fbpx

نواز شریف کی بیماری کا علاج جیل میں نہیں ہو سکتا، ڈاکٹر کا انکشاف

سابق وزیراعظم نواز شریف کے ذاتی معالج نے کہا ہے کہ نواز شریف کی بیماریوں کا علاج جیل میں نہیں ہو سکتا،

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق نواز شریف کے ذاتی معالج ڈاکٹرعدنان نے پنجاب حکومت کو دوبارہ خط لکھ دیا ہے جس میں ڈاکٹرعدنان نے نوازشریف سےملاقات اور ان کے طبی معائنے کی اجازت طلب کی ہے. ڈاکٹر عدنان کا کہنا ہے کہ نواز شریف کو مختلف اقسام کی جان لیوا بیماریاں لاحق ہیں ، نواز شریف کو صحت کے سنگین مسائل درپیش ہیں ،ان بیماریوں کا جیل میں تسلی بخش اور مناسب علاج نہیں ہو سکتا ،ڈاکٹر عدنان کا مزید کہنا ہے کہ نواز شریف کو مسلسل نگہداشت کی ضرورت ہے .

واضح رہے کہ نواز شریف کے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان نے یکم جون کو بھی حکومت پنجاب کو خط لکھا تھا جس میں ڈاکٹرعدنان نے حکومت پنجاب سے نواز شریف کے طبی معائنے کی اجازت طلب کی ہے، ڈاکٹر عدنان نے خط میں لکھا ہے کہ نوازشریف کو دل کی سنگین بیماری کے پیش نظر مستقل میڈیکل کیئرکی ضرورت ہے،طبی معائنے کے لیے مستقل بنیادوں پر ملنے کی اجازت دی جائے،کئی بار حکومت سےنوازشریف کےمعائنے کی اجازت طلب کی مگرانکارکیا گیا، ڈاکٹر عدنان کا مزید کہنا تھا کہ مریض کو اسکے ذاتی معالج سے ملنے نہ دینا بنیادی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے .

واضح رہے کہ نواز شریف کوٹ لکھپت جیل میں سات سال کی سزا کاٹ رہے ہیں ،نواز شریف کو سپریم کورٹ نے طبی بنیادون پر رہا کیا تھا مگر ضمانت میں توسیع نہ ہونے پر نواز شریف پھر جیل گئے اب وہ عید الفطر بھی جیل میں کریں گے .