ڈپریشن کا علاج اب مشروم کے ذریعے کیا جا سکے گا

0
39

ماہرین نے اپنی نئی تحقیق میں ڈپریشن کے مریضوں کے لیے مشروم کو کو علاج قرار دے دیا۔

باغی ٹی وی : ڈپریشن کا علاج اب مشروم کے ذریعے کیا جا سکے گا،برطانوی ماہرین کے مطابق میجک مشرومز میں موجود سائلوسائبن ڈپریشن کو دور کرسکتا ہے اب تک کے سب سے بڑے کلینیکل ٹرائل کے اعداد و شمار سے معلوم ہوا ہے کہ جادوئی کھمبیوں میں پایا جانے والا اہم نفسیاتی جزو ڈپریشن کی علامات کو نمایاں طور پر کم کر سکتا ہے جس کا علاج مشکل نہیں ہے-

کینسرکی بروقت تشخیص اور بہتر علاج کا زیادہ مؤثر طریقہ دریافت

لندن میں مقیم اور نیس ڈیک میں درج COMPASS پاتھ ویز کے ذریعے کیے گئے درمیانی مرحلے کے مطالعے میں ماہرین کی جانب سے ایک ایم جی، دس ایم جی اور پچیس ایم جی خوراکوں کو یورپ اور شمالی امریکہ کے 10 ممالک کے کل 233 افراد پر آزمایا گیا ، جس میں پچیس ایم جی کی دوا نے بہترین نتائج دیئے۔

ان میں سے زیادہ تر گذ شتہ ایک سال سے زیادہ عرصے سے شدید ذہنی دباؤ کا شکار تھے اور ان کی عمریں 40 سال کے لگ بھگ تھیں، ماہرین کا کہنا ہے کہ حالیہ مطالعات امید افزا ہیں لیکن ان کے دیرپا اثرات کا اندازہ لگانے کے لیے ابھی یہ تجربات ناکافی ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ ڈپریشن ایک دیرپا مسئلہ ہے جس پر 12 ہفتوں سے کہیں زیادہ فالو اپ پیریڈ استعمال کرنا چاہیے، اس لیے مزید تحقیق کے لیے جلد ہی ایک بڑا تجربہ شروع کیا جائے گا کہ ڈپپریشن کو روکنے کے لیے کتنی خوراکوں کی ضرورت ہے۔

محققین کا کہنا ہے کہ دوا کے منظور ہونے میں تین سال لگ سکتے ہیں مشروم کو اس کی خصوصیات کی بنا پر ’میجک مشرومز‘ بھی کہا جاتا ہے۔ قانونی منظوری کے بعد امید ظاہر کی جارہی ہے کہ آئندہ چند سالوں تک اس کی دوا مارکیٹ میں دستیاب ہو جائے گی۔

اگر قانونی منظوری مل گئی تو امید ظاہر کی جارہی ہے کہ آئندہ چند سالوں تک اس کی دوا مارکیٹ میں دستیاب ہو جائے گی۔

کنگز کالج لندن کے کنسلٹنٹ سائیکاٹرسٹ اور سینئر کلینیکل لیکچرر، جیمز روکر، جو اس تحقیق میں شامل تھے، نے کہا کہ COMPASS کا کمپاؤنڈ دماغ کے ان ٹکڑوں کو نشانہ بناتا ہے جو جذبات کی پروسیسنگ میں گہرا تعلق رکھتے ہیں۔

ایک بار انتظام کرنے کے بعد، مریض "جاگتے ہوئے خواب جیسی” حالت میں داخل ہو جاتے ہیں جو چار سے چھ گھنٹے تک جاری رہتی ہے روکر نے کہا کہ لوگ صبح آئے، ان کا نفسیاتی تجربہ ہوا اور وہ دوپہر یا شام کو اپنی بنیادی حالت پر چلے گئے۔

ایک طبی جریدے میں شائع ہونے والے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ جن مریضوں کو سائلو سائیبن کی 25 ملی گرام کی خوراک دی گئی تھی ان میں علاج کے تین ہفتے بعد افسردگی کی علامات میں شماریاتی طور پر نمایاں طور پر کم خوراک لینے والے افراد کے مقابلے میں نمایاں طور پر کم تھی۔

یونیورسٹی کالج لندن انسٹی ٹیوٹ آف مینٹل ہیلتھ کے ایسوسی ایٹ پروفیسر روی داس نے خبردار کیا کہ ٹرائل کے نتائج مثبت ہیں لیکن شاندار نہیں ہیں۔

حاملہ خواتین کو اینیستھیزیا دیئے جانے سے بچے کی نشو نما متاثر نہیں ہوتی،تحقیق

"ہر گروپ میں شدید افسردہ مریضوں کی غیر مساوی تعداد تھی؛ ظاہری ‘مؤثر’ (25mg) خوراک والے گروپ میں نمایاں طور پر کم شدید افسردہ افراد کے ساتھ۔ کاغذ میں اس کا اعتراف نہیں ہوتا۔”

اگرچہ مریضوں کو صرف اس صورت میں اندراج کیا گیا تھا جب وہ خودکشی کے طبی لحاظ سے اہم خطرے میں نہیں سمجھے جاتے تھے، لیکن 25 ملی گرام گروپ کے تین شرکاء نے علاج کے 12 ہفتوں کے اندر خودکشی کے رویے کا مظاہرہ کیا۔

COMPASS پاتھ ویز کے چیف میڈیکل آفیسر گائے گڈون نے کہا کہ ڈپریشن کا مطالعہ کرنے سے، خود کشی بیماری کے کورس کی ایک خصوصیت بننے والی ہے۔

"ہمارا مفروضہ یہ ہے کہ اختلافات اتفاقی طور پر ہوتے ہیں لیکن ہم اسے مزید تجربات کرکے ہی حل کر سکتے ہیں۔”

انہوں نے کہا کہ کمپاؤنڈ کی جانچ کرنے والے دو آخری مرحلے کے مطالعے سے ڈیٹا، جسے پی ٹی ایس ڈی اور اینوریکسیا نرووسا کے علاج کے طور پر بھی آزمایا جا رہا ہے، جلد از جلد 2024 کے آخر تک منظر عام پر لایا جا سکتا ہے۔

بلڈ پریشر کا کم ہونا ڈیمینشیا کے خطرات کو کم کرسکتا ہے،تحقیق

Leave a reply