کائنات کے دو بڑے معموں کا مشاہدہ کرنے یوکلیڈ ٹیلی سکوپ روانہ

یوکلیڈ کائنات کا وسیع ترین نقشہ مرتب کرے گا
0
40
scop

یورپ نے اپنا خلائی ٹیلی اسکوپ ”یوکلیڈ“ روانہ کردیا ۔

باغی ٹی وی : ایک یورپی خلائی دوربین فلوریڈا سے سائنس کے سب سے بڑے سوالوں میں سے ایک کو حل کرنے کی جستجو پر روانہ ہوئی ہے یوکلیڈ ٹیلی اسکوپ اسپیس ایکس کے فیلکن نائن راکٹ کے ذریعے کیپ کارنیول اسپیس فورس اسٹیشن سے امریکی وقت کے مطابق 11 بج کر 12 منٹ پر روانہ ہوا اور خلا سے اس کا پہلا سگنل 11 بج کر 57 منٹ پر موصول ہوا،یہ ٹیلی اسکوپ مدار میں پہنچنے کے بعد دو ماہ تک اپنے آلات کو ٹیسٹ کرے گا، جن میں ایک عام روشنی میں کام کرنے والا کیمرہ اور ایک قریبی انفرا ریڈ کیمرہ (اسپیکٹو میٹر) شامل ہیں۔


اس دوربین کا مقصد کائنات کے دو بڑے معموں ڈارک انرجی (تاریکی توانائی) اور ڈارک میٹر (تاریک مادے) کا مشاہدہ کرنا ہے ڈارک میٹر کی اگرچہ کبھی بھی نشاندہی نہیں ہوپائی،محققین تسلیم کرتے ہیں، تاہم، وہ ان کے بارے میں عملی طور پر کچھ نہیں جانتے ہیں نہ ہی تاریک مادے اور نہ ہی تاریک توانائی کا براہ راست پتہ لگایا جا سکتا ہے لیکن ان کو یقین ہے کہ یہ کائنات کے مجموعی مادے کا تقریباً 85 فیصد ہے ڈارک انرجی ایک ایسی پراسرار توانائی ہے جو کائنات کی توسیع کی رفتار بڑھانے میں کردار ادا کر رہی ہے۔

دنیا بھر میں ٹوئٹر کی سروس ڈاؤن

پروفیسر اسوبل ہک نے کہا کہ علم میں اس بڑے خلاء کا مطلب یہ ہے کہ ہم واقعی اپنی اصلیت کی وضاحت نہیں کر سکتے برطانیہ کی لنکاسٹر یونیورسٹی کے ماہر فلکیات کا خیال ہے کہ افہام و تفہیم کی راہ پر گامزن ہونے کے لیے یوکلڈ کی بصیرت ہماری بہترین شرط ہوگی۔


"یہ ایک جہاز پر روانہ ہونے کے مترادف ہو گا اس سے پہلے کہ لوگوں کو معلوم ہو کہ زمین مختلف سمتوں میں کہاں ہے۔ ہم کائنات کا نقشہ بنا کر یہ سمجھنے کی کوشش کریں گے کہ ہم اس میں کہاں فٹ ہیں اور ہم یہاں کیسے پہنچے ہیں – پوری کائنات کیسے ملی۔ بگ بینگ کے نقطہ سے لے کر خوبصورت کہکشاؤں تک جو ہم اپنے ارد گرد دیکھتے ہیں، نظام شمسی اور زندگی تک-

1920 میں ماہرین فلکیات جارجز لیمائتغے اور ایڈون ہبل نے کہا تھا کہ کائنات 13.8 سال قبل اپنے پیدائش کے وقت سے پھیل رہی ہےلیکن 1990 میں یہ دریافت ہوا تھا کہ تقریباً 6 ارب سال قبل کچھ ایسا ہوا جس کی وجہ سے کائنات کے پھیلنے کی رفتار میں زبردست اضافہ ہوگیا۔

پاکستان اور سعودی عرب کے درمیان ایک عظیم رشتہ ہے،صدر مملکت

یوکلیڈ کو اس طرح ڈیزائن کیا گیا ہےکہ وہ کائنات کا تھری ڈائمنشنل نقشہ تیارکرسکے اور10 لاکھ نوری سال کی دوری تک اربوں کہکشائوں کا مطالعہ کرکے پتہ چلاسکے کہ مادہ کیسے پھیلا اور اس میں تاریک توانائی کا کیا کردار رہا اور 10 ارب سال میں کائنات کیسے ارتقاء پذیر رہی۔

دو ماہ کے خلائی سفر کے بعد یوکلیڈ ساتھی ٹیلی اسکوپ جیمز ویب کے ساتھ مل جائے گا جو زمین سے 15 لاکھ کلومیٹر کے فاصلے پر گردش کر رہا ہے، جو دوسرا لاک شیڈ پوائنٹ کہلاتا ہے یوکلیڈ کائنات کا وسیع ترین نقشہ مرتب کرے گا جس میں دو ارب گلیکسیز کا احاطہ کیا جائے گا، جو آسمان کے ایک تہائی سےزائد ہے اس تھری ڈی نقشے سے کائنات کی ایک کروڑ 38 لاکھ ارب سال قدیم تاریخ پر روشنی ڈالنے میں بھی مدد ملے گی-

وزیراعظم شہباز شریف مری پہنچ گئے

Leave a reply