آئی ایم ایف نے پاکستان کو جنگ زدہ ممالک میں شامل کر لیا

0
100
imf

آئی ایم ایف نے پاکستان کو دنیا کے چھ جنگ زدہ ممالک کی فہرست میں شامل کر دیا ہے جو شدید معاشی دباؤ کا شکار ہیں پاکستان کو عراق، صومالیہ، سوڈان، شام اور یمن کے ساتھ کھڑا کر دیا گیا ہے اور کہا ہے کہ تنازعات اور سخت میکرو اکنامک پالیسی حالات ان کی معاشی پیداوار پر اثر انداز ہوں گے

نجی اخبار میں شائع ہونے والی رپورٹ کے مطابق وزیر خزانہ محمد اورنگزیب نے بدھ کوواشنگٹن میں آئی ایم ایف کی منیجنگ ڈائریکٹر کرسٹالینا جارجیوا سے ملاقات کی، وفاقی وزیر خزانہ نے ایک اور طویل المدتی بیل آؤٹ پیکج کے حصول میں پاکستان کی دلچسپی ظاہر کی، وزارت خزانہ نے اس ملاقات کے بارے میں خاموشی اختیار کر رکھی ہے تاہم آئی ایم ایف کے مشرق وسطیٰ اور وسطی ایشیا کے ڈائریکٹر جہاد ازور نے بعد میں صحافیوں کو بتایا کہ آئی ایم ایف پاکستان کی مدد کرنے کے لیے تیار ہے اور اس بات پر زور دیا کہ اصلاحات کا پیکیج اب نئے پروگرام کے حجم سے زیادہ اہم ہے

آئی ایم ایف 2024 کے موسم بہار کے اجلاس کے موقع پر ایک پریس کانفرنس کرتے ہوئے ازور نے کہا تھا کہ میرے خیال میں اس مرحلے پر جو چیز اہم ہے وہ اصلاحات کو تیز کرنا ہے، اصلاحات کے ڈھانچے کو دوگنا کرنا ہے تاکہ پاکستان کو ترقی کی مکمل صلاحیت فراہم کی جا سکے، مشرق وسطیٰ اور وسطی ایشیا کے خطے سے متعلق اپنی رپورٹ میں آئی ایم ایف نے کہا تھا کہ خطے کے لیے 2024 کے لیے معاشی پیش گوئی پر نظر ثانی کی گئی ہے کیونکہ تنازعات، کچھ معیشتوں میں سخت پالیسی ترتیب اور ہائیڈرو کاربن کی کم پیداوار کی وجہ سے شرح نمو پر اثر پڑ رہا ہے،مغربی کنارے اور غزہ کے علاوہ مینا "مشرق وسطیٰ اور شمالی افریقہ” اور پاکستان کی 6 معیشتوں کو 2024 کے آغاز میں تنازعات کا سامنا کرنا پڑا، یہ عراق، پاکستان، صومالیہ، سوڈان، شام اور یمن ہیں ورلڈ بینک اور آئی ایم ایف کے موسم بہار کے اجلاسوں کے موقع پر جاری ہونے والی رپورٹ میں کہا گیا ہے ،پاکستان کو ان ممالک کے ساتھ جوڑنا جو خانہ جنگی سمیت سنگین تنازعات کا سامنا کر رہے ہیں، ملک کے عالمی امیج کے لیے اچھا نہیں ہوسکتا ہے اور سرمایہ کاری میں رکاوٹ بن سکتا ہے، اس سے وزارتِ خزانہ کی جانب سے آئی ایم ایف کے معاملات کو ناقص طریقے سے سنبھالنے کا پتا چلتا ہے۔

آئی ایم ایف نے رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اگر یکم جنوری 2024 سے 8 مارچ 2024 کے درمیان مسلح تنازعات کے مقام اور ایونٹ ڈیٹا پروجیکٹ کے ذریعے جنگ سے متعلق کم از کم 25 ہلاکتیں ریکارڈ کی گئیں تو کسی ملک کو جنگ میں سمجھا جاتا ہے،پاکستان میں سول اور مسلح افواج پر دہشت گرد حملوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے جس میں چینی شہریوں پر مہلک حملہ بھی شامل ہے جس کے نتیجے میں گزشتہ ماہ 5 چینی شہری ہلاک ہوئے تھے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ غزہ اور اسرائیل کے تنازع نے پہلے سے ہی چیلنجنگ ماحول کو مزید خراب کر دیا ہے اور بحیرہ احمر کے ذریعے جہاز رانی میں رکاوٹوں نے غیر یقینی صورتحال میں اضافہ کر دیا ہے۔ تاہم رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ تیل کی پیداوار میں کٹوتی اور تنازعات کے اثرات آہستہ آہستہ کم ہوتے جا رہے ہیں جبکہ درمیانی مدت میں یہ تاریخی اوسط سے نیچے رہیں گے،رپورٹ میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ مسلح تنازعات، ہائیڈرو کاربن پر انحصار اور مسلسل ساختی چیلنجز کے پس منظر میں خطے اور پاکستان کے لیے معاشی نمو کا نقطہ نظر غیر مساوی بحالی کی علامت ہے۔ 2023 میں سکڑنے کے بعد 2024 میں پاکستان کی شرح نمو 2 فیصد تک پہنچنے کا امکان ہے جس سے زراعت اور ٹیکسٹائل کے شعبوں میں مسلسل مثبت بنیادی اثرات سامنے آئیں گے۔

پاکستان کی آبادی میں اضافے کی شرح 2.6 فیصد تھی اور 2 فیصد کی کم شرح نمو کا مطلب ملک میں مزید بے روزگاری اور غربت تھی جو افراط زر کی مسلسل لہر سے سب سے زیادہ متاثر ہوا تھا۔ سخت معاشی حالات کے باوجود، آئی ایم ایف نے ایک بار پھر پاکستان کو مشورہ دیا کہ وہ اپنی مانیٹری پالیسی کو سخت رکھے – ایک ایسی پالیسی جس نے پہلے ہی صنعتی پیداوار اور حکومت کے بجٹ پر بھاری اثر ڈالا تھاجہاں افراط زر کا دباؤ برقرار رہتا ہے، وہاں مانیٹری پالیسی کو سخت رہنا چاہئے اور مصر، قازقستان، پاکستان، تیونس، ازبکستان کی طرح اعداد و شمار پر منحصر نقطہ نظر پر عمل کرنا چاہیے، جبکہ افراط زر کی تبدیلی کے خطرات کا قریب سے جائزہ لینا چاہیے،پاکستان میں افراط زر کی شرح مارچ میں کم ہو کر 20.7 فیصد رہ گئی جس کے بارے میں تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اس سے شرح سود میں کمی کی گنجائش پیدا ہو گئی ہے۔ تاہم آئی ایم ایف نے پھر بھی احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کا مشورہ دیا ہے۔ عالمی قرض دہندہ نے کہا کہ اگر افراط زر توقع سے زیادہ تیزی سے کم ہوتا ہے تو ممالک کو احتیاط سے پیش رفت پر نظر رکھنی چاہیے اور اگر حالات سازگار ہوتے ہیں تو جلد ہی مانیٹری پالیسی میں نرمی کے لیے تیار رہنا چاہیے۔

ورلڈ اکنامک آؤٹ لک رپورٹ میں آئی ایم ایف نے رواں مالی سال کے لیے پاکستان کی افراط زر کی شرح 24.8 فیصد اور آئندہ مالی سال کے لیے 12.7 فیصد رہنے کی پیش گوئی کی ہے۔ بیرونی شعبے میں استحکام حاصل کرنے کے حکومتی دعوے کے برعکس آئی ایم ایف نے کہا کہ پاکستان کے بیرونی شعبے کے بفرز خراب ہو چکے ہیں،آئی ایم ایف کا کہنا ہے کہ پاکستان کے بیرونی بفرز میں کمی آئی ہے جس سے زیادہ تر یورو بانڈ کی ادائیگیوں سمیت جاری قرضوں کی ادائیگی کی عکاسی ہوتی ہے۔ رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ بہت سے ممالک کا کریڈٹ رسک گزشتہ سال کے دوران کم ہوا ہے اور یہ 2023 کے اوائل کی سطح کے قریب ہے لیکن وہ لبنان، پاکستان اور تیونس کے لیے پریشان کن سطح ایک ہزار بنیادی پوائنٹس سے زیادہ پر ہیں،عالمی قرض دہندہ کا کہنا ہے کہ مقامی فنانسنگ پر مسلسل انحصار سے خود مختار بینکوں کے گٹھ جوڑ میں مزید اضافہ ہونے کا خطرہ ہے کیونکہ مصر اور پاکستان میں خود مختار قرضوں میں بینکوں کا پہلے ہی زیادہ حصہ ہے،ورلڈ بینک کی رپورٹ کے مطابق بینکوں نے اپنی بیلنس شیٹ کا اوسطا تین چوتھائی حصہ سرکاری قرضوں میں لگایا ہے۔ زیادہ قرضوں کی ضروریات میں کوئی کمی نہیں ہوسکتی ہے ، کیونکہ آئی ایم ایف نے بھی اگلے مالی سال کے لیے جی ڈی پی بجٹ خسارے کا 7.3 فیصد پیش گوئی کی تھی،گزشتہ 4 دن سے امریکی ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر ایک بار پھر گرنے لگی تھی، حالانکہ اس کی رفتار سست تھی۔ واشنگٹن میں بلومبرگ کو دیے گئے ایک انٹرویو میں وزیر خزانہ محمد اورنگزیب نے کہا کہ روپے کی قدر میں 6 سے 8 فیصد کی حد سے زیادہ کمی کی کوئی وجہ نہیں ہونی چاہیے

صحافی و اینکر حامد میر نے ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ اہل وطن کسی دھوکے میں نہ رہیں آئی ایم ایف نے پاکستان کو دنیا کے ان چھ جنگ زدہ ممالک کی فہرست میں شامل کر دیا ہے جو شدید معاشی دباؤ کا شکار ہیں پاکستان کو عراق، صومالیہ، سوڈان، شام اور یمن کے ساتھ کھڑا کر دیا گیا ہے یہ صورتحال تقاضا کرتی ہے کہ ہمارے امیر حکمران اپنے خرچے کم کریں

 

Leave a reply