جنگ عظیم دوم میں غرق ہونیوالے جاپانی بحری جہاز کا ملبہ 81 سال بعد مل گیا

0
72

جنگ عظیم دوم کے دوران غرق ہونے والے جاپانی بحری جہاز کا ملبہ 81 سال بعد ساؤتھ چائنا سمندر سے مل گیا ہے۔

باغی ٹی وی: "سی این این” کے مطابق ایک جاپانی تجارتی بحری جہاز جو دوسری جنگ عظیم کے دوران 1000 جنگی قیدیوں کو لے کر ڈوب گیا تھا آسٹریلیا کے سمندر میں سب سے زیادہ جانی نقصان ہوا تھا۔

پائلٹ نے خاتون دوست کیلئے کاک پٹ کوبنایا کمرہ، شراب کا بندوبست کرنے کا بھی …

آسٹریلیا کے وزیر دفاع رچرڈ مارلس نے کہا ہے کہ ’ایس ایس مونٹی ویڈیو مارو‘ نامی بحری جہاز میں 864 آسٹریلوی فوجی سوار تھے، ان فوجیوں کو جنگ کے دوران جاپان نے قیدی بنا لیا تھاجولائی 1942 میں جہاز نے فلپائن کے ساحل سے سفر شروع کیا تھا جو لاپتہ ہوگیا تھا، اب اس کا ملبہ جزیرہ لوزون کے قریب سے برآمد کرلیا گیا ہے۔

اس بحری جہاز کو امریکی آبدوز نے نشانہ بنایا تھا، آبدوز کو ریڈار پر معلوم ہوا کہ یہ جاپانی بحریہ کا جہاز ہے لیکن یہ نہیں معلوم تھا کہ اس پر آسٹریلیا کی فوج کے قیدی بنائے گئے اہلکار سوار ہیں۔

مونٹیویڈیو مارو کو فلپائن کے جزیرے لوزون کے شمال مغربی ساحل سے بحیرہ جنوبی چین میں 4,000 میٹر (13,000 فٹ) سے زیادہ کی گہرائی میں دریافت کیا گیا تھا، آسٹریلیا کے نائب وزیر اعظم رچرڈ مارلس نے ہفتے کے روز اپنے ٹوئٹر پر پوسٹ کی گئی ایک ویڈیو میں تصدیق کی ہے۔

بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کو ملی خود کش حملے کی دھمکی

آسٹریلوی حکومت کا کہنا ہے کہ محکمہ دفاع کی مالی معاونت سے ایک تنظیم نے جہاز کا ملبہ 13 ہزار 123 فٹ نیچے سے برآمد کیااس جہاز میں ایک ہزار سے زائد جنگی قیدی اور مختلف ممالک کے شہری سوار تھے اس دریافت سےآسٹریلیا کی سمندری تاریخ کے سب سے المناک بابوں میں سے ایک” کا خاتمہ ہوا۔

یہ جہاز تقریباً 16 ممالک سے تقریباً 1,060 قیدیوں کو لے جا رہا تھا، جن میں 850 آسٹریلوی سروس ممبران بھی شامل تھے، سابق آسٹریلوی علاقے نیو گنی سے اس وقت جاپان کے زیر قبضہ جزیرہ ہینان تک کیا جا رہا تھا جب ایک امریکی آبدوز نے ٹارپیڈو کر کے جہاز کو ڈبو دیا تھا۔ یکم جولائی 1942 کو جنگی قیدیوں کی نقل و حمل کے طور پر نشان زد کیا گیا۔

بھارت کا G-20 اجلاس کی ممکنہ ناکامی کا ملبہ پاکستان پر ڈالنے کی ناکام کوشش

Leave a reply