گورنر خیبر پختونخوا کا وزیراعلیٰ کو خط

اکیڈمک چیلنجز سے زیر تعلیم طلبہ کا مستقبل خطرے میں پڑ گیا ہے۔
0
137

پشاور: گورنر خیبر پختونخوا فیصل کریم کنڈی نے وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا علی امین گنڈا پور کو خط لکھا،خط میں وزیراعلیٰ کی صوبے کی 25 پبلک سیکٹر یونیورسٹیوں میں وائس چانسلرز کی عدم تعیناتی کے سنجیدہ مسئلے پر بات کی گئی ہے ۔

گورنر خیبر پختونخوا فیصل کریم کنڈی کا منصب سنبھالنے کے بعد وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا علی امین گنڈا پور کو لکھا جانے والا پہلا خط ہے،خط کے متن میں کہا گیا ہے کہ وائس چانسلرز کی تقرریوں میں تاخیر سے پبلک سیکٹر یونیورسٹیوں کو مالی و انتظامی مسائل کا سامنا ہے اکیڈمک چیلنجز سے زیر تعلیم طلبہ کا مستقبل خطرے میں پڑ گیا ہے۔

خط میں خیبرپختونخوا پبلک سیکٹر یونیورسٹیز ایکٹ 2012 کے سیکشن 12 (3) کا حوالہ دیا گیا ہے جس کے مطابق وائس چانسلرز کی تقرریوں کا عمل حاضر سروس وائس چانسلرز کی مدت مکمل ہونے سے چھ ماہ قبل شروع کرنے کا کہتا ہے، اکیڈمک سرچ کمیٹی نے وائس چانسلرز کی تقرریوں کی سفارشات صوبائی حکومت کو ارسال کیں جس کی منظوری کا عمل ابھی تک نہیں ہو سکا۔

پی ٹی آئی کے روپوش رہنماحماد اظہر تقریباً ایک سال بعد منظرعام پر آگئے

خط میں پشاور ہائی کورٹ نے حالیہ دائر رٹ پٹیشن کے مختصر فیصلے کا حوالہ بھی موجود ہے کہ یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی بنوں بغیر مستقل وائس چانسلر، رجسٹرار کے چل رہی ہے، پرو وائس چانسلر طویل مدت سے کام کر رہا ہے،مستقل وائس چانسلر کی تعیناتی کیلئے سنجیدہ کوششیں نہیں کی گئیں صوبے کی پبلک سیکٹر یونیورسٹیوں کے مالی و انتظامی اور اکیڈمک بحران کے حل کیلئے ہمیں متحد ہو کر کام کرنیکی ضرورت ہے،صوبہ میں اعلیٰ تعلیم کے مستقبل کے ساتھ پشاور ہائی کورٹ کے سامنے بھی اظہار ناراضگی سے دوچار ہوں گے جس کے لئے وزیر اعلی سے تعاون کی مخلصانہ تعاون درکار ہے ۔

سسیلین مافیا،گاڈ فادر اور پراکسی جیسے الفاظ کہیں گے تو کون برداشت کرے گا،طلال چودھری

Leave a reply