ایران اور اسرائیل کے درمیان حالات کشیدہ:ایران کے زیرزمین فوجی ڈرونز اڈے کا انکشاف

0
52

تہران :ایران نے جنگی تیاریوں کے پیش نظر اپنی فوجی قوت میں اضافہ شروع کردیا ہے ، اطلاعات ہیں کہ ایرانی فوج نے اپنے فوجی ڈرونز کے زیر زمین اڈے کے بارے میں کچھ تفصیلات ظاہر کی ہیں – لیکن صحیح جگہ نہیں بتائی ہے، سرکاری میڈیا نے ہفتہ کو خلیج میں بڑھتی ہوئی کشیدگی کی وجہ سے اس ڈرون اڈے کے بارے میں کچھ معلومات افشاں کی ہیں‌

تہران سے سرکاری ٹی وی نے کہا کہ ابابیل 5 سمیت زگروس پہاڑوں کےوسط میں 100 ڈرون رکھے گئے ہیں، جن کے بارے میں کہا گیا ہے کہ ان میں قائم 9 میزائل نصب ہیں، جو کہ فضا سے زمین کی سطح‌ پر مار کرنے والے امریکی ہیل فائر کا ایرانی ساختہ ورژن ہے۔

فوج کے کمانڈر میجر جنرل عبدالرحیم موسوی نے کہا کہ "اس میں کوئی شک نہیں کہ اسلامی جمہوریہ ایران کی مسلح افواج کے ڈرون خطے کے سب سے طاقتور ہیں۔” انہوں نے مزید کہا کہ ڈرونز کو اپ گریڈ کرنے کی ہماری صلاحیت رک نہیں سکتی۔

ایران کے سرکاری ٹی وی کے نمائندے نے بتایا کہ اس نے جمعرات کو ہیلی کاپٹر کی 45 منٹ کی پرواز مغربی ایران کے کرمان شاہ سے خفیہ زیر زمین ڈرون سائٹ تک کی۔ انہوں نے کہا کہ اڈے پر پہنچنے پر ہی اسے آنکھوں پر پٹی اتارنے کی اجازت دی گئی۔

28 مئی 2022 کو حاصل کی گئی اس ہینڈ آؤٹ تصویر میں ایران میں ایک نامعلوم مقام پر ایک زیر زمین جگہ پر ایک ڈرون نظر آ رہا ہے۔

ٹی وی فوٹیج میں ایک سرنگ میں میزائلوں سے لیس ڈرونز کی قطاریں دکھائی دے رہی ہیں، جس کے بارے میں کہا گیا ہے کہ یہ کئی سو میٹر زیر زمین ہے۔

یہ ٹی وی رپورٹ ایک دن بعد سامنے آئی ہے جب ایرانی پاسداران انقلاب نے خلیج میں دو یونانی ٹینکروں کو قبضے میں لے لیا تھا، جو کہ یونانی ساحل کے قریب روکے گئے ایک ٹینکر سے امریکہ کی جانب سے ایرانی تیل کی ضبطی کا بظاہر انتقامی کارروائی ہے۔

یونانی حکام نے گزشتہ ماہ یورپی یونین کی پابندیوں کی وجہ سے ایرانی پرچم والے پیگاس کو ضبط کر لیا تھا، جس میں عملے کے 19 روسی ارکان سوار تھے۔ بعد میں امریکہ نے جہاز پر رکھے ہوئے ایرانی تیل کے کارگو کو ضبط کر لیا اور اسے دوسرے جہاز پر امریکہ بھیجنے کا منصوبہ بنایا۔

پیگاس کو بعد میں رہا کر دیا گیا، لیکن اس قبضے نے ایک نازک وقت میں تناؤ کو ہوا دی، ایران اور عالمی طاقتوں نے جوہری معاہدے کو بحال کرنے کی کوشش کی جسے سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ترک کر دیا، تہران پر دوبارہ پابندیاں عائد کر دیں۔

Leave a reply