fbpx

وزیر صحت سمیت مودی کابینہ کے 12 وزرا مستعفی ، حالات بگڑنے لگے

نئی دیلی :وزیر صحت سمیت مودی کابینہ کے 12 وزرا مستعفی ، حالات بگڑنے لگے ،اطلاعات کے مطابق بھارت میں رواں سال کورونا وائرس کے کیسز میں تباہ کن حد تک اضافے کے بعد وزیر صحت سمیت نریندر مودی کی کابینہ کے 12 وزرا مستعفی ہو گئے ہیں۔

بھارت میں مرکزی حکومت کے 12 وزرا ایک ساتھ اپنے عہدوں سے مستعفی ہو گئے ہیں،بھارتی وزیر اعظم نریندرا مودی کی طرف سے کابینہ میں تبدیلیوں کے بعد 12 وزرا نے استعفی دے دیا، جن میں صحت، آئی ٹی اور تعلیم کے وزرا شامل ہیں،بھارتی صدر نے وزیر اعظم کی تجویز پر وزار کے استعفے منظور کر لیے، دوسری طرف بھارتی کابینہ میں مزید 43 وزرا اور وزرائے مملکت شامل کیے گیے ہیں، جنھوں نے اپنے عہدوں کا حلف اٹھا لیا۔

وزیر اعظم نریندر مودی کی کابینہ میں تین درجن نئے چہرے شامل کیے گئے ہیں جس کے بعد وزرا کی تعداد 52 سے بڑھ کر 77 ہو گئی ہے۔ان میں سے ایک درجن سے زائد وزرا کا تعلق اترپردیش اور گجرات سمیت ان ریاستوں سے ہے جہاں انتخابات ہونے والے ہیں جہاں یہ ریاستیں مختلف، ذات اور برادریوں کی نمائندگی کرتی ہیں۔

کروڑ پتی میڈیا مالک راجیو چندر شیکھر اور شوبھا کراندلاجی سمیت چار اراکین کا تعلق جنوبی ریاست کرناٹک سے ہے۔شوبھا کے خلاف مبینہ طور پر مسلمان مخالف بیانات پر مختلف پولیس اسٹیشنوں میں متعدد مقدمات درج ہیں۔

شوبھا کے علاوہ مزید چھ خواتین کو نئی کابینہ کا حصہ بنایا گیا ہے۔

تاہم مستعفی ہونے والوں میں حیران کن طور پر وزیر قانون اور انفارمیشن ٹیکنالوجی شنکر پرساد اور وزیر اطلاعات و نشریات پرکاش جوادیکر بھی شامل ہیں کیونکہ ان دونوں کو بھارتیا جنتا پارٹی کا نیا چہرہ تصور کیا جاتا تھا کیونکہ کچھ رپورٹس کے مطابق یہ دونوں ریاستی انتخابات میں پارٹی کے اہم امور اور مہم کو سنبھال رہے تھے۔

سات بھارتی ریاستوں میں اگلے سال انتخابات ہونے ہیں جن میں اترپردیش، پنجاب اور گجرات سمیت چھ میں اس وقت بھارتیا جنتا پارٹی کی حکومت ہے۔رواں سال کے اوائل میں بھارتیا جنتا پارٹی کو اس وقت شدید دھچکا لگا تھا جب انہیں مغربی بنگال میں ہونے والے ریاستی انتخابات میں اقتدار کے حصول میں ناکامی کا منہ دیکھنا پڑا۔

کچھ ناقدین کا ماننا ہے کہ یہ ملک بھر میں وزیر اعظم نریندر مودی کی گرتی ہوئی مقبولیت کا منہ بولتا ثبوت ہے البتہ آسام میں حکمران جماعت اپنی حکومت برقرار رکھنے میں کامیاب رہی تھی۔