زندہ رہنے کی یہ ترکیب نکالی میں نے ،اپنے ہونے کی خبر سب سے چھپالی میں نے

علینا عترت مینا نقوی اور نصرت مہدی کی بہن ہیں
0
94
poet

زندہ رہنے کی یہ ترکیب نکالی میں نے
اپنے ہونے کی خبر سب سے چھپالی میں نے

علینا عترت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تعارف : آغا نیاز مگسی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہندوستان کی معروف ادیبہ اور شاعرہ علینا عترت صاحبہ کا تعلق اترپردیش کے ضلع بجنور کے نگینہ سے انہوں نے انگریزی ادب اور تاریخ میں ایم اے کیا ہے اور بی ایڈ کی ڈگری بھی حاصل کی ہے وہ اس وقت درس و تدریس کے شعبے سے وابستہ ہیں جبکہ ان کا پہلا شعری مجموعہ ” سورج تم جائو” 2014 میں شائع ہوا جسے اردو اکادمی دہلی اور اردو اکادمی بہار کی جانب سے انعامات سے نوازا گیا ہے۔ ان کی پہلی تخلیق عالمی سہارا میں شائع ہوئی۔ اس کے بعد ان کی تخلیقات ملک کے مختلف رسائل میں شائع ہوچکی ہیں۔علینا عترت مینا نقوی اور نصرت مہدی کی بہن ہیں اور وہ اس وقت دہلی میں مقیم ہیں۔

علینا عترت کی شاعری سے انتخاب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے جاؤ تعلق نہ رکھیں گے ہم بھی
تم بھی وعدہ کرو اب یاد نہیں آؤ گے

زندہ رہنے کی یہ ترکیب نکالی میں نے
اپنے ہونے کی کھبر سب سے چھپا لی میں نے

تجھ کو آواز دوں اور دور تلک تو نہ ملے
ایسے سناٹوں سے اکثر مجھے ڈر لگتا ہے

جب بھی فرصت ملی ہنگامۂ دنیا سے مجھے
میری تنہائی کو بس تیرا پتہ یاد آیا

ابھی تو چاک پہ جاری ہے رقص مٹی کا
ابھی کمہار کی نیت بدل بھی سکتی ہے

ہر ایک سجدے میں دل کو ترا خیال آیا
یہ اک گناہ عبادت میں بار بار ہوا

جن کے مضبوط ارادے بنے پہچان ان کی
منزلیں آپ ہی ہو جاتی ہیں آسان ان کی

ہجر کی رات اور پورا چاند
کس قدر ہے یہ اہتمام غلط

اداسی شام تنہائی کسک یادوں کی بے چینی
مجھے سب سونپ کر سورج اتر جاتا ہے پانی میں

ہم ہوا سے بچا رہے تھے جنہیں
ان چراغوں سے جل گئے شاید

مرے وجود میں شامل تھا وہ ہوا کی طرح
سو ہر طرف تھا مرے بس مری نظر میں نہ تھا

بعد مدت مجھے نیند آئی بڑے چین کی نیند
خاک جب اوڑھ لی اور خاک بچھا لی میں نے

پھر زمیں کھینچ رہی ہے مجھے اپنی جانب
میں رکوں کیسے کے پرواز ابھی باقی ہے

جانے کب کیسے گرفتار محبت ہوئے ہم
جانے کب ڈھل گئے اقرار میں انکار کے رنگ

بن آواز پکاریں ہر دم نام ترا
شاید ہم بھی پاگل ہونے والے ہیں

بند رہتے ہیں جو الفاظ کتابوں میں صدا
گردش وقت مٹا دیتی ہے پہچان ان کی

عجب سی کشمکش تمام عمر ساتھ ساتھ تھی
رکھا جو روح کا بھرم تو جسم میرا مر گیا

شدید دھوپ میں سارے درخت سوکھ گئے
بس اک دعا کا شجر تھا جو بے ثمر نہ ہوا

دل کے گلشن میں ترے پیار کی خوشبو پا کر
رنگ رخسار پہ پھولوں سے کھلا کرتے ہیں

اب بھی اکثر شب تنہائی میں کچھ تحریریں
چاند کے عکس سے ہو جاتی ہیں روشن روشن

کسی کے واسطے تصویر انتظار تھے ہم
وہ آ گیا پہ کہاں ختم انتظار ہوا

عیاں تھے جذبۂ دل اور بیاں تھے سارے خیال
کوئی بھی پردہ نہ تھا جب کے تھے حجاب میں ہم

وہ اک چراغ جو جلتا ہے روشنی کے لیے
اسی کے زیر تحفظ ہے تیرگی کا وجود

کوئی ملا ہی نہیں جس سے حال دل کہتے
ملا تو رہ گئے لفظوں کے انتخاب میں ہم

موسم گل پر خزاں کا زور چل جاتا ہے کیوں
ہر حسیں منظر بہت جلدی بدل جاتا ہے کیوں

بندشوں کو توڑنے کی کوششیں کرتی ہوئی
سر پٹکتی لہر تیری عاجزی اچھی لگی

اندھیری شب کا یہ خواب منظر مجھے اجالوں سے بھر رہا ہے
یہ رات اتنی طویل کر دے کہ تا قیامت سحر نہ آئے

گہرے سمندروں میں اترنے کی لے کے آس
بیٹھے ہوئے ہے ایک کنارے ہمارے خواب

خواہشیں خواب دکھاتی ہیں ترے ملنے کا
خواب سے کہہ دے کہ تعبیر کی صورت آئے

کچھ کڑے ٹکراؤ دے جاتی ہے اکثر روشنی
جوں چمک اٹھتی ہے کوئی برق تلواروں کے بیچ

کوزہ گر نے جب میری مٹی سے کی تخلیق نو
ہو گئے خود جذب مجھ میں آگ اور پانی ہوا

ذات میں جس کی ہو ٹھہراؤ زمیں کی مانند
فکر میں اس کی سمندر کی سی وسعت ہوگی

Leave a reply