جوبائیڈن نے چین کو کمزور اقتصادی ترقی کے سبب ٹکنگ ٹائم بم کہہ دیا

0
30
China US

صدر جو بائیڈن نے چین کو ٹکنک ٹائم بم سے تشبیہ دیا ہے کیونکہ ان دنوں ان کے کچھ مسائل چل رہے ہیں جبکہ صدر جو بائیڈن نے کہا ہے کہ چین ٹائم بم کی طرح ہے کیونکہ اس کی معیشت ٹھیک نہیں چل رہی اور یہ مستقبل میں ایک بڑا مسئلہ بن سکتا ہے۔ امریکی صدر نے ایک خصوصی اجتماع میں چین کے بارے میں بات کی۔ انہوں نے کہا کہ چین کو کچھ مشکلات کا سامنا ہے جو کہ اچھی بات نہیں ہے کیونکہ جب برے لوگوں کو مسائل ہوتے ہیں تو وہ برے کام کر سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ چین کو نقصان نہیں پہنچانا چاہتے لیکن ان کے ساتھ منصفانہ اور اچھے تعلقات رکھنا چاہتے ہیں۔

صدر جو بائیڈن نے یہ بات سیکرٹری آف سٹیٹ انتھونی بلنکن کے چند ہفتے قبل کسی دوسرے ملک کے دورے کے بعد کہی۔ بلنکن کا دورہ دونوں ممالک کو بہتر دوست بنانا تھا۔ صدر جو بائیڈن نے کہا کہ امریکہ اب چین پر اتنی رقم خرچ نہیں کرے گا۔ ہنری کسنجر نامی ایک بہت ہی اہم شخص، جو دوسرے ممالک کے ساتھ امریکہ کے تعلقات کا انچارج ہوا کرتا تھا، جب وہ 100 سال کا ہو گیا تو بیجنگ کا دورہ کرنے گیا۔ وہ وہ شخص تھا جس نے امریکہ اور چین کے درمیان تعلقات کا آغاز کیا۔

جب سے دونوں ممالک 1979 میں دوست بنے تھے، حال ہی میں ان کی دوستی واقعی خراب ہوئی ہے۔ تاہم یاد ہے جب صدر جو بائیڈن نے رقم اکٹھا کرنے کے لیے ایک خصوصی تقریب میں بات کی تھی؟ ٹھیک ہے، انہوں نے چین کے رہنما صدر شی جن پنگ کے بارے میں کچھ باتیں کہیں۔ اس نے اسے ایک ڈکٹیٹر کہا، جس کا مطلب ہے کوئی ایسا شخص جس کے پاس بہت زیادہ طاقت ہو اور وہ لوگوں کو یہ کہنے کی اجازت نہیں دیتا کہ معاملات کیسے ہوتے ہیں۔
مزید یہ بھی پڑھیں؛
پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں نمایاں تیزی
صادق سنجرانی سب سے آگے،بڑا گھر بھی مان گیا، سلیم صافی کا دعویٰ
سابق آئی جی کے پی کے بھائی کو اغوا کے بعد کیا گیا قتل
غیرقانونی کاموں پر جواب دینا پڑتا ہے. عطاءاللہ تارڑ
ایران اور امریکا کے درمیان منجمد فنڈز کی بحالی کا معاہدہ
پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں نمایاں تیزی
کل، صدر جو بائیڈن نے ایک اصول بنایا جس کے مطابق امریکہ کے لوگ اہم کام کرنے والی چین کی ٹیکنالوجی کمپنیوں کو پیسے نہیں دے سکتے۔ امریکہ اور چین کو سیکھنے کی ضرورت ہے کہ ساتھ کیسے چلنا ہے کیونکہ اگر وہ ایسا نہیں کرتے تو بڑی لڑائی ہو سکتی ہے۔ اسے مصنوعی ذہانت کے ذریعے مزید خراب کیا جا سکتا ہے، جو چیزوں کو مزید غیر دوستانہ بنا سکتا ہے۔ کسنجر کا خیال ہے کہ دونوں ممالک کے لیے یہ جاننا ضروری ہے کہ پرامن طریقے سے ایک ساتھ کیسے رہنا ہے۔ صدر کے فیصلے کے بعد، امریکی کمپنیوں کو چین میں کمپیوٹر چپس جیسی اہم ٹیکنالوجیز میں پیسہ لگانے کی اجازت نہیں ہے۔

Leave a reply