کینیڈین حکومت کا میٹا کے اشتہارات روکنے کا فیصلہ

فیس بک اور انسٹاگرام کو سالانہ 10 ملین کینیڈین ڈالر کا نقصان ہوگا
0
23
meta

اوٹاوا، اونٹاریو: کینیڈین حکومت نےبدھ کو کہا کہ اس نے فیس بک کی پیرنٹ کمپنی ”میٹا“ کے اشتہارات روکنے کا فیصلہ کر لیا۔

"اے پی” کے مطابق کینیڈین حکومت اور میٹا کے درمیان سوشل میڈیا کے حوالے سے گزشتہ چند ماہ سے کشیدگی جاری ہے گزشتہ ماہ امریکی ٹیکنالوجی کمپنی میٹا نے کینیڈین صارفین کے لیے خبروں تک رسائی ختم کرنے کا اعلان کیا تھاجس کے بعد کینیڈا میں فیس بک اور انسٹا گرام سے خبریں ہٹا دی گئی تھیں۔

کینیڈین حکومت کی جانب سے ایک بل منظور کیا گیا تھا جس میں سوشل میڈیا کمپنی کو کینیڈا کی خبریں شیئر کرنے پرمعاوضے کی ادائیگی کا حکم دیا گیا تھاثقافتی ورثہ کے وزیر پابلو روڈریگز نے ایک نیوز کانفرنس میں وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو کی حکومت کے فیصلے کا اعلان کیا کینیڈا کا یہ اقدام اس تنازعہ کی تازہ ترین کڑی ہے جو ٹروڈو کی انتظامیہ کی جانب سے ایک بل کی تجویز کے بعد شروع ہوا جس کے تحت ٹیکنالوجی کمپنیوں کو پبلشرز کو اپنے مواد کو آن لائن سے منسلک کرنے یا دوبارہ پیش کرنے کے لیے ادائیگی کرنے کی ضرورت ہوگی۔

مارک زکربرگ کی 12 سال بعد پہلی ٹوئٹ

ثقافتی ورثہ کے کینیڈین وزیر پابلو روڈریگیز نے ٹوئٹر پر جاری پیغام میں لکھا کہ ہم نے فیس بک پر کینیڈا کے سرکاری اشتہارات کو معطل کرنے کا فیصلہ کیا ہےہم میٹا کو اشتہارات کی مد میں مزید ڈالرز کی ادائیگی اس وقت تک نہیں کر سکتے، جب تک وہ کینیڈا کی خبر رساں تنظیموں کو ان کا منصفانہ حصہ ادا نہیں کرتے۔

روڈریگز کا کہنا ہے کہ 2022 میں کینیڈا میں اشتہارات کی تمام آمدنی کا 80 فیصد تقریباً 10 بلین کینیڈین ڈالرگوگل اور فیس بک کو گیا، اور لبرل حکومت چاہتی ہے کہ دونوں پلیٹ فارمز ملکی صحافت میں اپنا حصہ ڈالیں سرکاری اشتہارات کو معطل کرنے کے فیصلے سے فیس بک اور انسٹاگرام کو سالانہ 10 ملین کینیڈین ڈالر کا نقصان ہوگا۔

دوسری جانب میٹا کا مؤقف ہے کہ خبریں کمپنی کے لیے معاشی اہمیت نہیں رکھتیں اور خبر رساں اداروں کو فیس بک پر اپنی رپورٹس شیئر کرکے فائدہ حاصل ہوتا ہے۔

فیس بک نےٹوئٹر کی متبادل ایپ تیار کرلی

Leave a reply