’خودکارگاڑیوں‘ کے دعوے پرایلون مسک سے تفتیش شروع

0
41
elon

واشنگٹن: ٹیسلا، اسٹارلنک اور دیگر کمپنیوں کے مالک اور دنیا کی امیرترین شخصیات میں سے ایک ایلون مسک کو اس وقت امریکی اداروں کی جانب سے تفتیش کا سامنا ہےجو ان کی ٹیسلا گاڑیوں کے خودکار ہونے کے دعوے سے متعلق کی جارہی ہے۔

اسلام آباد:کمپنیاں بھی دیوالیہ ہونےلگیں،تنخواہ نہ دینےپرخاتون نےدفترکےشیشےتوڑدیئے

امریکی سیکیوریٹیزز اینڈ ایکسچینج کمیشن (ایس ای سی) ٹیسلا کے ان دعووں کی چھان بین شروع کردی ہے جس میں کمپنی نے اپنی خودکار گاڑیوں کی صلاحیت کو بڑھا چڑھا کر پیش کیا گیا تھا۔ اب ادارے یہ جاننے کی کوشش کررہے ہیں کہ کس مقام پر ٹیسلا نے سیلف ڈرائیونگ کار کے لیے بلند و بانگ وعدے کئے تھے اور عام صارفین کو گمراہ کیا تھا۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے صدارتی مہم کا باقاعدہ آغاز کردیا

ٹیسلا کی سیلف ڈرائیونگ کار کے متعلق ایک اور اہم بات سامنے آئی ہے۔ گزشتہ ہفتے کمپنی کے انجینیئر نے اعتراف کیا تھا کہ آٹوپائلٹ سافٹ ویئر پہلے 2016 میں بنایا گیا تھا اور اس وقت ایک عملی مظاہرہ درحقیقت ایک سوچے سمجھے ڈرامے کے تحت کیا گیا تھا۔ اس ویڈیو کی ہدایات خود ایلون مسک نے کی تھیں۔

اگرچہ ایس ای سی کمپنیوں کے حفاظتی دعوے پر تفتیش نہیں کرتی تاہم وہ عوام کو اداروں کے گمراہ کن دعووں سے بچانے کا کام ضرور کرتی ہے۔ مسئلہ یہ ہے کہ مکمل طور پر آٹومیٹک ٹیسلا کار کا جو دعویٰ کیا گیا تھا وہ اب بھی سو فیصد ممکن نہیں۔تجزیہ کاروں کے مطابق حقائق کی روشنی میں ایلون مسک پر مزید مقدمات یا قانونی چارہ جوئی ہوسکتی ہے۔

Leave a reply