امریکا اور متحدہ عرب امارات کے درمیان بڑی عسکری ڈیل کا فیصلہ ہوگیا

امریکا اور متحدہ عرب امارات کے درمیان بڑی عسکری ڈیل کا فیصلہ ہوگیا

باغی ٹی وی : عرب خبر رساں ادارے کے مطابق وائٹ ہاؤس نے متحدہ عرب امارات کو طیارے فروخت کرنے سے متعلق کانگریس کو آگاہ کردیا جس میں وائٹ ہاؤس نے کانگریس کی خارجہ امور کمیٹی کے سربراہ کو بتایا کہ امریکا متحدہ عرب امارات کو 50 ایف 35 طیارے فروخت کرے گا۔

خارجہ امور کمیٹی کے سربراہ ڈیموکریٹک کانگریس رکن ایلیٹ اینجل نے امریکی حکومت کے فیصلے پر سوال اٹھاتے ہوئے کہا کہ حکومت کا یہ اقدام خلیج میں عسکری توازن کو تبدیل کرے گا اور اس سے اسرائیلی عسکری برتری پر بھی فرق پڑے گا۔خارجہ امور کمیٹی کے سربراہ نے کانگریس سے مطالبہ کیا کہ طیاروں کی فروخت کا بغور جائزہ لیا جائے کیونکہ ایف 35 جاسوسی کی سطح پر ایک گیم چینجر ہے اور جلد بازی میں طیاروں کی فروخت کسی کے مفاد میں نہیں ہے جب کہ یو اے ای کو طیاروں کی فروخت میں یقینی بنایا جائے کہ اسرائیل کی معیاری فوجی برتری برقرار رہے۔

اس سے پہلے امریکہ کوعرب امارات کے لیے ایف 35 جنگی جہازدینے پرآمادہ کرلیاتھا.اسرائیل کا دعویٰ ،اطلاعات کے مطابق اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاھو نے ہفتے کے روز اس بات کی تصدیق کرتے ہوئے پیش کیا کہ اسرائیل نے امریکہ کے لئے متحدہ عرب امارات کو ایف -35 لڑاکا طیارے لینے کے لئے رضامندی دے دی ہے جس کے نتیجے میں وسطی ممالک کے مابین سفارتی تعلقات قائم ہوں گے۔

ذراائع کے مطابق ماہرین کا کہنا ہےکہ اسرائیل کے اس اقدام سےمتحدہ عرب امارات کو پہلی عرب قوم اور اسرائیل کے بعد مشرق وسطی کا صرف دوسرا ملک بنادے گا –

نیتن یاھو نے بار بار اس بات پر اصرار کیا ہے کہ متحدہ عرب امارات کے ساتھ تعلقات قائم کرنے کا معاہدہ "امن کے لئے امن” ہے اور اسلحہ کے معاہدے اس معاہدے کا حصہ نہیں تھے۔ لیکن متحدہ عرب امارات کے عہدے داروں نے اس معاملے پر مفاہمت کا اشارہ کیا ہے ، اور صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ امریکہ طیاروں کے لئے متحدہ عرب امارات کی درخواست پر غور کر رہا ہے.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.