fbpx

بڑا دھماکہ، چوری پکڑی گئی، ثاقب نثار کی آڈیو جعلی ثابت،ثبوت حاضر

بڑا دھماکہ، چوری پکڑی گئی، ثاقب نثار کی آڈیو جعلی ثابت،ثبوت حاضر

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق سینئر صحافی و اینکر پرسن مبشر لقمان نے کہا ہے کہ اس وقت جسٹس ریٹائرڈ ثاقب نثار کی آڈیو کو لے کر ملک میں ایک ہنگامہ برپا ہے، ن لیگ کے ہامی کہہ رہے ہیں کہ اللہ کی لاٹھی بے آواز ہے اور حقیقت سامنے آگئی ہے۔جبکہ تحریک انصاف کے حامی کہہ رہے ہیں کہ یہ اداروں پر حملہ ہے اور یہ آڈیو جعلی ہے۔ لیکن حقیقت کیا ہے۔؟جعلی ویڈیو کیسی ہوتی ہے۔ وہ ڈب کی جاتی ہے یا ٹکڑے جوڑ کے ملائے جاتے ہیں۔آج کی اس ویڈیو میں ہم ثاقب نثار صاحب کی مبینہ آڈیو کا پوسٹ مارٹم کریں گے کہ یہ اصلی ہے یا نقلی۔ کچھ لائنیں ڈب ہو سکتی ہیں لیکن اس میں سے اکثر فقرے اور ٹون، ثاقب نثار صاحب کی ہے۔ ہم نے جو ثاقب نثار صاحب کی درجنوں ویڈیوز دیکھی ہیں اس میں سے کئی الفاظ ہمیں ان کی دیگر تقریروں میں ملے ہیں۔ اور ہمارے اندازے کے مطابق یہ آڈیو درجنوں آڈیو patches ملا کر بنائی گئی ہے۔ کیسے۔۔

مبشر لقمان کا کہنا تھا کہ اس کے کے لیے پہلے میں آپ کو میاں نواز شریف کی ایک ایڈٹ ہوئی ہوئی آڈیو سنواتا ہوں جو اسی طرز پر ایڈٹ ہوئی ہوئی ہے۔ اب اگر ثاقب نثار صاحب کی آڈیو جہاں سے شروع ہوتی ہے وہ فقرہ ہے۔ Let me be blunt about it یہ انہوں نے کہاں کہا تھا اپنی تقریر میں۔۔ اس کے بعدnfortunately کا ورڈ ڈالا گیا ہے۔ وہ بھی اسی تقریر میں کہا گیا ہےاس کے بعد فقرہ آتا ہے کہ ہمارے پاس Judgment ادارے دیتے ہیں۔یہاں میں یہ بات آپ کو بتا دوں۔۔اس لائن میںہمارے پاس۔۔۔ ایک ورڈ جوڑا گیا ہے۔اس کے بعد Judgment کا الفاظ کہیں اور سے لیا گیا ہے اور پھر اسکے بعد ادارے دیتے ہیں کا الفاظ جوڑ دیا گیا ہے۔ الفاظ کیسے جڑتے ہیں یہ میں نے آپ کو میاں نواز شریف کی جعلی آڈیو سنوا کر بتا دیا ہے۔جبکہ جو لائن اس سے اگلی ہے اس میں میاں صاحب کو سزا دینی ہے۔یہ تین جوڑ لگائے گئے ہیں۔
اس میں۔۔۔ ایک ورڈمیاں صاحب ۔۔۔دوسرا ورڈکو سزا دینی ہے۔ ۔۔۔تیسرا ورڈ ہے۔ مثال کہ طور پر آپ کہیں گے کہ میاں صاحب کا نام ثاقب نثار نے کیوں لیا ہے اور یہ الفاط کہاں سے لیا جا سکتا ہے تو میں ثاقب نثار صاحب کا ایک فقری آپ کو سنوا دیتا ہوں ۔ وہ کس میاں صاھب کا ذکر کر رہے ہیں۔

مبشر لقمان کا کہنا تھا کہ یہاں ایک بات یاد رکھیں ۔ جب اس طرح کی مکسنگ کی جاتی ہے۔ تو Audio patches کو ملانے کے بعد اس کے نیچے Track musicیا Noise لگائی جاتی ہے۔ یہاںNoise کا انتخاب اس لیے کیا گیا کیونکہ اس آڈیو کو جس فقرے سے شروع کیا گیا ہے اس میں پہلے ہی شور تھا۔پہلے شائد آپ نے غور نہ کیا ہو دوبارہ سن لیں۔ شور کو ہم ٹیکلنیکل زبان میں Noise کہتے ہیں اور اس کے لیے ایک فلٹر Denoiser بھی ہوتا ہے۔ اس پوری آڈیو کے نیچے آواز سے زیادہ شور لگانے کا مقصد ہی یہ ہے کہ اس آڈیو مین ٹیکنکل جھول پکڑنے میں مشکل ہو۔اور اگر کوئی آڈیو یا ویڈیو جمپ پکڑنا۔۔ یا۔۔کوور کرنا ہو تو اس میں Insert لگا دی جاتی ہے۔ جیسے دوسرا آدمی کے فقرے ہیں۔ جب آپ بولتے ہوئے ایک دم رک جائیں اور دوسرا بول پڑے تو جب آپ دوبارہ بات شروع کرتے ہیں اس کی ٹون بدل جاتی ہے۔
یہی اس ویڈِیو میں کیا گیا۔ دوسرے آ دمی کے بولنے کے بعد جسٹس (ر)ثاقب کی ٹون بلکل بدل جاتی ہے۔ اور ان کے اگلے فقرے میں پانچ جوڑ لگائے گئے ہیں۔ اور یہ ٹون مکمل طور پر ایک تقریر کی ہے۔

مبشر لقمان کا کہنا تھا کہ ثاقب نثار کی ٹون بلکل ایک تقریر والی ہے۔ جب آپ کسی سے فون پر بات کرتے ہیں تو اس طرح کی ٹون استعمال نہیں کر تے۔ اس فقرے میں
بلکل جائز ہے ۔۔ایک میں نے اپنے دوستوں سے کہا ۔۔دوسراجی اس میں کچھ کیا جائے۔۔۔ تیسراتو۔۔۔ چوتھا میرے دوستوں نے اس سے اتفاق نہیں کیا۔۔۔ پانچواں Independence of judiciary چھٹابھی نہیں رہے گی۔۔۔ ساتواں تو چلیں۔۔ آٹھواں آڈیو پیچ ہے۔اور یہ سارے کا سارا تقریر کا اسٹائل ہے۔اب آپ اس بندے کی Insertنکال کر سنیں تو آپ کو اندازہ ہو جائے گا کہ کتنا بڑا جمپ ہے۔ sotآپ ثاقب نثار صاھب کی انٹرنیٹ پر بحثیت چیف جسٹس تقریریں آٹھا کر دیکھ لیں اس میں وہ عدلیہ کے لیے ادارے کا اکثر الفاظ استعمال کر رہے ہیں،اور جو ان کا فقرہ ہے۔ہمارے پاس ججمنٹ ادارے دیتے ہیں۔تو یقینا وہ عدلیہ کی بات کر رہے ہوں گے۔ اور فیصلہ سپریم کورٹ کا یا ہائی کورٹ کا ادارہ ہی دیتا ہے۔ جج نہیں۔اور جہاں تک دوست کا الفاظ ہے وہ اکثر اپنی تقریروں میں دوست کا الفاظ اپنے ساتھی ججز کے لیے استعمال کرتے تھے۔ ایک تقریب جس میں نواز شریف کا فیصلہ دینے والے تین سے زائد جج بیٹھے تھے جن میں جسٹس آصف سعید کھوسہ، جسٹس گلزار بھی شامل ہیں تو اس وقت ان کو دوست کہہ کر ثاقب نثار کیا کہتے ہیں ، عجیب اتفاق ہے کہ آڈیو میں پہلے نمبر پر شور ڈال کر اسے مشکوق کر دیا گیا ہے، بنانے والے نے اپنی طرف سے عقلمندی کی ہے لیکن Professionl جانتے ہیں کہ یہ حرکت کب کی جاتی ہے۔ اس آڈیو میں ایک چیز کی Continuity ہے اور وہ ہےNoise..پھر تقریر میں کہے ہوئے فقرون اور اس آڈیو کے فقروں کی duration Layer Spike Tone سب ملتی ہیں۔ یہ کیا اتفاق ہے۔