کینڈا سے بھی کشمیریوں کے لیے اچھی خبر آگئی

کینڈا کے شہر ٹورنٹو میں کشمیریوں کے حق میں زبردست احتجاجی مظاہرہ، ہزاروں افراد کی شرکت
مقبوضہ کشمیر، گذشتہ دو ہفتوں کی بھارتی ریاستی دہشت گردی کی رپورٹ آ گئی
باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق کینیڈا کے شہر ٹورنٹو کے فلپس سکوائر میں ہزاروں لوگ کشمیریوں کی حمایت کے لیے سڑکوں پر نکل آئے ۔ مظاہرین نے ہاتھوں میں پلے کارڈز اٹھارکھے تھے جن پر کشمیریوں کی حمایت اوربھارتی ریاستی دہشت گردی کے خلاف تحریریں درج تھیں۔

مظاہرہ سے خطاب کرتے ہوئے عامر بٹ نے کہا کہ بچے خوراک نہ ہونے کی وجہ سے مر رہے ہیں۔ وہ ہسپتال نہیں جا سکتے۔

مظاہرین نے میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وہ اپنے رشتہ داروں سے کشمیر میںرابط نہیں کر سکتے۔

کشمیر سے تعلق رکھنے والی یونیورسٹی آف ٹورنٹو کی طالبہ ثناءوانی کے مطابق کہ جب وہ موبائل اور انٹرنیٹ سروس بند کی گئیں تو وہ سالانہ چھٹیوں پر کشمیر گئی ہوئی تھیں۔

وانی نے سی بی سی کینیڈا کو بتایا کہ ” ہفتہ کی رات ہم یہ سوچ کر سو گئے تھے کہ شاید کچھ نہیں ہوگا ، پھر اتوار کی رات میں ہی بلیک آوٹ شروع ہوا۔ انٹرنیٹ سروس بند ہو گئی ، فون لائن کاٹ دی گئی ، میرے والد بہت پریشان تھے۔” وانی بدھ کے روز کینیڈا واپس آئی۔

یاد رہے کہ مقبوضہ کشمیر میں گذشتہ دو ہفتو ں سے مسلسل کرفیو نافذ ہے۔ ادویات اور بچوں کی خوراک کی شدید کمی ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.