3 حالتیں جب دانتوں میں برش نہیں کرنا چاہیے

ایک ہی وجہ ہے جو تینوں حالات میں یکساں اور وہ ہے منہ میں تیزابیت کی سطح
0
134

لندن: ایک ڈینٹسٹ نے وہ 3 حالتیں بتائی ہیں جن میں دانتوں میں برش نہیں کرنا چاہیے۔

باغی ٹی وی : سمارٹ ڈینٹل ایستھیٹکس کی کلینیکل ڈائریکٹر اور لندن اسکول آف فیشل ایستھیٹکس کی ڈائریکٹر ڈاکٹر شادی منوچہری 3 حالتوں میں دانتوں کو برش کرنا نقصان دہ قرار دیا،ڈاکٹر منوچہری نے بتایا کچھ حالات ایسے ہیں جس میں آپ کا برش کرنے کا بہت دل کرتا ہوگا لیکن حقیقت میں یہ نقصان دہ ہوسکتا ہے ایک ہی وجہ ہے جو تینوں حالات میں یکساں اور وہ ہے منہ میں تیزابیت کی سطح یعنی pH۔

ڈاکٹر شادی منوچہری کے مطابق قے/الٹی کے بعد دانتوں کو برش نہ کریں معدے سے آنے والا مواد تیزابیت والا ہوتا ہے لہذا اگر آپ اپنے دانتوں کو اُلٹی کرنے کے بعد فوراً برش کریں گے تو آپ بنیادی طور پر تیزابیت کو اپنے دانتوں پر رگڑ رہے ہیں جو انہیں نقصان پہنچا سکتا ہے دانت معدنیات ہیں اور تیزاب معدنیات کو تباہ کرتا ہے یہ تیزابیت تھوک کے ذریعے قدرتی طریقے سے ہی ختم ہوجائے گی اور اس میں تقریباً 30 سے​​60 منٹ لگ سکتے ہیں۔

صدرعالمی بینک کی پاکستانی معیشت کے استحکام اور ٹیکس بڑھانے کے پروگراموں کی حمایت …

انہوں نے مزید بتایا کہ کھانا کھانے کے بعد بھی فوراً برش نہیں کرنا چاہیئے جب ہم کچھ بھی کھاتے ہیں، چاہے وہ ناشتہ ہو، دوپہر کا کھانا، یا چھوٹی موٹی چیزیں تو آپ کے دانتوں پر موجود بیکٹیریا اسے میٹابولائز کرتے ہیں اور اسے تیزاب میں بدل دیتے ہیں۔

علاہ ازیں میٹھی چیزیں مٹھائی یا میٹھا مشروب وغیرہ، تو یہ میٹھا ہمارے دانتوں پر موجود قدرتی بیکٹیریا بھی اپنی غذا کے طور پر استعمال کرتے ہیں تاہم اس تغذیے کے عمل کے نتیجے میں تیزابیت پیدا ہوتی ہے اس میں بھی تھوک کو وقت دیں کہ وہ قدرتی طور پر اس تیزابیت کو نیوٹرلائز کردے۔

یوکرین کے ساتھ جنگ میں روس کے 50 ہزار فوجیوں کی ہلاکت کی تصدیق

Leave a reply