زرداری کی زبان کاٹے جانے میں مبینہ طور پر ملوث نجف مرزا ایک بار پھرمتحرک

0
29

زرداری کی زبان کاٹے جانے میں مبینہ طور پر ملوث نجف مرزا ایک بار پھرمتحرک

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق نجف مرزا نے ڈی جی نیب کراچی کے عہدے کا چارج سنبھال لیا،نجف مرزا نے نیب افسران سے تعارفی ملاقاتیں کیں،نئے ڈی جی نیب کراچی نے بڑے کیسز پر تحقیقات تیز کرنے کے احکامات دے دیئے،نیب کراچی میں نئے ڈی جی نیب کو گارڈ آف آنر بھی پیش کیا گیا،جس کے بعد انہوں نے نیب افسران کا اجلاس طلب کیا۔

اجلاس میں نیب افسران نے نئے ڈی جی نیب نجف مرزا کو زیر تحقیقات کیسز پر بریفنگ دی، نیب افسران نے ڈی جی نیب کو شرجیل انعام میمن، آغا سراج درانی، ڈاکٹر عاصم اور رکن قومی اسمبلی سکندر راہ پوتو کے خلاف تحقیقات سے بھی آگاہ کیا۔ڈی جی نیب کو ایس بی سی اے افسران کے خلاف تحقیقات سے بھی آگاہ کیا گیا۔

نجف مرزا کوایف آئی اے سے نیب میں 3سال کے لیے تعینات کیا گیا ہے ،جعلی اکاؤنٹس کیس میں نجف مرزاجےآئی ٹی کے سربراہ رہے ،نجف مرزاکی سربراہی میں بنی جے آئی ٹی نےآصف زرداری،فریال تالپورکوملوث قراردیاتھا,نجف مرزاکی تعیناتی سے جعلی اکاؤنٹس میں ملوث اہم شخصیات کے خلاف کاروائی متوقع ہے.

سال 1999 سے 2013 تک پی پی اور نجف مرزا میں جنگ رہی ،سال مئی 1999 میں جب سابق صدر آصف زرداری کی زبان لاہور سے آنے والی سی آئی اے ٹيم نے مبينہ طور پرکاٹي تو سینٹرل جیل کے سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر نجف مرزا تھے جنہوں نے محکمہ داخلہ کے فیصلے پر آصف زرداری کو سی آئی اے کے حوالے کیا تھا۔ سال 2008 میں اقتدار میں آنے کے بعد پیپلز پارٹی نے نجف مرزا کو پوسٹگز سے دور رکھا لیکن 2013 کے عام انتخابات میں مسلم لیگ ن کے برسراقتدار آنے کے بعد پھر سے نجف مرزا کي قسمت جاگی۔ نجف مرزا کو ڈائریکٹرایف آئی اے سندھ تعینات کيا گيا مگرپیپلزپارٹی کی صوبائی حکومت سے ان کے تعلقات اچھے نہ ہوسکے جس کے بعد نجف مرزا کو تين سال تک پورٹ قاسم ميں تعينات کرديا گيا۔

ڈاکٹر نجف مرزا کو ايک سال قبل دوبارہ ايف آئی اے ميں ايڈيشنل ڈائريکٹرجنرل ساؤتھ تعينات کیا گیا تھا ، نجف مرزا اپني ايمانداری اور ديانت داری کی وجہ سے اچھے افسر کے طور پرمشہور ہيں۔

واضح رہے کہ سابق صدر آصف زرداری بھی جعلی اکاؤنٹس کیس میں گرفتارتھے تاہم عدالت نے انہیں رہا کر دیا،آصف زرداری کی ہمشیرہ فریال تالپور کوبھی نیب نے گرفتار کر رکھا ہے.

نیب کا کہنا ہے کہ آصف زرداری نے جعلی دستاویزات پر قرض لےکرہڑپ کرلیا، 2009 میں ڈیڑھ ارب پھر 2012 میں مزید 80 کروڑقرض لیاگیا ، فراڈ سے نیشنل بینک کو 3 ارب 77 کروڑکا نقصان پہنچایا گیا، آصف زرداری نے بطورصدرمملکت نیشنل بینک حکام پر اثراندازہو کرقرض لیا.

 

Leave a reply