fbpx

بھارت میں یورینیم کی تیاری،چوری اورسربازارفروخت:دنیا نوٹس لے:ورنہ کوئی سانحہ ہوسکتاہے:سینیٹرسحرکامران

اسلام آباد: دنیا بھارت میں یورینیم کی تیاری،چوری اورسربازارفروخت کا نوٹس لے:ورنہ کوئی سانحہ ہوسکتاہے:،اطلاعات کے مطابق سینیٹر سحر کامران نے اتوار کے روز کہا کہ بین الاقوامی جوہری تحفظ اور سلامتی کے اداروں کو بھارت میں غیر مجاز دستیابی ، چوری اور فروخت / یورینیم کی خریداری کے بارے میں فوری تحقیقات کرنی چاہئیں۔

سینیٹر سحر کامران نے بتایا کہ ہندوستان میں منظم نیٹ ورک کے ذریعہ یورینیم چوری اور اس کی فروخت کا دوسرا واقعہ 30 دنوں میں پکڑا گیا ہے۔

پیپلز پارٹی کے رہنما نے کہا کہ یہ ایک سنگین تشویش کی بات ہے ، کیونکہ اس سے نہ صرف این ایس جی چھوٹ حاصل کرنے والی ریاست کے ناقص اور نازک جوہری تحفظ کے ڈھانچے کو بے نقاب کیا گیا ہے ، بلکہ بین الاقوامی امن و سلامتی کو بھی شدید خطرہ لاحق ہوسکتا ہے۔

سینیٹر سحر کامران نے سوال کیا کہ "بہت سارے سوالات ہیں ، کہ کتنی بڑی مقدار میں یورینیم چوری کیا گیا اور کس مقصد کے لئے ہے ،” انہوں نے سوال کیا۔

بھارت کی ایٹمی حفاظت اور حفاظت کا ریکارڈ زیادہ متاثر کن نہیں ہے ، ماضی میں بہت سے حادثات اور سیکیورٹی سے متعلق واقعات کی اطلاع دی گئی ہے۔

پیپلزپارٹی کی سینیٹرسحر کامران نے کہا ہے کہ آئی اے ای اے اور اقوام متحدہ کے نیوکلیئر واچ ڈاگ کو ایسی سکیورٹی خرابیوں کا نوٹس لینا چاہئے اور این ایس جی کو ہندوستان کو دی جانے والی چھوٹ پر نظر ثانی کرنا ہوگی۔

پیپلزپارٹی کی سینیٹرسحر کامران ہے کہ "یورینیم اور جوہری مواد کی غیر قانونی مارکیٹنگ کے سنگین نتائج برآمد ہوسکتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ این ایس جی سے چھوٹ حاصل کرنے کے نتیجے میں ہندوستان نے بین الاقوامی یورینیم منڈی تک رسائی حاصل کرلی ہے اور اس نے یورینیم کا ایک بڑا ذخیرہ قائم کیا ہے۔

وہ مزید کہتی ہیں: "این ایس جی ممالک بھارت کو ایٹمی تحفظ کے عالمی معیار پر قائم رکھنے کے لئے کیا اقدامات کریں گے؟ اس کا براہ راست اثر بین الاقوامی امن و سلامتی پر پڑتا ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.