شام کی فلم ڈائریکٹر وعد الخطیب سال 2020 کی ’100 بااثر شخصیات‘ کی فہرست میں شامل

شام سے تعلق رکھنے والی فلم ڈائریکٹر وعد الخطیب سال 2020 کی ’100 بااثر شخصیات‘ کی فہرست میں شامل ہو گئیں-

باغی ٹی وی : امریکی میگزین ٹائم نے شام سے تعلق رکھنے والی فلم ڈائریکٹر وعد الخطیب کو سال 2020 کی ’100 بااثر شخصیات‘ کی فہرست میں شامل کیا ہےایوارڈ یافتہ فلم ڈائریکٹر وعد الخطیب کی شام کے علاقے حلب کے جنگی حالات پر مبنی فلم ’سما کے لیے‘ مختلف بین الاقوامی ایوارڈز کے لیے نامزد ہوئی تھی۔

فلم سما کے انسٹا گرام اکاؤنٹ پر وعد الخطیب کے بااثر ترین شخصیات میں شمار ہونے کی خبر شیئر کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ فلم ڈائریکٹرز کے اس طاقت ور گروپ کا حصہ بننے پر فخر ہے۔

انسٹاگرام پر وعد الخطیب کی دلکش تصویر شئیر کرتے ہوئے کیپشن میں مداحوں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے لکھا کہ ہمیشہ آپ کی آواز بلند کرنے اورایکشن فورسما کے کام کی حمایت کرنے کے لئے ہم آپ کے شکر گزار ہیں-

View this post on Instagram

TIME's list of the 100 Most Influential People in the world is out, and we are so proud to share that @waadalkateab is a part of this powerful group. ▪️ Read words from @rizahmed + watch Waad’s video interview on time.com/time100 or via the link in our bio. ▪️ We thank you – always – for raising your voices and supporting the work of #ActionForSama ❤️ #Time100 @time ~ بكل فخر حابّين نشارك معكن وجود وعد الخطيب ضمن قائمة التايم لأكثر 100 شخصية تأثيراً في العالم, فيكم تقرأوا كلمات ريز أحمد وتشوفو مقابلة وعد مع التايم بالرابط التالي كل الحب والشكر الكم دوماً لرفع أصواتكم معنا و لدعم حملة تحرّك لأجل سما

A post shared by Action For Sama (@actionforsama) on


واضح رہے کہ ایوارڈ یافتہ فلم ’سما کے لیے‘ وعد الخطیب کی شام کے شہر حلب میں گزاری گئی زندگی کی عکاسی کرتی ہے۔ فلم میں انہوں نے حلب کے محاصرے اور خانہ جنگی کے دوران شہریوں کی تکالیف کو ایک عورت کی نظر سے دکھایا ہے۔

فلم ’سما کے لیے‘ 2019 میں برٹش اکیڈمی فلم ایوارڈز کی چار مختلف کیٹگریز کے لیے نامزد ہوئی تھی جس میں بہترین برطانوی فلم، برطانوی مصنف، ڈائریکٹر اور ہدایتکار کی پہلی بہترین فلم، غیر انگریزی بہترین فلم، اور بہترین ڈاکومنٹری شامل ہیں۔

علاوہ ازیں وعد الخطیب کی یہ فلم دسمبر 2019 میں آسکر اکیڈمی ایوارڈز کے لیے بھی نامزد ہوئی تھی۔ فلم ’سما کے لیے‘ اب تک متعدد ایوارڈز جیت چکی ہے۔

اداکاری کے بعد ون ڈیزل نے گلوکاری کے میدان میں قدم رکھ دیا

کیا فلمی کردار جیمز بانڈ حقیقت میں ایک برطانوی جاسوس تھا ؟

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.