مسافر طیارہ ساز کمپنی بوئنگ نے جرم کیا قبول،کریگی243.6 ملین ڈالر جرمانہ ادا

0
88
Boeing to be charged with criminal fraud, company given until the end of the week to take a guilty plea or face trial.

مسافر طیارہ ساز کمپنی بوئنگ نے دھوکہ دہی کی سازش کے فوجداری الزام میں جرم قبول کر لیاہے، بوئنگ نے 243.6 ملین ڈالر کا جرمانہ ادا کرنے پر اتفاق کیا ہے،

یہ بات امریکی حکومت نے ایک کورٹ فائلنگ میں کہی ہے،امریکی محکمہ انصاف کی تحقیقات عدالت میں دائر کیے گئے737 MAX کے دو حادثوں کے کیس کے حوالہ سے تھیں،پلی ڈیل یا معاہدہ جس کے لیے جج کی منظوری درکار ہوتی ہے، طیارہ ساز کمپنی بوئنگ کو انڈونیشیا اور ایتھوپیا میں پانچ ماہ کے عرصے کے دوران ہونے والے ان دو حادثوں کے لیے مجرم قرار دے گی جن میں 346 افراد ہلاک ہوئے تھے

بوئنگ کے ترجمان نے تصدیق کی کہ اس نے محکمہ انصاف کے ساتھ ایک قرارداد کی شرائط پر اصولی طور پر ایک معاہدہ کیا ہے۔معاہدے کے ایک حصے کے طور پر، طیارہ ساز کمپنی بوئنگ نے سیکیورٹی اور عمل درآمد کے پروگراموں کو فروغ دینے کے لیے اگلے تین سال میں کم از کم ساڑھے 45 کروڑ ڈالر خرچ کرنے پر اتفاق کیا ہے۔ کورٹ فائلنگ میں کہا گیا ہے کہ بوئنگ کے بورڈ کو حادثوں میں ہلاک ہونے والوں کے لواحقین سے ملاقات کرنی ہوگی،اس معاہدے میں ایک غیر جانبدار مانیٹر کا نفاذ بھی کیا گیا ہے، جسے کمپنی کی جانب سے احکامات کی تعمیل کی نگرانی کے لیے عوامی طور پر سالانہ پیش رفت کی رپورٹیں فائل کرنا ہوں گی، بوئنگ کمپنی نگرانی کی تین سال کی مدت کے دوران پروبیشن پر رہے گی۔

اس فیصلے کو متاثرین کے خاندانوں کی طرف سے شدید تنقید کا سامنا ہے جو چاہتے تھے کہ بوئنگ مقدمے کا سامنا کرے اور اسے سخت مالی نتائج بھگتنے پڑیں

ہوائی جہاز بنانے والی کمپنی بوئنگ کے میکس 737 ماڈل کے طیاروں کو پیش آنے والے حادثوں کے متاثرہ خاندانوں نے جون کے وسط میں امریکی حکام سے کہا تھا کہ وہ کمپنی پر 24 ارب 80 کروڑ ڈالر کا جرمانہ عائد کریں،امریکی کانگریس کے پینل میں سماعت کے دوران موجود متاثرہ خاندانوں کے افراد نے ہلاک شدگان کی تصاویر اٹھا رکھی تھیں،متاثرہ خاندانوں کے وکیل پال کیسیل نے امریکی محکمہ انصاف کو ایک خط میں لکھا تھا کہ بوئنگ کمپنی کا جرم امریکی تاریخ کا سب سے مہلک کارپوریٹ جرم ہے۔

واضح رہے کہ بوئنگ 737میکس کے دو مسافر جہازوں کے حادثے میں ہلاک ہونے والے افراد کے لواحقین نے جہاز بنانے والی کمپنی سے 25ارب ڈالر معاوضے کا مطالبہ کردیا۔لواحقین کے وکیل پائل کیسل نے کہا کہ لواحقین کی جانب سے مانگی گئی رقم بالکل مناسب ہے، امریکی حکومت جہاز بنانے والی کمپنی کے سربراہان کے خلاف تحقیقات کرے جو حادثے کے وقت کمپنی کے امور کے ذمہ دار تھے۔ دوسری جانب بوئنگ کمپنی کے سی ای او ڈیو کولھون نے امریکی کانگریس (سینیٹ) میں پیش ہوکر جہاز حادثوں پر معافی مانگتے ہوئے کہا کہ کہ ہماری کمپنی سے غلطیاں ہوئی ہیں اور ہم نے ان سے سیکھا ہے,رپورٹ کے مطابق سال 2018اور 2019میں بوئنگ 737میکس کے 2مسافر طیارے حادثے کا شکار ہوگئے تھے جن میں بہت مماثلت پائی جاتی تھی اور دونوں حادثے ناقص کنٹرول سسٹم ہونے کی وجہ سے پیش آئے۔ ایک بوئنگ 737میکس مسافر جہاز نے سال 2018میں انڈونیشیا سے پرواز بھری اور چند منٹ بعد ہی سمندر میں گر کر تباہ ہوا، حادثے میں تمام 189مسافر ہلاک ہوئے تھے جب کہ دوسرا حادثہ سال 2019میں پیش آیا اور ایک ایتھوپین ائیر لائن کا بوئنگ 737میکس جہاز ٹیک آف کے 6منٹ بعد ہی گر کر تباہ ہوگیا، اس حادثے میں بھی تمام157مسافر ہلاک ہوئے تھے۔ جہاز حادثے میں جان سے جانے والے 346افراد کے لواحقین نے جہاز بنانے والی کمپنی سے مجموعی طور پر 24.8ارب ڈالر کا معاوضہ ادا کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

کراچی طیارہ حادثہ کی رپورٹ قومی اسمبلی میں پیش، مبشر لقمان کی باتیں 100 فیصد سچ ثابت

طیارہ حادثہ، رپورٹ منظر عام پر آ گئی، وہی ہوا جس کا ڈر تھا، سنئے مبشر لقمان کی زبانی اہم انکشاف

جنید جمشید سمیت 1099 لوگوں کی موت کا ذمہ دار کون؟ مبشر لقمان نے ثبوتوں کے ساتھ بھانڈا پھوڑ دیا

اے ٹی سی کی وائس ریکارڈنگ لیک،مگر کیسے؟ پائلٹ کے خلاف ایف آئی آر کیوں نہیں کاٹی؟ مبشر لقمان نے اٹھائے اہم سوالات

کراچی میں پی آئی اے طیارے کا حادثہ یا دہشت گردی؟ اہم انکشافات

طیارے کا کپتان جہاز اڑانے کے قابل نہیں تھا،مبشر لقمان کھرا سچ سامنے لے آئے

Leave a reply