fbpx

‏قربانی کا فلسفہ . تحریر : فہد ملک

مخصوص جانور کو مخصوص دن میں بہ نیت تقرب ذبح کرنا قربانی ہے۔ قربانی حضرت سیّدنا ابراہیم علیہ السلام کی سنت ہے جو اس امت (محمدیہ) کیلئے باقی رکھی گئی ہے۔ ہرصاحب نصاب مسلمان پر قربانی واجب ہے۔ اللّٰہ تعالیٰ نے حضرت محمد صلی اللّٰہ علیہ وسلم کو قربانی کا حکم دیتے ہوئے ارشاد فرمایا.

فَصَلِّ لِرَبِّكَ وَا نْحَرْ 
"پس تم اپنے رب ہی کے لیے نماز پڑھو اور قربانی کرو”

قربانی ایک ایسی عبادت ہے کی اللّٰہ تعالیٰ نے اپنے پیارے نبی حضرت سیّدنا اسماعیل علیہ السلام کی جان کے فدیہ میں دنبہ دے کر اسے مقرر کیا۔
ارشاد بانی ہے
وَفَدَينٰهُ بِذِبٌٍِح عَظِيمٍ
"ہم نے ایک بڑا دنبہ اسکے فدیہ میں دے کر اسے بچا لیا”

قربانی اسلام شعار اورنعمت الہی ہے۔ تقوی پرہیز گاری اور رضائے الٰہی کیخاطر دی جانے والی قربانی کو اللّٰہ تعالیٰ قبول فرماتا ہے۔
ارشاد بانی ہے:
"اللّٰہ تعالٰی کو ہرگز ان کے گوشت پہنچتے ہیں نہ ہی انکے خون، ہاں تمہاری پرہیز گاری اس تک باریاب ہوتی ہے”

اللّٰہ تعالٰی کی بارگاہ میں قربانی پیش کرنا نہایت ہی پسندیدہ امر ہے۔ عیدالاضحٰی کے ایام میں خالق کائنات کو قربانی سے زیادہ کوئی عمل محبوب نہیں۔ قربانی کا دن اللّٰہ تعالٰی کے ہاں بہت عظیم دن ہے۔
رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا۔
"یقیناً اللّٰہ تعالٰی کے ہاں سب سے عظیم دن قربانی کا دن ہے”

ثواب کی نیت سے قربانی کرنا آتش جہنم سے روکاوٹ کا باعث ہے
حضرت سیّدنا عباس رضہ اللہُ تعالٰی سے روایت یے
"جو مال عید کے دن قربانی میں خرچ کیا گیا،اس سے زیادہ کوئی مال پیارا نہیں”
سنت ابراہیمی کو پورا کرنے کی غرض سے دبح کئے جانے والے جانور کے ساتھ ساتھ اپنی شہرت ریاکاری اور دنیاوی خواہشات کو بھی قربان کیا جائے۔ اور خالصتاً رضائے الٰہی اور تقویٰ پرہیزگاری کے حصول کیلئے قربانی پیش کی جائے۔
کیونکہ بحیثیت مسلمان ہمارا یہ عقیدہ ہے کہ اللّٰہ تعالٰی ہمارے جانور کے گوشت اور خون کی حاجت نہیں وہ ہمارا جذبہ قربانی اور تقویٰ کو ملاحظہ فرماتا ہے۔دعاہے اللّٰہ تعالٰی سب کی قربانی اپنی بارگاہ میں قبول فرمائے آمِین۔

‎@Malik_Fahad333