ورلڈ ہیڈر ایڈ

اپوزیشن کی اے پی سی شروع ہونے سے قبل ہی ناکام ،اہم خبر

اپوزیشن جماعتوں کے آل پارٹیز کانفرنس شروع ہونے سے قبل ہی ناکام ہو گئی، بلاول زرداری کی افطار پارٹی میں طے ہونی والی اے پی سی میں ہی بلاول زرداری کی شرکت کا تاحال فیصلہ نہ ہو سکا

مولانا فضل الرحمان نے اے پی سی بلائی تو جہانگیر ترین بھی خاموش نہ رہ سکے، بڑا اعلان کر دیا

نہ‌ڈیل ہوگی نہ ڈھیل،اے پی سی کو اہمیت نہیں دیتے، فواد چودھری

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق اپوزیشن جماعتوں کی اے پی سی آج اسلام آباد میں ہو گی، اے پی سی کی سربراہی مولانا فضل الرحمان کریں گے، انہوں نے تمام اپوزیشن جماعتوں کے قائدین کو دعوت دی ہے. پیپلز پارٹی، مسلم لیگ ن، جے یو آئی (ف)، اے این پی، قومی وطن پارٹی، پخونخواہ ملی عوامی پارٹی اور نیشنل پارٹی سمیت اپوزیشن کی دیگر جماعتوں کے رہنما شرکت کریں گے۔ جماعت اسلامی نے اے پی سی میں شرکت کرنے سے انکار کیا ہے. اے پی سی کا آغاز گیارہ بجے ہو گا،

اے پی سی کو کامیاب بنانے کیلیے مولانا متحرک، نیشنل پارٹی کے وفد سے ملاقات

حکومت اے پی سی بلائے، پنجاب اسمبلی میں قرارداد جمع

لفظ سیلکٹڈ پر پابندی کے خلاف ن لیگ نے کرائی اسمبلی میں مذمتی قرارداد جمع

قومی سلامتی کےاداروں کوسیاست میں نہیں گھسیٹنا چاہیئے،مریم کا مطالبہ

اے پی سی میں پیپلز پارٹی کا پانچ رکنی وفد شرکت کرے گا۔جن میں یوسف رضا گیلانی، رضا ربانی، نیئر بخاری، شیری رحمان اور فرحت اللہ بابرشامل ہونگے۔ بلاول زرداری کی شرکت کا فیصلہ پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں کیا جائے گا۔تاحال بلاول کی شرکت کا فیصلہ نہیں کیا جا سکا، مسلم لیگ ن کی جانب سے دس رکنی وفد اے پی سی میں شرکت کرے گا، قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف اورمریم نواز بھی شرکت کریں گی. ن لیگ کے وفد میں مریم نواز،راناثنااللہ،راجہ ظفرالحق ،شاہدخاقان عباسی،قادر بلوچ،ڈاکٹرعباد شامل ہونگےنیشنل پارٹی کے سربراہ میر حاصل بزنجو، پختونخواہ ملی عوامی پارٹی کے سربراہ محمود خان اچکزئی، اے این پی کے سربراہ اسفندیار ولی اور قومی وطن پارٹی کے سربراہ آفتاب خان شیر پاؤ اے پی سی میں شرکت کریں گے۔

اوبر اور کریم پر خواتین کے لئے سفر ہوا غیر محفوظ

جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق کو بھی اے پی سی میں شرکت کی دعوت دی گئی تھی لیکن جماعت اسلامی نے شریک ہونے سے انکار کر دیا .علامہ ساجد نقوی، پروفیسر ساجد میر اور اویس نورانی کو بھی دعوت دی گئی ہے۔

مریم نواز کا ایک اور یوٹرن، مولانا فضل الرحمان کا رابطہ، مریم نواز نے کیا کہا؟

بلوچستان حکومت گرانے کے لئے مولانا فضل الرحمان سرگرم، کس سے ملاقات کی؟

حکومتی وفد کی ناراض اتحادی جماعت سے ملاقات، منانے میں ناکام

مولانا فضل الرحمان اسلام آباد کی بجائے اسلام کی طرف توجہ دیں، فردوس عاشق اعوان

واضح رہے کہ اسلام آباد میں بلاول بھٹو زرداری نے اپوزیشن جماعتوں کے قائدین کو افطار پارٹی دی تھی جس میں فیصلہ کیا گیا تھا کہ اسلام آباد میں عید کے بعد اپوزیشن جماعتوں کی اے پی سی مولانا کی زیر صدارت ہو گی. اس سے قبل مولانا فضل الرحمان ملک بھر میں ملین مارچ کر رہے ہیں، کراچی، سکھر لاہور سمیت مختلف شہروں میں ان کے پروگرام منعقد ہو چکے ہیں. واضح رہے کہ مولانا فضل الرحمان پندرہ برس بعد کشمیر کمیٹی کے چیئرمین سے ہٹائے گئے کیونکہ وہ 2018 کا الیکشن ہار گئے تھے. الیکشن ہارنے کے بعد مولانا نے تحریک انصاف کی حکومت کو تسلیم کرنے سے انکار کرتے ہوئے احتجاجی تحریک کی دھمکی دی تھی جو ابھی تک جاری ہے.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.