عظمیٰ خان تشدد کیس، امید نا ہاریں، لاقانونیت کے خلاف جنگ جاری رکھیں گے۔ حسان نیازی

عظمیٰ خان تشدد کیس، امید نا ہاریں، لاقانونیت کے خلاف جنگ جاری رکھیں گے۔ حسان نیازی

باغی ٹی وی ، اداکارہ عظمیٰ خان کے کیس کے وکیل حسان نیازی نے کہا ہے کہ اس سارے سیناریو میں ہمارا واحد مقصد یہ تھا کہ عظمیٰ کو انصاف دلایا جائے .ہم اپنے طور پر اس پر کھڑے رہے لیکن ہمارے کلائنٹ نے مفاہمت کر لی. سب یہی پیشن گئی کر رہے تھے.
حسان نیازی نے کہا کہ نناوے فیصد کیسز میں کمپرومائز اور مفاہمت ہی ہوتی ہے . آخر کاریہی کچھ ہوتا ہے . لیکن ہم نے یہ ثابت کیا کہ اب کوئی ریئل استیٹ‌ کا مالک یا اس کے باڈی گاڈ کسی کے گھر کی دیوار پھلانگ کر نہیں جائیں گے ، کسی خاتون پر تشدد نہیں‌ہوگا . اور یہ ثابت ہوگیا کہ ایسے افراد کو قانون کے تحت لایا جاسکتا ہے . لیکن انصاف کی امید ہم نے اب ھبی نہیں چھرڑی اس کے لیے ہم جدو جہد کرتے رہیں گے.


واضح رہے کہ
عظمیٰ خان تشدد کیس میں معاملات طے پاگئے ہیں۔ تشدد کا نشانہ بننے والی اداکاروماڈل عظمیٰ خان اور انکی بہن ہما خان کی وکیل خدیجہ صدیقی نے فریقین کے درمیان صلح ہوجانے کی تصدیق کردی ہے۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے کیس سے علیحدگی کا بھی اعلان کردیا ہے۔ بیرسٹر خدیجہ صدیقی نے اپنے ٹویٹر پیغام میں اعلان کیا ہے کہ ”ہم عظمیٰ خان کے کیس سے الگ ہورہے ہیں، میں دونوں خواتین کی جانب سے تصفیے کی وجہ سمجھتی ہوں لیکن اس کے باوجود میرا ضمیر مجھے اس سب کا حصہ بننے کی اجازت نہیں دیتا چاہے وہ پروفیشل حوالے سے ہی کیوں نہ ہو۔
لاقانونیت کے خلاف جدوجہد چلتی رہے گی

واضح رہے کہ عظمیٰ تشدد کیس میں پولیس نے کاروائی کا اعلان کرتے ہوئے ملک ریاض کی بیٹی آمنہ عثمان زوجہ ملک عثمان کے خلاف مقدمہ درج کرلیا تھا ،ذرائع کے مطابق یہ مقدمہ تھانہ ڈیفینس سی لاہور میں درج کیا گیا

اس مقدمے میں آمنہ عثمان ملک ، اورملک ریاض کی بیٹیوں کومورد الزام ٹھہرایا گیا ہے، جس میں کہا گیا ہےکہ عظمیٰ خان لاہور میں اپنی رہائش گاہ میں موجود تھیں کہ آمنہ عثمان ملک اورملک ریاض کی دونوں بیٹیاں مسلح گارڈز کے ساتھ اس کے گھرمین گھس آئیں اورتشدد کرنے کے ساتھ ساتھ برا بھلا بھی کہا ، عظمیٰ خان کی طرف سے اس درخواست میں کہا گیا ہےکہ آمنہ عثمان ملک نے اسکو دھمکیاں بھی دیں ہیں

ایف آئی آر میں کہا گیا ہےکہ ملک ریاض کی بیٹیاں طاقت کے بل بوتے پرہمارے گھرآئیں اورآتے ہی ہمیں تشدد کا نشانہ بنانا شروع کردیا گیا

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.