معروف بنگالی مختصر افسانہ نگار، ناول نگار اور ادیبہ پرتیبھا باسو

0
227

پرتیبھا باسو( پیدائش:13 مارچ 1915ء،وفات: 13 اکتوبر 2006ء) معروف بنگالی مختصر افسانہ نگار، ناول نگار اور ادیب ہیں جن کا حلقۂ قارئین نہ صرف بہت وسیع ہے بلکہ ادبی حلقوں میں انھیں قابلِ احترام سمجھاجاتا ہے۔

حالاتِ زندگی
۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ڈھاکا کے نزدک ایک گاؤں میں آسوتوش شوم اور سرجوبالا شوم کے گھر پیدا ہوئیں تھیں۔ بنگالی مصنف بدھا دیب باسو سے شادی سے پہلے وہ رانو شوم کے نام سے مشہور تھیں۔ اس کی دو بیٹیاں ہیں میناکشی دتا اور دماینتی باسو سنگھ اور ایک بیٹا سدھاسیل بوس جو 42 سال کی عمر میں انتقال کرگیا۔ ان کی ایک پوتی کنکابتی دتا بھی بنگالی زبان میں ایک معروف ادیبہ ہے۔

پرتیبھا بوس مقبول گانوں کی معروف گلوکارہ بھی تھیں۔ ممتاز بنگالی شاعر نذر الاسلام، گلوکار دلیپ کمار رائے اوررابندر ناتھ ٹیگور نے ان کی گلوکاری کی تعریف کی بلکہ اپنے کلام ان کو پڑھنے کے لیے بلکہ اس سلسلے میں ان کی تربیت بھی کی۔

انھوں نے 12 سال کی عمر میں پہلی ایل پی بنائی اور 1940 کی دہائی تک یہ سلسلہ جاری رہا۔ انھوں نے جب گلوکاری ترک کی،تبھی سے لکھنا شروع کیا۔

پرتیبھا باسو کی تقریباً 200 شائع ہوئیں جو تجارتی لحاظ سے بہت کامیاب رہی ہیں۔ مونولینا ان کا پہلا ناول تھا جو 1940 میں شائع ہوا تھا۔ ان کے متعدد ناول پر کامیاب فلمیں بنائی جاچکی ہیں۔

انھیں جانوروں سے بے پناہ عشق تھا۔ 1972ء میں انھیں پاگل کتوں کے خلاف مہم کے دوران ایک پاگل کتے کو بچاتے ہوئےگولی لگی تھی اور وہ معذور ہوگئی تھیں۔

ایوارڈ اور اعزاز
۔۔۔۔۔۔۔۔
بنگالی زبان اور ادب میں ان کی خدمات کے لیے انہیں کلکتہ یونیورسٹی سے بھوبونو موہنی گولڈ مڈل اور آند پرسکار سے سرافراز کیا گیا۔

Leave a reply