اسرائیلی اور اماراتی فلم اداروں کے درمیان معاہدہ اور انٹرنشینل فلم لیب میں پہلی مرتبہ اماراتی فلم سازوں کی نمائندگی کی منصوبہ بندی

نے رواں ماہ متحدہ عرب امارات (یو اے ای) اور اسرائیل کے درمیان ‘امن معاہدہ’ ہوا تھا جس کے تحت دونوں ممالک کے سفارتی تعلقات بحال ہوجائیں گے۔ یہ قدم 15 اگست کو اٹھایا تھا جب یو اے ای نے تاریخی فیصلہ کرتے ہوئے اسرائیل کو تسلیم کرکے اس سے باہمی تعلقات استوار کرنے کا اعلان کرکے دنیا کو حیران کردیا تھا بعد ازاں 29 اگست کو متحدہ عرب امارات کی حکومت نے اپنا اسرائیل کا بائیکاٹ کرنے والا قانون منسوخ کردیا تھا۔

باغی ٹی وی : دونوں ممالک میں تعلقات کی بحالی کے بعد پہلی بار 31 اگست کو اسرائیلی سرزمین سے اڑان بھرنے والا طیارہ یروشلم سے ابوظبی پہنچا تھا دونوں ممالک میں تعلقات کی بحالی کے بعد جہاں مسلم دنیا نے متحدہ عرب امارات پر سخت تنقید کی وہیں یہ خبریں بھی سامنے آئیں کہ ممکنہ طور پر دوسرے عرب ممالک بھی اسرائیل کو جلد تسلیم کرلیں گے۔

برطانوی خبررساں ادارے رائٹرز کی رپورٹ کے مطابق گذشتہ روز 21 ستمبر کو جاری کردہ مشترکہ بیان کے مطابق ابوظہبی فلم کمیشن، اسرائیل فلم فنڈ اور یروشلم سیم اسپیگل فلم اینڈ ٹیلی ویژن اسکول نے فلم کی ٹریننگ اور پروڈکشن کے لیے معاہدہ کیا ہے۔

اس معاہدے میں متحدہ عرب امارات کے دارالحکومت ابوظہبی اور اسرائیل کے مابین گھومنے والے ایک سالانہ علاقائی فلمی میلے کے منصوبے بھی شامل ہیں یہ اقدام اس وقت سامنے آیا ہے جب ممالک نے دوطرفہ سفارتی اور تجارتی تعلقات قائم کرنے پر اتفاق کیا تھا ، جس کے عہدیداروں نے کہا ہے کہ اہم اقتصادی مواقع پیدا کریں گے۔

اس معاہدے کے تحت دونوں فریقین کئی ماہ کی مدت تک دونوں ممالک کے فلم سازوں کے لیے تربیتی پروگرامز کا انعقاد کریں گے جس کا اختتام ابو ابوظہبی ،اسرائیل فلم اینڈ ٹیلی ویژن کو پروڈکشنز کی صورت میں ہوسکتا ہے۔

بیان میں کہا گیا کہ انٹرنشینل فلم لیب میں پہلی مرتبہ اماراتی فلم سازوں کی نمائندگی ہوگی اور سالانہ فلم لیب کمپیٹیشن میں کے 2021 کے ایڈیشن میں یو اے ای کے ایک ہدایت کو جیوری میں حصہ لینے کی دعوت دی جائے گی۔

خیال رہے کہ اس سے قبل پہلی بار ایک اسرائیلی ماڈل متحدہ عرب امارات پہنچیں اور وہاں انہوں نے اماراتی نژاد روسی ماڈل کے ساتھ فوٹوشوٹ بھی کروایا تھا خواتین کے زیر جامہ بنانے والے اسرائیلی برانڈ (فکس) کی تشہیر کے لیے اسرائیلی ماڈل مے ٹیگر فوٹو شوٹ کے لیے دبئی پہنچی تھیں۔

رپورٹ کے مطابق مے ٹیگر نے متحدہ عرب امارات کی رہائشی روسی نژاد ماڈل انستاسیا کے ساتھ مل کر دبئی کے صحرا میں خواتین کےلباس کا فوٹو شوٹ کروایا تھا۔

اسرائیلی ماڈل نے متحدہ عرب امارات کی ماڈل کے ساتھ دبئی کے صحرا میں کرائے گئے فوٹوشوٹ کے دوران اپنے ملک کا جھنڈا بھی یو اماراتی سرزمین پر لہرایا تھا-

جس کے بعد اسرائیلی ماڈل کی عرب ملک میں تشہیر کے بعد اسرائیلی فلم و ڈراما سازوں نے امید ظاہر کی ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان ثقافتی تعلقات مزید بہتر ہوں گے اور اسرائیلی شوبز پروڈکشن ہاؤس دبئی جاکر فلمیں اور ڈرامیں بنا سکیں گے۔

عرب امارات نے اسرائیل کا بائیکاٹ ختم کردیا:تل ابیب سے پہلی کمرشل پروازدبئی آنے کے لیے تیار

پہلی بار اسرائیلی ماڈل کا متحدہ عرب امارات میں فوٹو شوٹ،دنیا بھرمیں وائرل

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.