fbpx

کورونا ویکسینیشن کیوں معطل کی؟این سی او سی نے آج کے اجلاس میں سب کُچھ بتادیا

اسلام آباد:کورونا ویکسینیشن کیوں معطل کی؟این سی او سی نے آج کے اجلاس میں سب کُچھ بتادیاا،طلاعات کے مطابق آج NCOC کا اسلام آباد ہیڈ کوارٹر میں صبح کا اجلاس منعقد ہوا۔ اس اہم اجلاس کو ملک بھر میں جاری واجبی ویکسین کے نظام کے بارے میں آگاہ کیا گیا۔

این سی او سی اجلاس کو بتایا گیا کہ گزشتہ 48 گھنٹوں کے دوران ملک بھر میں 1.7 ملین ویکسین لگائی گئیں۔ این سی او سی ہیڈ کوارٹر پر اجلاس میں شریک ماہرین اور دیگراسٹیک ہولٹرز کو بتایا گیا کہ ملک بھر میں جاری خسرہ مہم کی وجہ سے 12 سے 15 سال کے طلباء کی ویکسینیشن 27 نومبر تک معطل رہے گی۔

وفاقی وزیر اسد عمر نے اس موقع ہر شہر میں شہریوں کو ویکسین کی فراہمی کو یقینی بنانے میں ملوث تمام اسٹیک ہولڈرز کی کوششوں کو سراہا۔شرکا نے خاص طور پر ان شہروں کو سراہا جنہوں نے 50% سے زیادہ کامیابیاں حاصل کیں، ان شہروں میں جہلم، منڈی بہاؤالدین، پشاور، بھمبر، باغ، میرپور، اسکردو، گلگت، غذر اور اسلام آباد شامل ہیں،

اس موقع پر اسد عمر نے تمام اسٹیک ہولڈرز پر زور دیا کہ جنہوں نے اپنے متعلقہ 50% سے زیادہ ویکسینیشن کی بہترین شرح حاصل کی۔ ویکسینیشن کی شرح برقرار رکھی جائے

ان شہروں میں راولپنڈی، سرگودھا، سیالکوٹ، میانوالی، کلر کہار، حافظ آباد، رحیم یار خان، کراچی، چترال، چارسدہ، بالاکوٹ، جہلم ویلی، راولاکوٹ، مظفرآباد، نیلم، ہنزہ اور کھرمنگ میں بھی 40 فیصد سے زائد شہریوں کو ویکسین پلانے پر سراہا گیا۔

اجلاس شرکا کو زمینی سرحدوں سے پاکستان میں پیدل چلنے والوں کے لیے ضروری COVID پروٹوکول اور ویکسینیشن کے طریقہ کار کے بارے میں بتایا گیا۔
اور باقی رہ جانے والے ویکسینیشن کے عمل کو جلد مکمل کرنے پر زور دیا

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!