بلوچ فلسفی، شاعر، مورخ، سید ظہور شاہ ہاشمی

بلوچی کے صف اول کے شعراء ، ادبا ، محققین اور مورخین کی فہرست میں شامل ہیں
0
51
poet

سید ظہور شاہ ہاشمی

بلوچ فلسفی، شاعر، مورخ

4 مارچ 1978 یوم وفات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آغا نیاز مگسی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلوچی زبان و ادب کے محسن سید ظہور شاہ ہاشمی 21 اپریل 1926 میں گوادر بلوچستان میں علم و ادب دوست شخصیت سید محمد شاہ ہاشمی کے گھر میں پیدا ہوئے ۔ انہوں نے عربی، فارسی اور انگریزی تعلیم حاصل کی ۔ وہ بلوچی کے صف اول کے شعراء ، ادبا ، محققین اور مورخین کی فہرست میں شامل ہیں ۔ وہ 1956 میں گوادر سے کراچی منتقل ہوئے یہاں ادبی و تخلیقی سرگرمیوں کے علاوہ ریڈیو پاکستان سے بھی وابستگی اختیار کی جس میں وہ بلوچی پروگرامز پیش کرتے رہے ۔ وہ علمی و ادبی تحقیق کے سلسلے میں ہندوستان اور خلیجی ممالک بھی گئے۔ سید ظہور شاہ ہاشمی کی علمی و ادبی خدمات کا دائرہ بہت وسیع ہے ان کی ایک درجن کے قریب کتابیں شائع ہو چکی ہیں جن میں ان کا سب سے بڑا کارنامہ بلوچی زبان کی ڈکشنری ” سید گنج” اور اردو میں ” بلوچی زبان و ادب کی تاریخ ” ہے۔ سید ظہور شاہ ہاشمی نے 1970 میں شادی کی، اولاد میں انہیں 3 بچے پیدا ہوئے۔ ان کی تصانیف میں 6 شعری مجموعے ، برتکگیں بیر، انگرء ترونگل، تراپکیں ترمپ، سسچکانی سسا، گسدوار، شکلیں شہجو جبکہ نثر میں ان کی تصانیف، سیرگند، ستکیں دستونک، بلوچی بنگیجی، بلوچی ساہگ ء راست نبسنگ، سید نمدی ، بلوچی ڈکشنری ” سید گنج” و دیگر شامل ہیں ۔

نمونے کے طور پر سید ظہور شاہ ہاشمی کا ایک بلوچی شعر

منا دلپروش نے اگاں ، دلپروش بناں
چو اگاں دل منی پرشتیں صد برء پرشتگ ات

اردو ترجمہ

مجھ سے مایوس ہو اگر میں مایوس نہیں ہوں گا
یوں اگر میں دل شکستہ ہوتا سو بار ہوتا

Leave a reply