پابندیوں کے باوجود پاکستان روس سے تیل خرید سکتا ہے. امریکہ

0
31

پابندیوں کے باوجود پاکستان روس سے تیل خرید سکتا ہے. امریکہ

امریکا کے دارالحکومت واشنگٹن ڈی سی میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے امریکا کے محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس کا کہنا تھا کہ روسی پیٹرولیم مصنوعات پر پرائس کیپ (قیمتوں کی حد) پر دستخط نہ کرنے کے باوجود پاکستان روس سے رعایتی نرخوں پر تیل خرید سکتا ہے۔

نیڈ پرائس نے کہا کہ پاکستان ان رعایت سے بھی فائدہ اٹھا سکتا ہے، جو امریکا نے دیگر ممالک کو روس سے تیل خریدنے کے لیے دی ہیں۔ نیڈ پرائس نے مزید کہا کہ ہم نے مختلف ممالک کو اس سے فائدہ اٹھانے کی ترغیب دی ہے، حتیٰ کہ ان ممالک کو بھی جنہوں نے قیمتوں کی حد (پرائس کیپ) پر باضابطہ طور پر دستخط نہیں کیے تاکہ وہ دوسرے ممالک کے بجائے بعض صورتوں میں روس سے بڑی رعایت پر تیل خرید سکیں۔ نیڈ پرائس نے کہا کہ امریکا نے جی 7 سمیت دیگر ممالک کے ساتھ مل کر روس سے تیل کی خریداری کے بارے میں (قیمت کی حد پر) پرائس کیپ کا طریقہ کار اپنایا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ پرائس کیپ کا فائدہ یہ ہوگا کہ اس سے روس کو ریونیو سے محروم رکھنے کے باوجود توانائی کی منڈیوں کو وسائل حاصل ہوں گے جبکہ روس کو یوکرین کے خلاف جنگ جاری رکھنے کے لیے تیل سے ہونے والی آمدن کی ضرورت ہو گی۔ ہم نے جان بوجھ کر روسی تیل پر پابندی عائد نہیں کی بلکہ اب یہ پرائس کیپ کا معاملہ ہے، امریکا واضح طور پر کہہ چکا ہے کہ یہ وقت روس کے ساتھ اقتصادی سرگرمیاں بڑھانے کا نہیں ہے۔ ہمارا ماننا ہے کہ توانائی کی عالمی منڈیوں میں وسائل کی موجودگی اور انہیں اچھی طرح سپلائی کرنے ضرورت ہے اور ہم یہ بھی سمجھتے ہیں کہ پرائس کیپ ان مقاصد کے حصول کے لیے طریقہ کار فراہم کرتا ہے۔
مزید یہ بھی پڑھیں؛
قابل اعتراض مواد جو ہٹا سکتے تھے ہٹا دیا،بیرون ملک مواد کیلئے متعلقہ حکام سے رجوع کیا ہے،پی ٹی اے
نگراں کابینہ غیرسیاسی اور غیر جانبدارہوگی، شوکت یوسفزئی
واضح رہے کہ 3 دسمبر 2022 کو جی 7اور یوپی یونین کے ممالک نے روسی تیل کی فی بیرل کیپ 60 ڈالر مقرر کی تھی، تاکہ ماسکو کو اس سے حاصل ہونے والی آمدنی کو یوکرین کے خلاف جنگ میں استعمال کرنے سے روکا جاسکے، جب کہ رواں ماہ روس کا اعلیٰ سطح کے وفد نے پاکستان کا دورہ بھی کیا ہے۔ دورے کے دوران روسی وفد نے پاکستان کو سستے داموں تیل اور گیس فراہمی پر اتفاق کیا، بلکہ ساتھ ہی پاکستان کومقامی سطح پر توانائی ذخائر کی تلاش میں جدید معاونت بھی فراہم کرنے کا یقین دلایا۔ حکام کے مطابق پاکستان اپنی ضرورت کیلئے خام تیل کا ایک تہائی حصہ جبکہ تیار ڈیزل اور پیٹرول 50 فیصد روس سے خریدنے کا خواہاں ہے، پاکستان کو عالمی مارکیٹ کے مقابلے میں روس سے 30 تا 40 فیصد سستا خام تیل ملے گا۔

Leave a reply