روسی سفارتکاروں کو ملک بدر کرنے کا سلسلہ جاری:اسپین نے بھی امریکی اطاعت کردکھائی

0
43

اسپین کی حکومت نے دارالحکومت میڈرڈ سے تقریباً 25 روسی سفارت کاروں اور سفارت خانے کے عملے کو نکالنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔
ہسپانوی وزیر خارجہ جوز مینوئل الباریس نے منگل کے روز کہا کہ یوکرین میں روسی فوجیوں کے مبینہ جنگی جرائم کے جواب میں یورپی یونین کے دیگر ممالک میں شامل ہوں گے۔

جوز مینوئل الباریس نے مزید اقدامات کو مسترد کیے بغیر کابینہ کے ہفتہ وار اجلاس کے بعد کہا، ہم نے اسپین میں روسی سفارت خانے سے روسی سفارت کاروں اور عملے کو نکالنے کا فیصلہ کیا ہے جو ہمارے ملک کے مفادات اور سلامتی کے لیے خطرہ ہیں۔

وزیر نے مزید کہا کہ سفارت کاروں کی بیدخلی بھی “گزشتہ دنوں میں یوکرین میں کی گئی خوفناک کارروائیوں کا ردعمل تھا.

خاص طور پر بوچا میں اور جو آج ماریوپول سے رپورٹ ہوئے ہیں۔” یوکرین کے شہر بوچا میں اجتماعی قبروں اور شہریوں کے قتل کی دریافت کا حوالہ دیتے ہوئے

اٹلی، سویڈن اور ڈنمارک گزشتہ ہفتے ہی اپنے ملک سے روسی سفارت کاروں کو ملک بدر کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔

الباریس نے کہا کہ ان کی حکومت کو توقع ہے کہ روس جواب میں اتنی ہی تعداد میں ہسپانوی سفارت کاروں کو ملک بدر کر دے گا۔

تاہم، انہوں نے کہا کہ اسپین روسی سفیر کو ملک بدر نہیں کرے گا کیونکہ میڈرڈ ماسکو میں اپنا سفیر رکھنا چاہتا ہے اور جنگ کے خاتمے کے لیے روس کے ساتھ بات چیت کے لیے سفارتی راستے کھلے چھوڑنا چاہتا ہے۔

Leave a reply