بریسٹ کینسر کے بد منہ کا کینسر بہت تیزی سے پھیل رہا ہے : ڈاکٹر نادیہ فرحان

0
87

کراچی : بریسٹ کینسر کے بعد منہ کا کینسر بہت تیزی سے پھیل رہا ہے یہ بات ڈاکٹر نادیہ فرحان نے ڈاکٹر عیسیٰ لیبارٹری اینڈ ڈائیگنوسٹک شاہ فیصل سینٹر میں ڈینٹل او پی جی کا افتتاح کے موقع پر بحیثیت مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے کہی ۔

اس موقع پر اسپیشل گیسٹ ایس ایس پی ٹریفک ایسٹ غلام سرور بھیو،مظہر زرداری پی آئی اے، روٹری انٹرنیشنل ڈسٹرکٹ3271 کے آئی پی ڈی جی پروفیسر ڈاکٹر فرحان عیسیٰ، اسسٹنٹ گورنر درانہ ارشد، شاہد احمد خان برانچ منیجر،انور شیخ،سکندر عبدالستار،ڈاکٹر نعمان علی، عفرہ جاوید، عاقل، حوریہ،مریم اور دیگر سیاسی و سماجی شخصیات نے شرکت کی ۔

ڈاکٹر نادیہ فرحان نے مزید کہا کہ کراچی میں پان اور گٹکا منہ کے کینسر میں تیزی سے اضافہ کر رہا ہے اور بچوں میں دانتوں کے امراض تیزی سے بڑھنے پر تشویش کا اظہار کیا ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے ساتھ ساتھ کئی ممالک میں دانتوں کا علاج مہنگا ہے جو ہر ایک کی پہنچ سے باہر ہے مختلف ممالک میں جہاں طبی سہولت کی فرامی مفت ہے لیکن دانتوں کا علاج اس کے برعکس ہے ڈاکٹر نادیہ فرحان نے کہا کہ مریضوں کو دانتوں کے امراض کے سلسلے میں ہدایت دی کہ دانتوں کے چیک اپ اور صفائی کے سلسلے میں زور دیا اور انہوں نے چھالیہ گٹکے کو دانتوں اور منہ کے امراض کے لئے زہر یلہ قاتل قرار دیا انہوں نے کہا کہ ذیابیطس میں مبتلا افراد کا منہ کو تکالیف سے سابقہ پڑ سکتا ہے اگر منہ میں کوئی انفیکشن ہو جائے تو یا ذیابطیس کا کنٹرول بگڑ سکتا ہے جس سے ان کے روز مرہ کے معاملات متاثر ہو جاتے ہیں ذیابیطس کے خراب کنٹرول کی وجہ سے ہونے والی دیگر پیچیدگیوں پر خصوصی توجہ دی جا رہی ہے لیکن منہ میں ہونے والی تکالیف کو اکثر نظرانداز کر دیا جا تا ہے ماہر امراض دندان ذیابیطس کے خراب کنٹرول کی وجہ سے اکثر متفکر ہوتے ہیں کیونکہ دانتوں کے ضائع ہونے کی ایک بڑی وجہ دانتوں اور مسوڑھوں کا انفیکشن ہے، دانتوں کے ضائع ہوئے اور مصنوعی دانت لگوانے کے بعد ذیابیطس میں مبتلا افراد کافی مسائل سے گزرتے ہیں مثلا غذائی اجزاء کی کمی ، ذہنی، جسمانی پریشانی وغیرہ جس کا انجام ان افراد کے معیاری زندگی پر پڑتا ہے اکثر دانتوں اور مسوڑھوں کا انفیکشن ذیابیطس کے کنٹرول کو بگاڑ دیتا ہے لہذا ان دونوں امراض چولی دامن کا ساتھ ہے منہ میں ہونے والی انفیکشن بشمول دانتوں اور سوڑھوں کے انفیکشنز میں مختلف عوامل اپنا کردار ادا کرتے ہیں جس میں سرفہرست ذیابیطس کا بگڑا ہوا کنٹرول ( خون میں گلوکوز کی بلند مقدار ) اور خون کی مہین نالیوں کو خرابی

Leave a reply