پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ پاکستان کے لیے کیوں ضروری ؟

0
156
iran pakistan gas

پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ پاکستان کے لیے کیوں ضروری ؟

ایران اور پاکستان کو ملانے والا گیس پائپ لائن منصوبہ، جسے عام طور پر پیس پائپ لائن یا آئی پی گیس کہا جاتا ہے، ایک کثیر جہتی کوشش ہے جو جغرافیائی سیاسی کشیدگی، اقتصادی حرکیات اور بین الاقوامی پابندیوں کی وجہ سے متاثرہوا ہے، یہ منصوبہ ایران سے پاکستان تک قدرتی گیس کی نقل و حمل کو آسان بنانے کے لیے بنایا گیا تھا، اس اہم منصوبےکوابتدا سے لے کر اب تک متعدد رکاوٹوں کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

مارچ 2013 میں،پاکستانی اور ایرانی صدر آصف زرداری اور احمدی نژاد نے رسمی طور پر ایران کی چابہار بندرگاہ کے قریب اس منصوبے کا آغاز کیا، تاہم، ایران پر امریکی پابندیوں کی وجہ سے اس منصوبے پیش رفت رک گئی، باوجود اس کے کہ ایران نے پائپ لائن کے اپنے حصے کے لیے اپنی ذمہ داریاں پوری کیں۔

پاکستان نے ممکنہ سزاؤں کو کم کرنے کے لیے مختلف قانونی اور سفارتی راستے اختیار کیے ہیں اور اس منصوبے سے متعلق امریکا سے رعایت مانگی۔ پائپ لائن منصوبے کی تکمیل پاکستان کی توانائی کی بڑھتی ہوئی ضروریات کو پورا کرنے کی صلاحیت کے لیے اہمیت رکھتی ہے، اس طرح دونوں ممالک پاکستان اور ایران کے درمیان اقتصادی اور تجارتی تعلقات کو فروغ ملے گا۔ اس پائپ لائن کا مقصد ایران سے پاکستان تک قدرتی گیس کی نقل و حمل کو آسان بنانا ہے، دو طرفہ تجارتی خواہشات کے مطابق جو اگست 2023 میں دستخط کیے گئے پانچ سالہ منصوبے میں بیان کی گئی تھی، جس کا ہدف 5 بلین ڈالر کا تجارتی حجم ہے۔ پڑوسی ممالک کے ساتھ درآمدات اور برآمدات کا فائدہ اٹھانا اکثر زیادہ سرمایہ کاری کا مؤثر حل ہے،

مارچ 2024 میں رائٹرز کی حالیہ رپورٹوں میں تہران کے ساتھ کاروبار کرنے سے متعلق خطرات کے بارے میں خدشات کا حوالہ دیتے ہوئے پاکستان ایران گیس پائپ لائن منصوبے کے جاری رہنے کی امریکہ کی مخالفت کا اشارہ دیا گیا تھا۔ یہ موقف 2019 میں اسی طرح کے پروجیکٹ کے لیے پڑوسی ملک کو دی گئی چھوٹ سے متصادم ہے۔ایران کے توانائی کے مسائل کے حل اور بین الاقوامی پابندیوں کے خاتمے تک اس منصوبے کا نقطہ نظر غیر یقینی ہے۔ گھریلو قلت اور بڑھتی ہوئی طلب کے باوجود ایران کا گیس کی برآمدات پر انحصار اقتصادی چیلنجز اور اندرونی توانائی کی سلامتی کو خطرے میں ڈالتا ہے۔ ایران کے توانائی کے بحران سے نمٹنا اور پابندیوں میں نرمی پائپ لائن کی عملداری اور تکمیل کے لیے اہم شرائط ہیں۔

پراجیکٹ مینجمنٹ اور سفارتی ذرائع سے مسلسل کوششوں کے باوجود اس منصوبے کی تکمیل کےلئے رکاوٹیں برقرار ہیں۔ اگرچہ پائپ لائن کی تکمیل پاکستان کی توانائی کی ضروریات کو پورا کرنے اور دوطرفہ تعلقات کو مضبوط بنا کر دونوں ممالک کو فائدہ پہنچانے کی صلاحیت رکھتی ہے، لیکن اس کی پیشرفت کا انحصار ایران کی توانائی کی صورتحال کے حل اور پابندیوں کے خاتمے پر ہے۔
یہ بات قابل ذکر ہے کہ اگر پاکستان ایران کے ساتھ گیس پائپ لائن منصوبے کے حوالے سے اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے میں ناکام رہتا ہے تو اسے 18 بلین ڈالر کے بھاری جرمانے کا سامنا کرنا پڑے گا۔ جبکہ ایران نے پائپ لائن کا اپنا حصہ مکمل کر لیا ہے، پاکستان نے ابھی تک طے شدہ وقت کے اندر اپنا حصہ مکمل کرنا ہے۔

متضاد مفادات کے درمیان سفر کرتے ہوئے پاکستان ایک چیلنجنگ پوزیشن میں ہے۔ کیا پاکستان امریکہ کو معافی دینے پر آمادہ کر سکتا ہے؟ اس طرح کے مذاکرات میں عام طور پر دونوں طرف سے رعایتیں حاصل ہوتی ہیں، جس کا مطلب یہ ہے کہ پاکستان کو امریکی مفادات کے مطابق رعایتیں دینے کے لیے تیار رہنا چاہیے۔
پاکستان امریکہ کے ساتھ سیکورٹی تعاون، بشمول انٹیلی جنس شیئرنگ، فوجی تعاون، یا علاقائی سلامتی کے چیلنجوں سے نمٹنے میں مدد بڑھانے کی پیشکش کر سکتا ہے،اس ضمن میں دوسرے راستے بھی تلاش کیے جا سکتے ہیں۔

Leave a reply