fbpx

چین کا ایغورمسلمانوں کی واپسی کے لیے پاکستان پردباو بڑھنے لگا

پشاور:چین کا ایغورمسلمانوں کی واپسی کے لیے پاکستان پردباو بڑھنے لگا،اطلاعات کے مطابق چین نے پاکستان پردباوڈال رکھا ہےکہ وہ چین سے غیرقانونی ہجرت کرنے والیے ایغورمسلمانوں کوواپس چین بھیج دے

اس حوالے سے ایشیاٹائمز نے دعویٰ کیا ہے کہ چینی صوبے سنکیانگ سے پاکستان ہجرت کرکے آنے والوں کے حوالے سے چین کو بہت سےخدشات لاحق ہیں‌

اس حوالے سے پاکستانی حکام کی طرف سے اس قسم کی خبریں پھیلنا شروع ہوگئی ہیں کہ چین ایغورمسلمانوں کودشمن کے ہاتھوں استعمال ہونے کے حوالے سے پریشان ہے

یہ بھی معلوم ہو اہے کہ چین نے پاکستان پرواضح کردیا ہے کہ پاکستان میں موجود ایغورمسلمان وہ مشرقی ترکستان کی آزادانہ تحریک (ای ٹی آئی ایم) میں شامل ہوسکتے ہیں ، جو سنکیانگ میں آزاد ریاست کی تشکیل کا خواہاں ہے

 

 

چین کویہ بھی خدشہ ہے کہ امریکہ اوریورپ ان ایغورمسلمانوں‌کے چین کے خلاف استعمال کرکے چین کی سلامتی کونقصان پہنچا سکتے ہیں‌

پاکستان کی وزارت داخلہ کے ذرائع نے ایشیاء ٹائمز کو بتایا ہے کہ حال ہی میں 2،000 سے زیادہ ایغور خاندان غیر قانونی طور پر پاکستان داخل ہوئے ہیں ، جس کی زیادہ تر وجہ چینی ریاست کے جبر کی ہے۔ مغربی ناقدین نے کہا ہے کہ چین نے 10 لاکھ سے زیادہ ایغوروں کو نام نہاد "پیشہ ور” کیمپوں میں رکھا ہے۔

حکام کے مطابق اس صورت حال نے پاکستان کوبہت مشکل میں ڈال رکھا ہے حالیہ آمد سے قبل وزارت داخلہ کے ذرائع کا کہنا ہے کہ 1950 سے اب تک لگ بھگ 2 ہزار ایغور خاندان پاکستان میں مقیم ہیں ، زیادہ تر وسطی پنجاب اور ملک کے شمالی حصوں میں کاروبار کررہے ہیں۔

امیگریشن کے ایک سینیئر اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی درخواست کرتے ہوئے ایشیاء ٹائمز کو بتایا کہ حال ہی میں سکیورٹی ایجنسیوں اور پولیس کے ذریعہ بیجنگ کے "بے حد دباؤ” کے جواب میں نئے ایغور پناہ گزینوں کو ملک بدر کرنے کے لئے ان کی حفاظت کے لئے اعلی حکام کو تعینات کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا ، "حکام نے یہ جاننے کے لئے کہ پاکستان میں بسنے والے تمام ایغوروں کے بایومیٹرک ڈیٹا اکٹھا کرنا شروع کر دیا ہے ،”

اسی ذریعہ نے کہا کہ چین نے ترک نژاد گروہ کے لئے امیگریشن کے عمل کو پیچیدہ کردیا ہے ، جن کے چینی پاسپورٹ ضبط کردیئے گئے ہیں یا تجدید شدہ نہیں ہیں تاکہ ان کے لئے بیرون ملک سفر کرنا مشکل ہوجائے۔

انہوں نے بتایا کہ سکریٹری داخلہ کے ماتحت ایک خودمختار ایجنسی نیشنل ڈیٹا بیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) نے حال ہی میں ایغور گھرانوں کی "مذہبی وابستگی اور خاندانی تاریخ” کے بارے میں معلومات اکٹھا کرنے کے لئے ایک سروے کا فارم تقسیم کرنا شروع کردیا ہے تاکہ سنکیانگ سے نئے آنے والے والوں کی شناخت ہوسکے

حال ہی میں چین سے فرار ہونے والے بیشتر ایغوروں نے اپنی شناخت چھپا رکھی ہے اور سرکاری شناخت سے بچنے کے لئے ملک کے گنجان آباد شہری علاقوں میں خفیہ مقامات پر آباد ہوگئے ہیں۔

ایغور برادری کے ممبران جنہوں نے پہلے پاکستان ہجرت کی تھی اور شہریت حاصل کی تھی ، نے مبینہ طور پر انہیں بڑی حد تک تصفیہ کرنے میں مدد کی ہے۔

پاکستان نے ایغور مہاجروں کو شہری کا درجہ دیا ہے جن کے آبا و اجداد 60 اور 70 کی دہائی کے آخر میں پاکستان منتقل ہوگئے تھے۔ وہ اب بین شادیوں کے ذریعہ پاکستانی معاشرے میں مکمل طور پر ضم ہوچکے ہیں ، روانی سے اردو بولتے ہیں اور روایتی پاکستانی لباس پہنتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بیجنگ کے اسلام آباد پر بڑھتے ہوئے اثر و رسوخ نے پولیس اور سکیورٹی ایجنسیوں کی زیادہ سے زیادہ نگرانی ، جانچ پڑتال اور ہراساں کرنے کے ذریعہ ایغور تارکین وطن کے لئے معاملات کو مشکل بنا دیا ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.