شمالی کوریا کے کروز میزائل فائر کرتے ہی ایک اور محاذ کھل گیا

0
288
north korea

شمالی کوریا کے کروز میزائل فائر کرتے ہی ایک اور محاذ کھل گیا
سیول نے رپورٹ کیا ہے کہ شمالی کوریا نے اپنے مشرقی ساحل سے کروز میزائل فائر کیے ہیں، جس سے حالیہ میزائل تجربات کے درمیان علاقائی کشیدگی میں مزید اضافہ ہوا ہے۔ گزشتہ بدھ کو شمالی کوریا نے Pulhwasal-3-31، ایک نئے اسٹریٹجک کروز میزائل کا تجربہ کیا، شمالی کوریا نے 2022 کے آغاز سے لے کر اب تک ایک سو سے زیادہ میزائلوں کا تجربہ کیا ہے۔

شمالی کوریا کی جانب سے میزائلوں کے تجربے تشویش کو جنم دیتے ہیں،کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ ان کا مقصد یوکرین پر روس کے حملے سے عالمی توجہ ہٹانا ہے اور ساتھ ہی ساتھ شمالی کوریا کے جوہری پروگرام کو بھی آگے بڑھانا ہے۔ خاص توجہ شمالی کوریا کی جانب سے ہائپرسونک میزائلوں کا تعاقب ہے، جو نسبتاً کم اونچائی پر چلتے ہوئے آواز کی رفتار سے پانچ گنا زیادہ رفتار سے سفر کر سکتے ہیں۔ ہائپرسونک میزائلوں کا اہم فائدہ رفتار کے بجائے ان کی چالبازی میں مضمر ہے، جو انہیں روایتی میزائل ڈیفنس سسٹم کے خلاف مضبوط بناتا ہے۔

رائٹرز کی رپورٹوں سے پتہ چلتا ہے کہ شمالی کوریا کے رہنما کم جونگ ان نے پانچ سالہ منصوبے میں ہائپرسونک ہتھیاروں کی حفاظت کو ایک اہم مقصد کے طور پر شناخت کیا ہے جس کا مقصد فوجی طاقت کو تقویت دینا ہے، اس کے ساتھ ساتھ ٹھوس ایندھن والے ICBMs اور ایٹمی آبدوز کی ترقی ہے۔ ان پیش رفتوں کے پیچھے سٹریٹجک ہدف میزائل شیلڈز اور ارلی وارننگ سسٹم کو روکنا ہے، جس سے شمالی کوریا کی جارحانہ صلاحیتوں میں اضافہ ہو گا۔

یہ تیز رفتار میزائل شمالی کوریا کے ابھرتے ہوئے جوہری خطرات کے جواب میں جنوبی کوریا اور امریکہ کے مشترکہ جوہری ڈیٹرنس کی صلاحیتوں کو مضبوط کرنے کے فیصلے کے موافق ہیں۔ پیانگ یانگ نے نہ صرف متعدد میزائل تجربات کیے ہیں بلکہ ایک جاسوس سیٹلائٹ بھی لانچ کیا ہے، جو علاقائی سلامتی کی حرکیات کو مزید پیچیدہ بنا رہا ہے۔

جغرافیائی سیاسی صف بندیوں کی وجہ سے صورتحال مزید خراب ہوئی ہے، چین شمالی کوریا کی حمایت کر رہا ہے جبکہ امریکہ اور جاپان جنوبی کوریا کی حمایت کر رہے ہیں۔ اتحادوں کا یہ پیچیدہ جال خطے میں عدم استحکام کو برقرار رکھتے ہوئے بالادستی کے لیے کوشاں عالمی طاقتوں کے ممکنہ خطرات کی نشاندہی کرتا ہے۔

شمالی کوریا کے مسلسل میزائل تجربات، خاص طور پر ہائپر سونک ہتھیاروں کا تعاقب، خطے میں بڑھتی ہوئی کشیدگی کو اجاگر کرتا ہے اور بنیادی سلامتی کے خدشات کو دور کرنے کے لیے سفارتی کوششوں کی فوری ضرورت کو اجاگر کرتا ہے۔

Leave a reply