fbpx

یکم اگست سے قومی سولرانرجی پالیسی،وزیراعظم ہاؤس بھی سولرپر منتقل کرنیکا فیصلہ

یکم اگست سے قومی سولرانرجی پالیسی،وزیراعظم ہاؤس بھی سولرپر منتقل کرنیکا فیصلہ

وزیراعظم شہبازشریف کی زیر صدارت انرجی ٹاسک فورس کا اجلاس منعقد ہوا جس میں کہا گیا کہ سولر انرجی پالیسی اعلان یکم اگست کو کیا جائے گا.

‏انرجی ٹاسک فورس کے اجلاس میں سولراورگرین انرجی پرمنتقلی سے متعلق غورکیا گیا جس میں کہا گیا سولر انرجی پالیسی کا نفاذ مشترکہ مفادات کونسل کی منظوری سے مشروط ہوگا.

‏اس جلاس میں وزیراعظم شہبازشریف کے سولر انرجی اور گرین انرجی پر منتقلی ویژن سے متعلق فیصلہ کرتے ہوئے کہا گیا کہ وزیر اعظم ہاؤس اور وزیر اعظم آفس کو بھی شمسی توانائی پر منتقل کیا جائے گا.

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ہم نے ملک وقوم کو توانائی کے شعبہ میں خود کفیل کرنے کا عزم کیا ہے اور انشاء اللہ اس میں ہم سب کامیاب ہونگے.اجلاس میں مزید کہا گیا کہ عوام کو سستی بجلی فراہم کرنا اور ماحول دوست بجلی پیدا کرنا حکومت کی اولین ترجیح ہے.

وزیراعظم شہباز شریف کا کہنا تھا کہ آج شمسی توانائی سے متعلق اقدامات پر بریفنگ لی، حکومت سی سی آئی کی منظوری کے بعد جلد پہلی جامع سولر پالیسی دے گی، شمسی توانائی کے استعمال سے تیل کی درآمد پر بہت فرق پڑیگا،شمسی توانائی ماحول دوست توانائی فراہمی کے ساتھ بجلی کی قیمت میں کمی لائے گی،حکومت کی کوشش ہے کہ ملک کو توانائی کے شعبے میں خودکفیل بنائے ، شمسی توانائی سے پیداکی گئی بجلی سستی ہوگی،پاکستان کی پہلی جامع سولرانرجی پالیسی سامنے لارہے ہیں پالیسی کا نفاذصوبوں کی باہمی مشاورت سے ہوگا،

وزیراعظم شہباز شریف نے سولر انرجی ٹاسک فورس کی تجاویز کی تعریف کی ،وزیراعظم نے تمام صوبوں کو تجاویز سے آگاہ اوران کی رائے لینے کی ہدایت کر دی اور کہا کہ یقینی بنایا جائے کہ متبادل توانائی کے منصوبوں میں صوبوں کی ہم آہنگی ہو

گوادر،غیر قانونی ماہی گیری بارے اجلاس میں ہوا بڑا فیصلہ

 بلاول بھٹو نے گوادر میں چینی شہریوں پر دہشت گرد حملے کی مذمت کی ہے

وزیراعظم کے دورہ گوادر سے قبل چیئرمین سی پیلک اتھارٹی کا خصوصی پیغام

وزیرِ اعظم شہباز شریف نے بلوچستان بالخصوص گوادر میں بجلی کے مسائل کے حل کیلئے بڑا اقدام اٹھا لیا