fbpx

اپوزیشن کو بڑا جھٹکا عدم اعتماد کی تحریک مسترد

اسلام آباد: ڈپٹی اسپیکر قاسم خان سوری نے تحریک عدم اعتماد کی قرارداد کو مسترد کردیا-

باغی ٹی وی : قومی اسمبلی کا اجلاس ڈپٹی اسپیکر قاسم خان سوری کی زیر صدارت شروع ہوا اجلاس کا آغاز تلاوت کلام پاک سے ہوا جس کے بعد نعت رسول ﷺ مقبول پیش کی گئی۔

وقفہ سوالات پر وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے کہا کہ تحریک عدم اعتماد آئینی ہے اور اس کا سب کو حق حاصل ہے فواد چودھری نے خفیہ مراسلے کے حوالے سے بات کی اور کہا کہ تحریک عدم اعتماد بیرونی سازش ہے۔

فواد چوہدری نے کہا کہ ہمارے سفیر کو بتایا جاتا ہے کہ وزیراعظم کے خلاف تحریک اعتماد لائی جارہی ہےتحریک عدم اعتماد آئین کے آرٹیکل95 کے تحت لائی جاتی ہے،7مارچ کو ہمارے سفیر کو میٹنگ میں طلب کیا جاتا آئین کے آرٹیکل5اے کے تحت ریاست سے وفاداری ہر شہری کا فرض ہے

فواد چودھری نے کہا کہ بتایا گیا کہ بیرون ملک کی مدد سے حکومت ہٹائی جاسکتی ہے،کیا پاکستان کے عوام کٹھ پتلیاں ہیں –

ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی نے یہ کہتے ہوئے اجلاس 6 اپریل 2022 تک ملتوی کر دیا کہ عدم اعتماد کی تحریک آئین کی رو کے منافی ہے-

واضح رہے کہ قبل ازیں مسلم لیگ کی مرکزی ترجمان مریم اورنگزیب نے دعویٰ کیا تھا کہ متحدہ اپوزیشن کے پاس 174ووٹ ہیں انہوں نے کہا کہ ن لیگ کے 84،پیپلزپارٹی کے 56 اورایم ایم اے کے 14 اراکین ہیں ایم کیو ایم کے 6،بی اے پی 4،بی این پی مینگل 4 اور4 آزاد اراکین ہیں،بی این پی اور جمہوری وطن پارٹی کا ایک ایک رکن بھی متحدہ اپوزیشن کا حصہ ہے وزیر اعظم شہباز شریف ہوں گے لیکن اگر کوئی غیر آئینی حرکت کی گئی تو اس کے نتائج آئین میں موجود ہیں۔