fbpx

صدارتی ریفرنس کے فیصلے کیخلاف نظرثانی درخواست اعتراض لگا کر واپس کردی گئی

سپریم کورٹ رجسٹرار آفس نے آرٹیکل 63 اے کی تشریح کے لیے صدارتی ریفرنس کے فیصلے کے خلاف نظرثانی درخواست اعتراض لگا کر واپس کر دی ہے۔

رجسٹرار آفس کے اعتراض کے مطابق آرٹیکل 63 اے کی تشریح کے صدارتی ریفرنس کے دیے فیصلے پر نظرثانی کی درخواست قابل سماعت نہیں۔

آرٹیکل 63 اے کی تشریح کا ریفرنس صدر مملکت کی جانب سے بھیجا گیا تھا، صدارتی ریفرنس آرٹیکل 186 کے تحت سپریم کورٹ کو صدر مملکت کی جانب سے بھیجا جاتا ہے جبکہ کسی بھی آرٹیکل کی تشریح کا معاملہ سپریم کورٹ اور صدر کے درمیان ہوتا ہے۔

صدارتی ریفرنس میں دیے گئے فیصلے پر نظرثانی درخواست قابل پذیرائی نہیں۔

سابقہ رکن پنجاب اسمبلی عائشہ نواز نے سپریم کورٹ میں آرٹیکل 63 اے کی تشریح سے متعلق صدارتی ریفرنس پر نظرثانی کیلئے درخواست دائر کردی ہے۔

عائشہ نواز

درخواست میں استدعا کی گئی تھی کہ آرٹیکل 63 اے کی تشریح سے متعلق 17 مئی کی عدالتی رائے پر نظرثانی کی جائے۔ سپریم کورٹ نظرثانی کر کے اپنی رائے واپس لے۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے آرٹیکل 63 اے کے تحت منحرف اراکین کا ووٹ شمار نہ کرنے کی رائے دی تھی۔