرار رکھنے یا فارغ کرنیکا فیصلہ کارکردگی کی بنیاد پر کیا جائیگا،جبکہ غیر تسلی بخش کارکردگی پر فارغ کرنے سے پہلے ایک ماہ کا نوٹس دیا جائے گا۔
وزارت خزانہ کے مطابق پالیسی نفاذ کے چھ ماہ کے اندر اندر حکومتی ملکیتی اداروں کی کیٹگریز تیار کی جائیں گی،اورتمام حکومتی ملکیتی ادارے انٹرنل آڈٹ کا موثر طریقہ کار وضع کریں گے،نئی پالیسی پر عمل درآمد کیلئے کابینہ کمیٹی برائے حکومتی ملکیتی ادارے قائم کی جائیگی۔
دستاویز کے مطابق سینٹرل مانیٹرنگ یونٹ قائم کرکے اداروں کی کارکردگی کی نگرانی کی جائے گی۔اورمجوزہ یونٹ سرکاری اداروں کے بزنس پلان کا تجزیہ کرکے سفارشات دے گا، جبکہ سینٹرل مانیٹرنگ یونٹ میں قابل اور تجربہ کار اسٹاف بھرتی کیا جائے گا۔وزارت خزانہ کے مطابق اِن اداروں کے آزادانہ بورڈ آف ڈائریکٹرز کا ڈیٹا بیس تیار کیا جائے گا، جبکہ حکومتی ملکیتی اداروں سے متعلق پالیسی پر ہر 5 سال بعد نظرثانی کی جائیگی۔

Leave a reply