موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات کی روک تھام کرنی ہوگی. نگراں وزیراعظم

0
23
Anwar Ul Haq Kakar

نگراں وزیراعظم انوارالحق کاکڑ نے کہا ہے کہ موسمیاتی تبدیلی کے مسائل سے نمٹنے کے لئے سیاست سے بالاتر ہو کر قومی جذبے سے کام کرنا ہوگا، سرکاری محکموں اور دیگر ریاستی اداروں کو بھی اس سلسلے میں کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ بات انہوں نے اسلام آباد میں شجرکاری مہم کی تقریب میں خطاب کرتے ہوئے کہی جبکہ ان کا مزید کہنا تھا کہ موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات سے محفوظ رہنے کے لئے مؤثر اقدامات ناگزیر ہیں، گیسوں کے عالمی اخراج میں پاکستان کا حصہ ایک فیصد سے بھی کم ہونے کے باوجود پاکستان موسمیاتی تبدیلی کے اثرات سے متاثر ہوا ہے، موسمیاتی تبدیلی کے مسائل سے نمٹنے کے لیے سیاست سے بالاتر ہو کر قومی جذبے سے کام کرنا ہوگا۔

نگراں وزیراعظم نے کہا کہ اسلامی تعلیمات سے ہمیں حقوق العباد، حقوق اللہ اور نباتات کے حقوق کا درس ملتا ہے، ان نعمتوں کی قدر کرنے کی ضرورت ہے اور موسمیاتی تبدیلی کے اثرات سے بچنے کے للے اس طرف توجہ دینا ہوگی، آلودگی اور ماحول کو متاثر کرنے والے دیگر عوامل سے منفی اثرات پیدا ہوتے ہیں جس کا نتیجہ کبھی ہم سیلاب، کبھی زلزلہ یا کبھی دیگر قدرتی آفات کی صورت میں دیکھتے ہیں خیال رہے کہ انوار الحق کاکڑ نے مزید یہ بھی کہا کہ گیسوں کے عالمی اخراج میں پاکستان کا حصہ ایک فیصد سے بھی کم ہونے کے باوجود گزشتہ سال سیلاب سے بہت نقصان ہوا، ہمیں موسمیاتی تبدیلی کے مسائل اور منفی اثرات سے نمٹنے کے لیے قومی جذبے کے تحت کام کرنا ہوگا اور سیاسی جماعتوں، سول سوسائٹی اور دیگر فریقین کو موسمیاتی تبدیلی کے مسئلہ کے حل کو اپنی ترجیح بنانا ہوگا۔
مزید یہ بھی پڑھیں؛
دہشتگرد، سہولتکار اُن کے ساتھیوں کا پیچھا کریں گے،آرمی چیف
شاہد خاقان عباسی کیخلاف ایل این جی ریفرنس، اسپیشل جج سینٹرل کو منتقل
نوعمرسگریٹ نوشی کرنے والوں کی دماغی ساخت تبدیل ہوتی ہے،تحقیق

جبکہ علاوہ ازیں ان کا کہنا تھا کہ سرکاری محکموں اور دیگر ریاستی اداروں کو بھی اس سلسلے میں کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے ہم تو اس حوالے سے اپنا کردار ادا کریں گے لیکن جہاں تک وسائل کی فراہمی اور موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات سے بچنے کے لیے دیگر اقدامات کی ضرورت ہے، عالمی برادری کو بھی اپنا کردار ادا کرنا چاہیئے۔

Leave a reply