چین کے ایک صوبے کا یہ حال ہے کہ کورونا کے یومیہ کیسز کی تعداد 10 لاکھ تک جا پہنچی

0
50

بیجنگ: چین کے صنعتی صوبے ژجیانگ میں کورونا کے ایک دن میں 10 لاکھ نئے کیسز سامنے آئے ہیں اور اس تعداد کے دگنا ہونے کے خدشات بڑھ گئے۔عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق چین میں زیرو کورونا ٹالیرنس پالیسی کے باوجود مہلک وائرس کی نئی لہر انتہائی تیز رفتاری سے بڑھ رہی ہے۔

شنگھائی کے نزدیک واقع صوبے ژجیانگ میں کورونا کیسز میں اضافے کے باعث لاک ڈاؤن کو مزید سخت کیا جا رہا ہے تاہم حالات کنٹرول سے باہر ہیں۔چین کی وزارت صحت کا کہنا ہے کہ صوبے ژجیانگ میں زیادہ مریضوں میں معمولی علامات ہیں وہ گھر پر قرنطینہ میں ہے جب کہ 13 ہزار 583 اسپتال میں داخل ہیں۔

وزارت صحت کی جانب سے جاری بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ صوبے ژجیانگ میں کورونا سے متاثر 242 مریضوں کی حالت نازک ہے اور انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں داخل ہیں۔چین میں کورونا کی اس نئی لہر نے عالمی قوتوں کو بھی تشویش میں مبتلا کردیا ہے اور وہ شکوہ کر رہے ہیں کہ چین ایک بار پھر درست حقائق سامنے نہیں لارہا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اب چین نے روزانہ کی بنیاد پر سامنے آنے والے نئے کورونا کیسز کی تعداد بتانے سے گریز کرنا شروع کردیا ہے جس لگتا ہے کہ معاملہ گھمبیر ہے۔

ادھر اطلاعات کے مطابق دسمبر کے اختتامی دنوں میں دنیا بھر میں کورونا کیسز میں تیزی آگئی۔گزشتہ 24 گھنٹوں کے درمیان سب سے زیادہ کیسز 58 ہزار 448 جنوبی کوریا میں ریکارڈ ہوئے جبکہ 46 افراد جانوں سے بھی گئے۔

کورونا کے پھیلاؤ میں دوسرے نمبرپرتائیوان ہے جہاں 24 گھنٹوں کے دوران 17 ہزار 728 کیسز سامنے آئے جبکہ چوبیس مریض انتقال کرگئے۔آسٹریلیا میں دوہزار 242 کیسز رپورٹ ہوئے جبکہ بولیویا میں ایک ہزار 772 نئے کیسز سامنے آئے۔ دومریض انتقال کرگئے۔

دوسری جانب چین کے بعد بھارت میں بھی کورونا وائرس کی بہت زیادہ متعدی نئی قسم کے کیسز سامنے آئے ہیں۔خیال رہے کہ اومیکرون بی ایف 7 نامی کووڈ ویرینٹ کے باعث چین کو وبا کی تباہ کن لہر کا سامنا ہے۔ چین نے کووڈ ڈیلی کیسز کے اعدادو شماردینا ہی بند کردیے ہیں۔

Leave a reply