زیر سمندر 7000 سال پرانی سڑک دریافت

0
26

آثار قدیمہ کے ماہرین نے بحیرہ روم کی تہہ میں 7 ہزار سال قبل بنائی گئی سڑک دریافت ہوئی ہے۔

باغی ٹی وی: "ہیلو میگزین” کےمطابق یونیورسٹی آف زادار کے ماہر آثار قدیمہ ایگور بورزیک نے پتھر کے زمانے کی سڑک کی باقیات کروشیا کے ساحل سے دور خلیج گریڈینا میں پانی کے تقریباً 16 فٹ نیچے دریافت کی ہزاروں سال پہلے کی اس اہم دریافت نے آثار قدیمہ کے ماہرین کو پرجوش کر دیا ہے۔

ٹائٹینک کا پہلی بار فل سائز ڈیجیٹل اسکین،تصاویر دیکھ کر ماہرین دنگ رہ گئے

اگرچہ یہ کوئی اٹلانٹس کی طرح کھویا ہوا شہر نہیں ہےتاہم سائنسدانوں نے ایک ایسے تاریخی حصے کو بےنقاب کیا ہے جسے سمندر نگل چکا تھا۔ ماہرین نے اعتراف کیا کہ وہ بھی حیران رہ گئے جب غوطہ خوروں نے 7،000 سال پرانی پتھر کی سڑک کا پتہ لگایا جو سمندر کی مٹی کی تہوں میں دبی ہوئی تھی۔

قدیم ڈھانچے کو اس وقت دریافت کیا گیا جب یونیورسٹی آف زادار کے ماہر آثار قدیمہ ایگور بورزیک نے کروشیا کے ساحل سے دور خلیج گریڈینا میں تقریباً 16 فٹ (5 میٹر) پانی کے اندر “عجیب ڈھانچے” کو دیکھا۔

ماہرین کے مطابق ڈوبی ہوئی سڑک کبھی کسی زمانے میں کروشیا کے جزیرے کورچولا کو قدیم بستی سے جوڑتی تھی۔ بستی کا تعلق سمندری ثقافت Hvar سے تھا جو ایک مصنوعی زمین پر بیٹھی تھی لیکن اب بحیرہ روم میں ایڈریاٹک سمندر کے نیچے چار سے پانچ میٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔

درجہ حرارت میں تشویشناک اضافہ،اقوام متحدہ نے خبردار کر دیا

سولین نامی اس قدیم جگہ کو 2021 میں کروشیا یونیورسٹی کے محققین نے اس وقت دریافت کیا جب انہوں نے سیٹلائٹ تصاویر میں سمندر کی تہہ میں غیر معمولی ڈھانچے کو دیکھا۔ غوطہ خوری اور قریب سے دیکھنے پر، انہوں نے ایک بستی دریافت کی، جو کہ نیو لیتھک ٹولز کے ساتھ مکمل تھی۔ جبکہ اس مقام پر ملنے والے نوادرات 4,900 سال پہلے کے ہیں، محققین نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ یہ سڑک تقریباً 7000 سال پہلے بنائی گئی تھی سولین کی طرح، قدیم سڑک ان تمام سالوں کے لیے نقصان سے محفوظ رہی کیونکہ اس علاقے کے ارد گرد جزیرے تھے۔

یونیورسٹی آف زادار نے دریافت کی فوٹیج جاری کی جس میں سڑک دکھائی گئی جو پتھروں پر مشتمل تھی اور اس کی پیمائش تقریباً 12 فٹ (تقریباً 4 میٹر) تھی۔

ماہرین آثار قدیمہ کا خیال ہے کہ لوگ تقریباً 7,000 سال پہلے اس سڑک پر چلتے تھے جبکہ اس جگہ کے قریب لکڑی کی ریڈیو کاربن ڈیٹنگ سے پتہ چلتا ہے کہ بستی 4,900 قبل مسیح کی ہے۔

ڈاونچی گلو ،چاند کا دلچسپ نظارہ جو آئندہ چند دنوں میں نظرآئے گا

تقریباً چار میٹر چوڑائی پر، سڑک کو احتیاط سے پتھر کے سلیبوں کا استعمال کرتے ہوئے بنایا گیا تھا۔ آج، یہ مٹی کی ایک موٹی تہہ سے ڈھکی ہوئی ہے جیسا کہ کسی بھی زیر آب ساخت کی طرح ہوتی ہے-

صرف یہی نہیں، اسی تحقیقی ٹیم نے جزیرے کے مخالف سمت میں ایک اور زیر آب بستی دریافت کی جو حیرت انگیز طور پر سولین سے ملتی جلتی ہے۔ سائنس دانوں نے اس سائٹ سے پتھر کے زمانے کے کچھ دلچسپ نوادرات بھی دریافت کیے، جن میں بلیڈ اور کلہاڑی بھی شامل ہیں اور یہ نتیجہ اخذ کیا گیا کہ وہ سولین کی دریافتوں کی طرح Hvar ثقافت کا حصہ ہیں۔

ان دلچسپ دریافتوں نے اس بات پر روشنی ڈالی ہے کہ ابتدائی انسان کس طرح خود کو مختلف ماحول کے مطابق ڈھال سکتے تھے اور ان کے درمیان سڑکیں بنا سکتے تھے۔

گوگل کا غیر متحرک اکاؤنٹس ڈیلیٹ کرنے کا فیصلہ

Leave a reply