بلڈ پریشر کا کم ہونا ڈیمینشیا کے خطرات کو کم کرسکتا ہے،تحقیق

0
53

سِڈنی: آسٹریلیا کے شہر سِڈنی میں قائم جارج انسٹی ٹیوٹ فار گلوبل ہیلتھ اور یونیورسٹی آف نیو ساؤتھ ویلز (UNSW) کی طرف سے کی گئی ایک تحقیق میں ماہرین کا کہنا ہے کہ بڑی عمر کے افراد میں بلڈ پریشر کا کم ہونا ان میں ڈیمینشیا کے خطرات کو کم کرسکتا ہے۔

باغی ٹی وی : ڈیمنشیا ایک ایسا سنڈروم ہے جس میں علمی افعال میں اس سے کہیں زیادہ بگاڑ ہوتا ہے جس کی حیاتیاتی عمر بڑھنے کے معمول کے نتائج سے توقع کی جا سکتی ہے۔

اینٹی ڈپریسنٹ کا دیر پا استعمال قلبی امراض کے خطرات میں اضافہ کر سکتا ہے،تحقیق

عالمی ادارہ صحت کے مطابق، فی الحال، دنیا بھر میں 55 ملین سے زیادہ لوگ ڈیمنشیا کے ساتھ رہتے ہیں، اور ہر سال تقریباً 10 ملین نئے کیسز سامنے آتے ہیں۔

بدھ کو سامنے آنے والی یہ تحقیق پانچ ڈبل بلائنڈ پلیسبو کنٹرول شدہ بے ترتیب آزمائشوں کے تجزیہ پر مبنی ہے جس میں بلڈ پریشر کو کم کرنے والے مختلف علاج استعمال کیے گئے اور ڈیمنشیا کی نشوونما تک مریضوں کو چیک کیا گیا-

ٹرائلز میں 20 ممالک اور خطوں کے کل 28,008 افراد کو شامل کیا گیا جن کی اوسط عمر 69 سال اور ہائی بلڈ پریشر کی تاریخ تھی۔ فالو اپ کی درمیانی حد صرف چار سال سے زیادہ تھی۔

سڈنی میں ایسوسی ایٹ پروفیسر اور جارج انسٹی ٹیوٹ کے گلوبل برین ہیلتھ میں ڈیمنشیا کے پروگرام کی رہنما روتھ پیٹرزکا کہنا تھا کہ ڈیمینشیا کے علاج میں کوئی اہم کامیابی حاصل نہ ہونے کے باوجود اس بیماری کے لاحق ہونے کے خطرات میں کمی ایک خوش آئند پیش رفت ہے۔

ڈاکٹر روتھ کا کہنا تھا کہ یہ تحقیق اس بات کے شواہد پیش کرتی ہے کہ سالوں پر محیط بلڈ پریشر کم کرنے کا علاج ڈیمینشیا لاحق ہونے کے خطرات کو کم کرتا ہے۔ لیکن جس بات کا ابھی بھی علم نہیں وہ یہ کہ جن کا بلڈ پریشر قابو میں رہتا ہے ان میں بلڈ پریشر کے کم کیے جانے سے یا جو ابتدائی زندگی سے علاج شروع کر دیتے ہیں ان میں ڈیمینشیا کے دیر پا خطرات کم ہوں گے کہ نہیں۔

انار ایک سُپر فوڈ،ذیابیطس کو روکتا ہے اور دل کی حفاظت کرتا ہے،نظام ہاضمہ کو مضبوط…

روتھ پیٹرز کے مطابق بلڈ پریشر کم کرنے کے فوائد کے حوالے سے متعدد کلینکل ٹرائلز ہوئے ہیں۔ لیکن ان ٹرائلز کے اکثریت میں ڈیمینشیا سے متعلق نتائج کو شامل نہیں کیا گیا اور چند میں فرضی دوا کا استعمال کیا گیا۔

انہوں نے بتایا کہ اکثر ٹرائلز کو بلڈ پریشر کم ہونے کی وجہ سے دل پر پڑنے والے اثرات کی وجہ سے شروع میں ہی روک دیا گیا، جو عموماً ڈیمینشیا کی نشانیوں سے پہلے نمودار ہوتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ یہ ابھی تک نامعلوم ہے کہ آیا ان لوگوں میں اضافی بلڈ پریشر کو کم کرنا جو پہلے سے ہی اسے اچھی طرح سے کنٹرول کر چکے ہیں یا زندگی میں ابتدائی علاج شروع کرنے سے ڈیمنشیا کے طویل مدتی خطرے کو کم کیا جائے گا۔

دنیا بھر میں ڈیمنشیا میں مبتلا لوگوں کی بڑی تعداد اور علاج میں اہم پیش رفت کی کمی کو دیکھتے ہوئے، محققین کے خیال میں اس بیماری کے بڑھنے کے خطرے کو کم کرنا ایک خوش آئند قدم ہوگا۔

محققین نے ذیابیطس، کینسر اور اموات کی وجہ بننے والی پروٹین دریافت کر لی

انہوں نے یہ بھی امید ظاہر کی کہ مطالعہ کے نتائج صحت عامہ کے متعلقہ اقدامات کو ڈیزائن کرنے میں مددگار ثابت ہوں گے۔

نئی تحقیق میں بلڈ پریشر اور ڈیمینشیا کے درمیان تعلق کا جائزہ لیا گیا۔ اس تجزیے کے لیے پانچ ڈبل بلائنڈ، پلیس بو کا استعمال کرتے ہوئے، ٹرائلز کیے گئے جس میں مختلف طریقوں کا استعمال کرتے ہوئے بلڈ پریشر کم کیا گیا۔ مریضوں کی نگرانی اس وقت تک کی گئی جب تک وہ ڈیمینشیا میں مبتلا نہیں ہوگئے۔

ڈبل بلائنڈ ٹرائل وہ تجربے ہوتے ہیں جس میں محقق اور تجربے میں شامل شخص کو کسی قسم کی معلومات نہیں دی جاتی تاکہ ان کا رویہ متاثر نہ ہو۔

Leave a reply