fbpx

پوپ فرانسس مشنریوں کے مقامی بچوں سے نارواسلوک پرمعذرت کے لیے کینیڈا پہنچ گئے

رومن کیتھولک کے روحانی پیشوا پوپ فرانسیس اتوار کے روزکینیڈا کے پانچ روزہ دورے پر مغربی صوبہ البرٹا کے شہر ایڈمنٹن میں پہنچ گئے ہیں۔

باغیٹ ی وی : غیر ملکی میڈیا کے مطابق پوپ فرانسس اتوار کو کینیڈا پہنچے، جہاں وہ کیتھولک چرچ کے زیر انتظام رہائشی اسکولوں میں کئی دہائیوں کے دوران ہونے والی زیادتیوں سے بچ جانے والے مقامی لوگوں سے ذاتی طور پر معافی مانگیں گے۔

رپورٹس کے مطابق کینیڈا میں چرچ سے متصل نام نہاد رہائشی اسکولوں میں گذشتہ برسوں کے دوران میں تعلیم حاصل کرنےوالے مقامی بچّوں کے ساتھ پادریوں کی بدسلوکی کے واقعات کی پریشان اطلاعات سامنے آتی رہی ہیں اور مقامی لوگ ان غلط کاریوں پررومن کتھولک چرچ سے معافی کا مطالبہ کررہے ہیں۔

دنیا کے 1.3 بلین کیتھولک کے سربراہ ایڈمنٹن پاپائے روم کے کینیڈا کے دورے کا پہلاپڑاؤ ہے۔اس کے بعد وہ دو اور مقامات پر جائیں گے۔ کینیڈا کے وزیراعظم جسٹن ٹروڈو نے دوسرے حکام کے ساتھ پوپ کا خیرمقدم کیا ہے ان کے اعزاز میں استقبالیہ تقریب دیسی ڈھول پیٹے گئے ہیں اورنعرے بازی کی گئی ہےایک کے بعد ایک مقامی رہنماؤں اورزعماء نے پوپ کا استقبال کیا اورتحائف کا تبادلہ کیا۔

پوپ نے روم سے 10 گھنٹے کی پرواز کے دوران اپنے ہمراہ طیارے میں سوارصحافیوں کو بتایا کہ یہ ایک "تپسیاتی سف” یعنی توبہ کا سفر ہےانھوں نے خاص طور پربوڑھے لوگوں اور دادا دادی کے لیے دعاؤں پر زور دیا۔

85 سالہ پوپ کا کینیڈا کا دورہ بنیادی طور پر اس اسکینڈل میں چرچ کے کردار کے لیے بچ جانے والوں سے معافی مانگنا ہے جسے قومی سچائی اور مصالحتی کمیشن نے "ثقافتی نسل کشی” قرار دیا ہے۔

1800 کی دہائی کے آخر سے 1990 کی دہائی تک، کینیڈا کی حکومت نے تقریباً 150,000 فرسٹ نیشنز، میٹیس اور انوئٹ بچوں کو چرچ کے زیر انتظام 139 رہائشی اسکولوں میں بھیجا، جہاں وہ اپنے خاندان، زبان اور ثقافت سے کٹ کر رہ گئے۔

ہیڈ ماسٹرز اور اساتذہ کی طرف سے بہت سے لوگوں کو جسمانی اور جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا گیا خیال کیا جاتا ہے کہ ہزاروں بچے بیماری، غذائیت کی کمی یا غفلت کی وجہ سے ہلاک ہوئے ہیں مئی 2021 سے، سابقہ ​​اسکولوں کے مقامات پر 1,300 سے زیادہ غیر نشان زدہ قبریں دریافت ہوئی ہیں۔

مقامی لوگوں کے ایک وفد نے اپریل میں ویٹیکن کا سفر کیا اور پوپ سے ملاقات کی جو فرانسس کے چھ روزہ سفر کا پیش خیمہ تھا جس کے بعد انہوں نے باضابطہ طور پر معافی مانگی لیکن کینیڈا کی سرزمین پر دوبارہ ایسا کرنا زندہ بچ جانے والوں اور ان کے خاندانوں کے لیے بہت زیادہ اہمیت کا حامل ہو گا، جن کے لیے ان کے آباؤ اجداد کی سرزمین خاص اہمیت کی حامل ہے۔

پوپ کے لیے یہ پرواز 2019 کے بعد سے طویل ترین پرواز تھی، جو گھٹنوں کے درد میں مبتلا ہیں جس کی وجہ سے وہ حالیہ باہر جانے میں چھڑی یا وہیل چیئر استعمال کرنے پر مجبور ہیں۔

پوپ اتوار کو وہیل چیئر پر تھے اور روم میں ہوائی جہاز میں سوار ہونے کے لیے لفٹنگ پلیٹ فارم کا استعمال کرتے تھے، اور ایڈمنٹن میں ٹرمک پر وہیل چیئر پر بھی تھے، ان کے ساتھ موجود اے ایف پی کے نامہ نگار نے بتایا۔

اتوار کو آرام کرنے کے بعد، پوپ پیر کو ایڈمنٹن سے تقریباً 100 کلومیٹر (62 میل) جنوب میں ماسکواس کی کمیونٹی کا سفر کریں گے، اور ایک اندازے کے مطابق 1500 افراد پر مشتمل ہجوم سے خطاب کریں گے جن کی توقع ملک بھر سے سابق طلباء شامل ہوں گے۔

جون میں اے ایف پی کو انٹرویو دیتے ہوئے 44 سالہ شارلٹ روان نے کہا، "میں بہت سارے لوگوں کو آنا چاہوں گی۔” ایرمینسکن کری نیشن کی رکن نے کہا کہ وہ چاہتی ہیں کہ لوگ "یہ سننے کے لیے آئیں کہ یہ نہیں بنایا گیا”۔

دوسرے لوگ پوپ کے دورے کو بہت دیر سے دیکھتے ہیں، بشمول لنڈا میک گیلوری سینٹ پال کے قریب سیڈل لیک کری نیشن کے ساتھ، ایڈمنٹن سے تقریباً 200 کلومیٹر مشرق میں م 68 سالہ شخص نے کہا کی میں اسے دیکھنے کے لیے اپنے راستے سے باہر نہیں جاؤں گا میرے لیے یہ ایک طرح سے بہت دیر ہو چکی ہے، کیونکہ بہت سے لوگوں کو نقصان اٹھانا پڑا، اور پادری اور راہبائیں اب گزر چکی ہیں۔”

میک گیلوری نے اپنے بچپن کے آٹھ سال اسکولوں میں سے ایک میں گزارے، چھ سے 13 سال کی عمر تک انہوں نے اے ایف پی کو بتایا، "رہائشی اسکول میں ہونے کی وجہ سے میں نے اپنی ثقافت، اپنے آباؤ اجداد کو کھو دیا۔

واضح رہے کہ کینیڈا کے مقامی گروہ معافی نامے کے صرف الفاظ سے زیادہ کی تلاش میں ہیں۔وہ ان بچّوں کی قسمت کے بارے میں جاننا چاہتے ہیں اور چرچ آرکائیوز تک رسائی کا مطالبہ کررہے ہیں جواقامتی اسکولوں سے کبھی گھروں کو نہیں لوٹے۔ وہ استحصال کرنے والوں کے کو انصاف کے کٹہرے میں لانے، متاثرین کو مالی معاوضہ دینے کا مطالبہ کررہے ہیں اور ویٹی کن میوزیم میں موجود دیسی نوادرات کی واپسی بھی چاہتے ہیں۔

کنفیڈریشن آف ٹریٹی 6 کے گرینڈ چیف جارج آرسینڈ جونییر نے کہا کہ ’’(پوپ کی) یہ معذرت ہمارے تجربات کی توثیق کرتی ہے اورچرچ کے لیے دنیا بھر کے مقامی لوگوں کے ساتھ مجروح تعلقات پرمرہم رکھنے کا موقع فراہم کرتی ہے‘‘ لیکن انھوں نے زور دے کر کہا:’’یہ معاملہ یہیں پہ ختم نہیں ہوتا-ابھی بہت کچھ کرنا باقی ہے۔یہ ایک آغازہے-