اسٹرابیری کی شکل کی عجیب وغریب سمندری مخلوق دریافت

یہ سمندری مخلوق برگنڈی یا گہرے سرخ رنگ کی ہو سکتی ہے
0
46
science

امریکا اور آسٹریلیا کے سائنسدانوں نے انٹارکٹیکا کے سمندر کی گہرائی میں ایک خوفناک اورعجیب وغریب سمندری مخلوق دریافت کی ہے جو اسٹرابیری کی شکل سے مشابہت رکھتی ہے-

باغی ٹی وی : ایملی میک لافلن، نیریڈا ولسن اور گریگ راؤس نے گزشتہ ماہ جرنل Invertebrate Systematics میں نئی ​​پائی جانے والی انواع کے بارے میں اپنے نتائج شائع کیے تھے،اس مخلوق کا سائنسی نام (Promachocrinus fragarius) رلکھا گیا ہے،(Fragarius) نام لاطینی لفظ (fragum) سے ماخوذ ہے جس کا مطلب اسٹرابیری ہے جسے محققین نے انٹارکٹک اوقیانوس سے گزرتے ہوئے 2008 اور 2017 کے درمیان دریافت کیا-

سائنسدانوں نے سوشل میڈیا پر اس عجیب وغریب دریافت کی تصاویر بھی شیئر کیں ہیں۔ جنہیں دیکھ کر کا اندازہ لگانا مشکل ہے کہ یہ ایک جاندار مخلوق ہے،مجموعی طور پر، سائنس دان Promachocrinus کے نام سے سات نئی انواع کی شناخت کرنے میں کامیاب رہے، جس سے انٹارکٹک کی ایسی انواع کی تعداد ایک سے آٹھ ہو گئی،ان میں ایک نئی نسل تھی جسے انہوں نے انٹارکٹک اسٹرابیری فیدر اسٹار کا نام دیا کیونکہ "اس کی شکل (اس کے جسم) کی اسٹرابیری سے مشابہت” تھی-

ایرانی شہزادی نے امریکی شہری سے منگنی کرلی

تحقیق کے مطابق انٹارکٹک اسٹرابیری فیدر اسٹار سطح سے 65 سے 1170 میٹر نیچے پائی جا سکتی ہے یہ سمندری مخلوق برگنڈی یا گہرے سرخ رنگ کی ہو سکتی ہے،محققین نے مطالعہ میں نوٹ کیا ہے کہ انٹارکٹیکا سے تاریک ٹیکسا، یا نامعلوم پرجاتیوں کو دریافت کرنے اور شناخت کرنے میں معمول سے زیادہ وقت لگ سکتا ہے "کیونکہ نمونے لینے میں بڑی رکاوٹیں ہیں-

محققین نے کہا کہ یہ سمجھنا کہ کون سا ٹیکس واقعی خفیہ ہے اور صرف مالیکیولر ڈیٹا سے پہچانا جا سکتا ہے، اور وہ جو سیوڈکریپٹک ہیں اور ان کی شناخت ایک بار مالیکیولر فریم ورک میں کریکٹرز پر نظر ثانی کرنے کے بعد کی جا سکتی ہےحیاتیاتی تنوع کی نگرانی کے لیے ٹیکسا کی مضبوط شناخت کی ضرورت ہوتی ہے اور یہ بہت پیچیدہ ہو سکتا ہے جب ٹیکسا واقعی خفیہ ہو۔”

پاک چین دوستی اورسی پیک کوسبوتاژ کرنے کی کوئی کوشش کامیاب نہیں ہوگی،چین

محققین نے کہا کہ پروماچوکرینس کے تحت کچھ انواع کا تعین مورفولوجی، یا جانوروں اور پودوں کی ساخت اور شکل کے سائنسی مطالعہ کی بنیاد پر کیا جا سکتا ہے، لیکن "کچھ پرجاتیوں میں ابہام” باقی ہے۔

Leave a reply