ورلڈ ہیڈر ایڈ

بلوچستان بی ایریا میں FIR تحصیلداران کی بجائے لیویز کے آفیسروں کو دیا جائے.

بلوچستان لیویز ایکٹ 2010 کے تحت اگر ایف آئی آر لیویز آفیسر درج کرتے تو آج انصاف کی آواز دوبالا ہوتا لیویز وہ قبائلی فورس ہے جہنوں نے ہمیشہ خطے کی امن و امان کی صورتحال کو برقرار رکھنے کی خاطر قربانیاں دی ہیں قبائلی فورس لیویز نے ہمیشہ جان ہتھیلی پر رکھ قوم و ملک کی خاطر اپنے جانیں قربان کئے ہیں جو کسی سے ڈھکی چپی نہیں ہیں لیویز فورس وہ واحد فورس ہے جہنوں نے دیگر سیکیورٹی اداروں سے ملکر بلوچستان بھر میں دہشت گردی کو جڑ سے ختم کرنے میں اپنا قلیدی کردار ادا کیا ہے اگر بی ایریا میں ایف آئی آر لیویز آفیسران درج کرتے تو آج شاید انصاف ہوتا کسی غریب کو ایف آئی آر درج کرنے کے لئے دربدر کی ٹھوکریں نہیں کانا پڑتا آج میں جولکھنے جارہا ہوں وہ کھڑواہ ضرور ہے لیکن سچ ہے جی ہاں میں اس تحریر کے ذریعے اعلی آفیسران سے انصاف کے منتظر ضرور ہوں 26 مئی کو ایک افسوناک واقع زیارت کے علاقے کچ میں پیش آتا ہے جہاں 75 سالہ بوڑھا شخص کی اکلوتے بیٹے کو سہولت کاروں کی مدد سے 4 نقاب پوش اغوا کار اغوا کرتے ہیں اور 75سالہ بوڑھا شخص ایف آئی آر کےلئے دربدر کی ٹھوکریں کاکر آخر مجبور ہوتا ہے کیونکہ نائب تحصیلدار ہدایت اللہ کی جانب سے ایف آئی آر درج نہیں ہوتا جس کے لئے بہانا پہ بہانا ہوتا 75 سالہ بوڑھے شخص سیدہان مری کے مطابق نائب تحصیلدار نے کہا کہ ایف آئی آرہرنائی کے تحصیل شاہرگ میں درج ہوتا ہے کیونکہ مغوی کے سہولت کار اور آپ انہی علاقے کے رہائشی ہیں جناب نائب تحصیلدار صاحب واقع آپ کے علاقے کچ میں پیش آیا چھاپہ آپ نے سہولت کاروں کے گھر میں لگایاروز اول سے ایف آئی آر درج کرنے کی یقین دہانی آپ نے کرائی تو اب شاہرگ میں ایف آئی آر درج کیسے ہوگا کاش کہ اگر آج لیویز آفیسران ایف آئی آر درج کرتے تو شاید ایسے بوڑھے اور لاچار شخص کو انصاف ضرور ملتا آخر میں بوڑھے شخص کی فون پر حالات کو دیکھ کر صرف اتنا لکھوں گا کہ صوبائی حکومت لیویز ایکٹ کے تحت ایف آئی آر لیویز آفیسران ہی کو درج کرانے کی ایکٹ منظوری دی حائے تاکہ کسی غریب اور لاچار شخص کو اسطرح کی ٹھوکریں نہ کھانے پڑئیں۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.