fbpx

نقصان سےمحفوظ رہتے ہوئے ایٹمی تابکاری کے پرامن استعمال سے کیسے مستفید ہوں؟پاکستان نے دنیا کو آگاہ کر دیا

ویانا:پاکستان نے ریڈیو ایکٹیو ویسٹ مینجمنٹ کے انتظام کے شعبے میں حفاظت اور حفاظتی معیار کے بارے میں اپنی کامیابی کو اجاگر کیا۔

باغی ٹی وی : پاکستان نے ریڈیو ایکٹیو ویسٹ مینجمنٹ پر بین الاقوامی کانفرنس کے موقع پر ایک تقریب کا اہتمام کیا جو آج ویانا میں انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی (IAEA) کے ہیڈ کوارٹر میں شروع ہوئی۔

اقوام متحدہ کے اداروں میں پاکستان کے مستقل نمائندے ویانا کے سفیر آفتاب احمد کھوکھر نے تقریب سے افتتاحی کلمات کہے۔ انہوں نے کہا کہ ریڈیو ایکٹیو ویسٹ کا محفوظ انتظام اس بات کو یقینی بنانے کے لیے بنیادی اہمیت کا حامل ہے کہ ہمارے معاشرے اس کے نقصان دہ پہلوؤں سے محفوظ رہتے ہوئے ایٹمی تابکاری کے پرامن استعمال سے مستفید ہوتے رہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان نے جوہری ٹیکنالوجی کے پرامن استعمال میں متاثر کن پیش رفت کی ہے اور جوہری اور تابکاری کے تحفظ کے اعلیٰ ترین معیارات پر پوری طرح عمل پیرا ہے۔

محمد نعیم، چیئرمین پاکستان اٹامک انرجی کمیشن (PAEC)، جو IAEA کانفرنس کے شریک چیئرمین ہیں، نے کہا کہ پاکستان کے پاس ریڈیو ایکٹیو ویسٹ کے مربوط نظام پر عمل کرنے کا 50 سال سے زیادہ کا تجربہ ہے اور اسے ٹھکانے لگانے کے مستقل حل کی طرف پیش رفت کر رہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان کا ریڈیو ایکٹیو ویسٹ مینجمنٹ انفراسٹرکچر پاکستان کے پائیدار قومی جوہری توانائی پروگرام کے مستقبل کے منصوبوں کے لیے انتہائی اہمیت کا حامل ہوگا۔

PAEC اور IAEA کے ماہرین کی پریزنٹیشنز نے IAEA اور پاکستان کے درمیان تکنیکی تعاون کے پروگرام کے فریم ورک کے اندرریڈیو ایکٹیو ویسٹ کے انتظام میں پاکستان کی پیش رفت کو اجاگر کیا۔ کانفرنس میں سائنسی ماہرین، IAEA کے حکام اور بین الاقوامی مندوبین نے شرکت کی جنہوں نے پریزینٹرز کے ساتھ ایک باہمی تبادلہ خیال کیا۔

ہفتہ بھر جاری رہنے والی IAEA کانفرنس کا مقصد جوہری ایپلی کیشنز کے پرامن استعمال سے پیدا ہونے والے ریڈیو ایکٹیو ویسٹ کے انتظام میں معلومات کے تبادلے اور بہترین طریقوں کو فروغ دینا ہے۔ کانفرنس میں پاکستان کے متعدد ماہرین اور سائنس دان شرکت کر رہے ہیں اور سائنسی مقالے پیش کریں گے۔

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!