برطانوی وزیراعظم نے خاتون وزیر داخلہ کو عہدے سے ہٹا دیا

0
240
uk

سابق برطانوی وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون وزیر خارجہ تعینات

برطانوی وزیراعظم رشی سونک نے کابینہ میں تبدیلیاں کرتے ہوئے سویلا بریورمین کی جگہ جیمز کلیوری کو وزیر داخلہ جبکہ سابق برطانوی وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون کو وزیر خارجہ تعینات کر دیا ہے

دفتر برطانوی وزیراعظم 10 ڈاؤننگ اسٹریٹ کی جانب سے سوشل میڈیا پر جیمز کلیوری کو وزیر داخلہ بنائے جانے کی تصدیق کی گئی ہے،ڈیوڈ کیمرون کو سیکرٹری آف اسٹیٹ تعینات کرنے کی بھی تصدیق کی گئی ہے

قبل ازیں برطانوی وزیراعظم رشی سونک نے وزیر داخلہ کو برطرف کردیا،میڈیا رپورٹس کے مطابق برطانوی وزیراعظم نے خاتون وزیر داخلہ سویلا بریورمین کوبرطرف کر دیا ہے،انہوں نے اپنی کابینہ میں تبدیلیاں شروع کر دی ہیں،برطانوی وزیر داخلہ کو برطانیہ میں فلسطین کے حق میں ہونے والے مظاہروں سے نمٹنے کی حکمت عملی میں ناکامی پر شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑا تھا،برطانوی وزیراعظم نے وزیر داخلہ کو عہدہ چھوڑنے کا کہا جس پر خاتون وزیر داخلہ نے عہدہ چھوڑ دیا

واضح رہے کہ برطانوی وزیر اعظم رشی سنک نے فلسطین کی حمایت میں نکالی گئی ریلیوں میں میں تشدد کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ فوری قانونی کارروائی کی جانی چاہئے۔ انہوں نے پرتشدد واقعات کو ناقابل قبول قرار دیتے ہوئے کہا کہ ہفتے کے آخر میں ملک میں یہودی برادری میں خوف کی جو فضا دیکھی گئی وہ قابل مذمت ہے۔میں نے پولیس کمشنر کو بتایا کہ وہ اس کے لیے جوابدہ ہیں اور مجھے بھی یہی امید ہے میں پولیس کمشنر سے دوبارہ ملاقات کروں گا۔

اس سے قبل بھی سنک نے برطانیہ میں فلسطین کے حامی مظاہروں کے بعد یہود دشمنی کی مذمت کی تھی۔سوشل میڈیا پلیٹ فارم ایکس پر پوسٹ کرتے ہوئے انہوں نے کہا تھا کہ اس ہفتے کے آخر میں ہم نے اپنی سڑکوں پر نفرت دیکھی جہاد کی دعوتیں نہ صرف یہودی برادری کے لیے بلکہ ہماری جمہوری اقدار کے لیے خطرہ ہیں،ہم اپنے ملک میں یہود دشمنی کو کبھی برداشت نہیں کریں گے اور ہم توقع کرتے ہیں کہ پولیس انتہا پسندی سے نمٹنے کے لیے تمام ضروری کارروائی کرے گی

برج کھیل کب ایجاد ہوا، برج کھیلتے کیسے ہیں

کھیل سے امن کا پیغام دینے آئے ہیں.بھارتی ٹیم کے کپتان کی پریس کانفرنس

وادی طائف کی مسجد جو حضور اقدس نے خود بنائی، مسجد کے ساتھ کن اصحاب کی قبریں ہیں ؟

فیض حمید مبینہ طور پر نومئی کے حملوں میں ملوث ہیں

 نجف حمید کے گھر چوری کی واردات

Leave a reply