لاپتہ آبدوزکی کمزورسیفٹی پرماضی میں خدشات کا اظہارکیاگیا تھا،برطانوی اخبار کا انکشاف

تفتیش کے لیے زیر آب آپریشنز کو منتقل کر دیا گیا
0
81
Titan

تین دن قبل بحر اوقیانوس کے وسط میں ٹائٹینک کی سیاحت کیلئے جانے والی گہرے سمندر میں لاپتہ ہوئی آبدوز کو ڈھونڈنے کے لئے بڑے پیمانے پر ریسکیو آپریشن جاری ہے-

باغی ٹی وی :برطانوی اخبارمرر نے انکشاف کیا ہے کہ ٹائی ٹینک کے قریب لاپتا ہونے والی آبدوز کی کمزور سیفٹی پر ماضی میں خدشات کا اظہار کیا گیا تھا میرین ٹیکنالوجسٹ سوسائٹی نے ٹائٹن کے بارے میں خدشات ظاہر کیے تھے اور کمپنی کے سی ای او کو متنبہ کیا گیا تھاکہ’ٹائٹن’ سانحے سے دو چار ہو سکتا ہے آبدوز کو آزاد انسپکٹرز سے چیک نہیں کرایا گیا تھا،کمپنی کے سابق افسر نے بھی سنگین سیفٹی خامیوں پرتوجہ دلائی تھی، افسر نے انتہائی گہرائی میں ٹائٹن کو مسافروں کے لیے شدید خطرے کا امکان ظاہر کیا تھا واضح نہیں ہوسکا اوشین گیٹ کے سی ای او نے ٹائٹن پر خدشات والے خط کا جواب دیا تھا یا نہیں۔

بی بی سی کے مطابق سونار بوائے کے علاقے میں سگنل ملنے کے بعد امید کی ایک کرن جاگی تھی کہ ٹائٹن پر سوار پانچ افراد زندہ ہیں امریکی کوسٹ گارڈ نے کہا ہے کہ تفتیش کے لیے زیر آب آپریشنز کو منتقل کر دیا گیا ہے، لیکن ابھی تک انہیں کچھ نہیں ملا ہے لیکن جمعرات کومقامی وقت کے مطابق تقریباً 11:00 بجے آکسیجن کی سپلائی ختم ہونے کی توقع ہے اگلے چند گھنٹے نازک ہیں۔

امریکی حکام کا کہنا ہے کہ کئی دکانوں کی رپورٹوں کے مطابق منگل کو تقریباً چار گھنٹے تک آدھے گھنٹے کے وقفے سے آوازیں سنی گئیں۔

بی بی سی نے گہرے سمندر کے ماہرین سے بات کی ہے کہ اعداد و شمار کو دیکھے بغیر یہ طے کرنا مشکل ہے کہ یہ شور کیا ہو سکتا ہے لیکن یہ ممکن ہے کہ وہ مختصر، تیز، نسبتاً زیادہ تعدد والی آوازیں ہو سکتی ہیں جو برتن کے اندر سے کسی سخت چیز کو نیچے کے سرے سے ٹکرانے سے بنتی ہیں۔

ٹائی ٹینک کی سیاحت کیلئےگئی لاپتہ آبدوز کی تلاش تاحال جاری

برطانوی میڈیا کے مطابق اس ریسکیو مشن میں امریکی بحری جہاز ہورائزن آرکٹک آج رات تک شریک ہو جائےگا، ریسکیو مشینری امریکی کارگو طیاروں کے ذریعے کینیڈا کے ائیرپورٹ پہنچادی گئی ہےامریکا سے آنے والے آلات میں کیبلز، زیر سمندر 19ہزار فٹ تک جانے والے آلات شامل ہیں جب کہ امریکا سے آنے والے امدادی آلات، ہورائزن آرکٹک جہازپر نصب کرکے سمندرمیں بھیجے جائیں گے، ہورائزن آرکٹک جہاز ٹائی ٹینک پوائنٹ تک 15 گھنٹے میں پہنچے گا، آکسیجن کم ہونے کے سبب اس کوشش کو ریسکیو کی آخری کوشش سمجھا جا رہا ہے، جہاز کے ٹائی ٹینک پوائنٹ پہنچنے تک آکسیجن کی سطح مزید کم ہونے کا امکان ہے۔

خبرایجنسی کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ امریکی کوسٹ گارڈز نے لاپتا آبدوز کی تلاش کے دوران زیر سمندر آوازیں سنے جانےکی تصدیق کی ہے جب کہ سرچ آپریشن میں شریک کینیڈا کے طیارے کو ٹائی ٹینک ڈوبنے کے مقام پر آبدوز موجود ہونےکے اشارے ملے ہیں۔

آسٹریلیا کے سب میرین انسٹی ٹیوٹ سے تعلق رکھنے والے فرینک اوون کا کہنا ہے کہ وہ پراعتماد ہیں دستیاب معلومات کی بنیاد پر – آوازیں جہاز کے اندر سے آ رہی ہیں انہوں نے بی بی سی کو بتایا، "اگر 30 منٹ کا وقفہ ہوتا تو اس کا انسانوں سے تعلق کے علاوہ کچھ ہونے کا امکان نہیں تھا۔”

جہاز میں سوار افراد میں 58 سالہ برطانوی تاجر ہمیش ہارڈنگ، 48 سالہ برطانوی پاکستانی تاجر شہزادہ داؤد، ان کا بیٹا 18 سالہ سلیمان اور 61 سالہ اسٹاکٹن رش شامل ہیں، جو اوشین گیٹ کے چیف ایگزیکٹو ہیں، جو کہ 250,000 ڈالر کی لاگت سے سفر کرتے ہیں۔

لیکن مسٹر اوون کا کہنا ہے کہ یہ شور جہاز میں سوار پانچویں آدمی – 77 سالہ پال ہنری نارجیولیٹ، جو فرانسیسی بحریہ کے ایک سابق غوطہ خور اور معروف ایکسپلورر تھا، کی طرف سے "مشورے کی ایک چھوٹی سی آواز” کا ہے۔

20 سال سے جل پری کا روپ دھا رکر پانیوں میں سفر کرنےوالی خاتون

مسٹر اوون نے کہا، "وہ تلاش کرنے والی فورسز کو الرٹ کرنے کی کوشش کرنے کا پروٹوکول جانتا ہو گا تلاش کو دوسری جگہ منتقل کرنے کا فیصلہ اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ حکام بھی اسی طرح سوچ رہے ہیں۔

لیکن پچھلی سمندری تلاشوں میں – جیسے کہ 2014 میں ملائیشین ایئر لائنز کی پرواز MH370، اور 2000 میں روسی آبدوز کرسک کے لاپتہ ہونے کے لیے – پانی کے اندر شور بھی سنا گیا، اور کوئی نتیجہ نہیں نکلا۔

مسٹر اوون کا کہنا ہے کہ امید کی دوسری کرن یہ ہے کہ ان آوازوں کو سونار بوائے نے بالکل بھی اٹھایا تھا ٹائٹینک سمندر کی سطح کے نیچے 12,500 فٹ (3,800 میٹر) بیٹھا ہے، جہاں سونار بوائے بیٹھتے ہیں۔

مسٹر اوون کا کہنا ہے کہ اگرچہ سمندر کی گہری تہوں سے آوازیں ان تک پہنچ سکتی ہیں، لیکن اس بات کا زیادہ امکان ہے کہ آوازیں اسی سمندر کی تہہ سے آرہی ہوں[اوپر کی] تہہ کے نیچے شور سننا بہت مشکل ہے کیونکہ آواز درجہ حرارت میں اس کمی سے ریفریکٹ ہو جاتی ہےلیکن جب یہ اس آئسوتھرمل تہہ میں. سطح اور 180 میٹر کے درمیان آواز واقعی بالکل سیدھی ہوتی ہے۔

بحر اوقیانوس میں لاپتا آبدوز کی تلاش میں پیشرفت

مسٹر اوون کا کہنا ہے کہ اگر آوازیں واقعتاً ذیلی سے آرہی ہیں تو ریسکیورز کو اسے بہت جلد تلاش کرنے کے قابل ہونا چاہیئےاس علاقے کے ارد گرد بوئز کا ایک نمونہ رکھ سکتے ہیں تاکہ وہ کراس بیرنگ حاصل کر سکیں سونار بوائے ریسیور اس قسم کی معلومات کو واقعی بہت جلد تیار کرنے کے قابل ہے اسے تلاش کرنے میں بہت کم وقت لگے گا۔”

تاہم، امریکی کوسٹ گارڈ کی تازہ ترین تازہ کاری کے مطابق، زیرِ آب گاڑیاں جنہیں شور کے ماخذ کو تلاش کرنے کے لیے منتقل کیا گیا ہے، ابھی تک کچھ نہیں ملا۔

ٹائٹن آبدوز کیا ہے؟

بنیادی طور پر یہ آبدوز نہیں بلکہ اس جیسی submersible کشتی ہے جو زیرآب سفر کر سکتی ہےاس میں ایک پائلٹ اور 4 دیگر افراد سفر کر سکتے ہیں جو عموماً ماہرین ہوتے ہیں یا ایسے سیاح، جو اس مہنگے سفر کا خرچہ اٹھا سکتے ہیں اسے ٹائٹینیم اور کاربن فائبر سے تیار کیا گیا ہے جس کی لمبائی 6.7 میٹر ہے جبکہ وزن 10 ہزار 432 کلوگرام ہے۔

امریکی صدر کے بیٹے ہنٹر بائیڈن کا ممکنہ اعتراف جرم

اسے تیار کرنے والی کمپنی اوشین گیٹ کے مطابق یہ سمندر کی 4 ہزار میٹر گہرائی میں جانے کی صلاحیت رکھتی ہے، خیال رہے کہ ٹائی ٹینک کا ملبہ 3800 میٹر گہرائی میں موجود ہے سمندر کی گہرائی میں جانے کے لیے یہ 4 الیکٹرک thrusters استعمال کرتی ہے جبکہ سمندری ماحول کی کھوج کے لیے کیمروں، روشنیوں اور اسکینرز سے لیس ہے ٹائٹن کے اندرکسی منی (mini) وین جتنا بڑا کیبن ہے، جس میں لوگ موجود ہوتے ہیں۔

کمپنی کا کہنا ہے کہ ٹائٹن سے سمندر کا ویو پورٹ (جس سے سمندر کو دیکھا جا سکتا ہے) اس طرح کی کسی بھی submersible میں سب سے بڑا ہےاسے پلے اسٹیشن جیسے ایک کنٹرولر سے آپریٹ کیا جاتا ہے زیرآب جانے کے بعد باہری دنیا سے رابطے کے لیے یہ ایلون مسک کی کمپنی اسٹار لنک کی سیٹلائیٹ ٹیکنالوجی کو استعمال کرتی ہے۔

چند دن قبل کمپنی نے ایک ٹوئٹ میں کہا تھا کہ سمندر کی گہرائی میں موبائل ٹاورز موجود نہیں تو ہم رابطوں کے لیے اسٹار لنک پر انحصار کرتے ہیں ٹائٹن میں 96 گھنٹوں کی آکسیجن سپلائی موجود ہوتی ہے۔

اوشین گیٹ کے عہدیدار ڈیوڈ Concannon کے مطابق ٹائٹن میں آکسیجن سپلائی جمعرات کی صبح تک موجود رہے گی، تاہم سانس لینے کی رفتار سے یہ وقت کم ہو سکتا ہے۔

سویڈن؛ چھوٹا اسپورٹس طیارہ کریش ہو گیا

اسی طرح ایک ٹوائلٹ جیسا خلا موجود ہے پانی میں غوطہ لگانے پر ٹائٹن کو بحری جہاز پولر پرنس سے نیوی گیشن کی ہدایات ٹیکسٹ میسجز میں ملتی ہیں اس جہاز کا عملہ ٹائٹن کی لوکیشن کو مانیٹر بھی کر رہا ہوتا ہے اسی جہاز سے ٹائٹن کا رابطہ غوطہ لگانے کے بعد منقطع ہوا تھا جس کے بعد سے اس کو تلاش کیا جا رہا ہے۔

اس بارے میں کچھ کہنا قبل از وقت ہے کہ ٹائٹن کے ساتھ کیا ہوا مگر ماہرین کا خیال ہے کہ آبدوز ٹائی ٹینک کے ملبےمیں الجھ نہ گئی ہو، جبکہ پاور فیلیئر یا کمیونیکیشن سسٹم میں خرابی جیسے خیال بھی پیش کیے گئے ہیں۔

ماہرین کے مطابق ٹائی ٹینک کا ملبہ سمندر کی تہہ میں پھیلا ہوا ہے اور یہ خطرناک ہے،ٹائٹن کا رابطہ ایک گھنٹے 45 منٹ بعد منقطع ہوا جس سے عندیہ ملتا ہے کہ عملہ سمندر کی تہہ یا اس کے قریب پہنچ گیا ہوگا۔

ایک خیال یہ بھی ہے کہ ٹائٹن کے پریشر hull میں لیک کا مسئلہ ہوا ہو ماہرین کے مطابق ایسی صورت میں اگر ٹائٹن سمندر کی تہہ تک پہنچ گئی ہو اور اپنی پاور سے اوپر نہیں آ رہی تو آپشنز محدود ہیں وہ تہہ میں رہ سکتی ہے مگرایسی امدادی کشتیاں بہت کم ہیں جو اتنی گہرائی میں جا سکتی ہیں اور غوطہ خور وہاں تک نہیں جا سکتے۔

ٹائی ٹینک کی سیاحت کیلئےگئی لاپتہ آبدوز کی تلاش تاحال جاری

Leave a reply